جی این این سوشل

تجارت

کراچی والوں کیلئے بری خبر ، بجلی فی یونٹ 4 روپے 83 پیسے مہنگی 

کراچی:  نیشنل الیکٹرک پاور ریگولیٹری اتھارٹی (نیپرا)  نے کے الیکٹرک کے  ماہانہ فیول چارجز ایڈجسٹمنٹ کی مد میں 4 روپے 83 پیسے فی یونٹ اضافے کی منظوری دے دی۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

کراچی والوں کیلئے بری خبر ، بجلی فی یونٹ 4 روپے 83 پیسے مہنگی 
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

تفصیلات کے مطابق حکومت کی جانب سے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کے بعد   بجلی  کی  قیمتوں میں بھی اضافہ کردیا گیا ہے۔

 آئی ایم ایف کے مزید مطالبات پر عمل درآمد کرتے ہوئے  نیپرا نے  کے الیکٹرک کے مارچ کے ماہانہ فیول چارجز ایڈجسٹمنٹ کی مد میں 4 روپے 83 پیسے فی یونٹ اضافے کی منظوری دی ہے۔  اس  حوالے سے باضابطہ نوٹی فکیشن بھی جاری کردیا گیا ہے۔

 قیمت میں اضافے کا اطلاق کے الیکٹرک کے تمام صارفین ماسوائے لائف لائن صارفین پر ہوگا۔

نوٹی فکیشن کے مطابق کے الیکٹرک نے نیپرا کو 5 روپے 27 پیسے فی یونٹ اضافے کی درخواست کی تھی، اتھارٹی نے 27 اپریل 2022 کو ایف سی اے پر عوامی سماعت کی تھی، فروری کا ایف سی اے صارفین سے 1 روپے 38 پیسے چارج کیا گیا تھا، جو کہ صرف ایک  ماہ کے لئے تھا۔ 

نیپرا اعلامیے کے  مطابق   مارچ کا ایف سی اے فروری کی نسبت 3 روپے 45 پیسے جون میں زیادہ چارج کیا جائے گا، اور حالیہ اضافے کا اطلاق صرف جون کے ماہ کے بلوں پر ہوگا۔

واضح رہے کہ آئی ایم ایف نے پاکستان کے لیے قرض بحالی پروگرام کے لیے پیٹرولیم مصنوعات اور بجلی کی قیمتوں میں اضافے کی شرط عائد کی ہے۔

دنیا

چاکلیٹ کا عالمی دن

بچوں اور بڑوں  ہر ایک کی پسندیدہ " چاکلیٹ" کا عالمی دن آج  منایا جارہا ہے۔ 

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

چاکلیٹ کا عالمی دن

کہا جاتا ہے کہ 400 سال قبل آج ہی کے دن یورپ میں پہلی بار چاکلیٹ متعارف کروائی گئی تھی اور یہ دن اسی کی یاد میں منایا جاتا ہے۔ 

اگر موڈ خراب ہو یا دل اداس ہو تو اکثر لوگ چاکلیٹ کھانے کا مشورہ دیتے ہیں۔ انسان کے حالات بدلیں یا نہ بدلیں، لیکن چاکلیٹ کھانے سے موڈ ضرور ٹھیک ہوجاتا ہے۔

آج بھی لوگ محبت جیسے قیمتی جذبات کا اظہار چاکلیٹ کے ذریعے ہی کرتے ہیں۔  رشتہ جوڑنے یا کسی روٹھے ہوئے کو منانے کے لیے سب سے بہترین تحفہ چاکلیٹ ہے،  یہ یقیناً رشتوں کی کڑواہٹ دور کرنے اور خوشیاں بکھیرنے کے لیے ہی جانی جاتی ہے۔

اٹھارہویں صدی  تک چاکلیٹ کو بطور کڑوے مشروب استعمال کیا جاتا رہا ،  پہلی دفعہ چاکلیٹ کو ٹھوس شکل انیسویں صدی کے وسط (1847) میں ایک برطانوی نے دی، بعد میں سوئٹزرلینڈ سے تعلق رکھنے والے ڈینئل پیٹر نے اس کے ذائقے کو مزید بہتر کیا۔

انیسویں صدی کے آخر اور20ویں صدی  کے شروع میں مشہور چاکلیٹ کمپنیز ابھر کر سامنے آنا شروع ہو گئیں اور یوں ہمیں چاکلیٹ کی بے پناہ اقسام دستیاب ہوئیں ۔ 

دنیا بھر میں چاکلیٹ کی مختلف اقسام پائی جاتی ہیں جن میں تلخ، کھٹے اور پھیکے ذائقے جبکہ سفید، سیاہ اور بھورے رنگ کی چاکلیٹس شامل ہیں ۔ 

دنیا کی سب سے مشہور اور بہترین چاکلیٹ بیلجیم اور سوٹزرلینڈ کی مانی جاتی ہیں۔

 ماہرین کا کہنا ہے کہ بظاہر دانتوں کے لیے نقصان دہ سمجھی جانے والی چاکلیٹ جسمانی و دماغی صحت پر نہایت مفید اثرات مرتب کرتی ہے۔ چاکلیٹ کھانے والوں کی یادداشت ان افراد سے بہتر ہوتی ہے جو چاکلیٹ نہیں کھاتے یا بہت کم کھاتے ہیں۔

 درحقیقت  چاکلیٹ دماغ میں خون کی روانی  کو بہتر کرتی ہے جس سے یادداشت اور سیکھنے کی صلاحیت میں اضافہ ہوتا ہے۔

چاکلیٹ کہیں کی بھی ہو اور کسی بھی ذائقے کی ہو، لوگوں کے چہروں پر مسکراہٹ کا ذریعہ ضرور بنتی ہے ۔

 

پڑھنا جاری رکھیں

تجارت

بجلی 7 روپے 90 پیسے فی یونٹ مزید مہنگی

نیپرا نے مئی کے ماہانہ فیول ایڈجسٹمنٹ پر فیصلہ جاری کر دیا۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

بجلی 7 روپے 90 پیسے فی یونٹ مزید  مہنگی

ایک ماہ کیلئے بجلی 7 روپے 90 پیسے فی یونٹ مہنگی کرنے منظوری، نیپرا نے مئی کے ماہانہ فیول ایڈجسٹمنٹ پر فیصلہ جاری کر دیا۔

سی پی پی اے نے7روپے96 پیسے فی یونٹ اضافے کی درخواست کی تھی، نیپرا نے27 جون کوایف سی اے پر سماعت کی تھی۔

نیپرا نوٹیفیکشن کے مطابق اضافے کا اطلاق جولائی کے ماہ کے بلوں پر ہوگا، اطلاق ڈسکوز کے تمام صارفین ماسوائے لائف لائن صارفین پر ہوگا، فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ کا اطلاق کے الیکٹرک صارفین پر نہیں ہوگا۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

14 سال بعد مہنگائی کے تمام ریکارڈ ٹوٹ گئے، شوکت ترین

شوکت ترین نے کہا کہ تیل، بجلی، گیس کی قیمتیں بڑھ چکی ہیں جو مہنگائی کو مزید بڑھائیں گی اور مارکیٹ میں اس وقت آٹا فی کلو 75 روپے سے زیادہ ہے۔ یہ مہنگائی کا رونا روتے تھے لیکن اب خود کیا کر رہے ہیں۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

14 سال بعد مہنگائی کے تمام ریکارڈ ٹوٹ گئے، شوکت ترین

کراچی: سابق وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا ہے کہ 14 سال کے بعد مہنگائی کے تمام ریکارڈ ٹوٹ گئے۔

سابق وزیر خزانہ شوکت ترین نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ پچھلے 17 سال میں اتنی ترقی نہیں ہوئی جتنی پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) حکومت میں ہوئی اور پی ٹی آئی کے دور حکومت میں 2 روپے بڑھتے تھے تو یہ مارچ کرتے تھے۔

انہوں نے کہا کہ 14 سال کے بعد مہنگائی کے ریکارڈ ٹوٹ گئے اور مہنگائی 21.2 فیصد پر پہنچ گئی ہے جبکہ ہم مہنگائی 12 فیصد پر چھوڑ کر گئے تھے۔ 2008 کے بعد مہنگائی کی شرح اس بار سب سے زیادہ بڑھی۔

شوکت ترین نے کہا کہ تیل، بجلی، گیس کی قیمتیں بڑھ چکی ہیں جو مہنگائی کو مزید بڑھائیں گی اور مارکیٹ میں اس وقت آٹا فی کلو 75 روپے سے زیادہ ہے۔ یہ مہنگائی کا رونا روتے تھے لیکن اب خود کیا کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پیاز اور آلو کی بڑی فصل ہے لیکن یہ مارکیٹ میں قیمت 80 روپے کلو کیوں ہے ؟ حکمران تو30 سال سے لگے ہوئے ہیں اور نیب کو ختم کرنے کی کوشش کی گئی۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll