جی این این سوشل

پاکستان

پاکستان فیٹف کی گرے لسٹ سے نکلنے کیلئے پر امید؟فیصلہ آج متوقع

پاکستان جون 2018 سے ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ میں ہے جبکہ بھارت اور اس کے اتحادیوں کی کوشش رہی ہے کہ پاکستان کو بلیک لسٹ میں شامل کروایا جائے۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

فائل فوٹو
فائل فوٹو

واشنگٹن : پاکستان منی لانڈرنگ اور دہشت گردوں کی مالی معاونت کی روک تھام کے عالمی ادارے فائنینشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) کی گرے لسٹ سے نکلنے کیلئے اس بار کافی پر امید ہے۔

ایف اے ٹی ایف کا پیرس میں تین روزہ اجلاس جاری ہے اور آج پاکستان کے متعلق فیصلہ متوقع ہے۔ پاکستان کی جانب سے ٹیرر فنانسنگ کیخلاف اقدامات سمیت اب تک کی کارکردگی رپورٹ پیش کی جائے گی۔ ذرائع کے مطابق پاکستان نے اب تک 27 نکاتی ایکشن پلان کے26 نکات پرعمل کیا ہے۔ دہشت گردوں کو دی جانے والی سزاؤں اور قانونی چارہ جوئی کے نکتہ پر جزوی عملدرآمد کیا گیا۔ پاکستان نے اے پی جی کی 40 میں سے 35 سفارشات پر بھی عمل کیا ہے۔ فیٹف پاکستان کے زمینی حقائق اور قانون سازی پر عملدرآمد کا جائزہ لے گا۔

اجلاس میں پاکستانی حکومت کی جانب سے منی لانڈرنگ اور دہشتگردی کی فنانسنگ کے خلاف اقدامات کی اب تک کی پیش رفت کا جائزہ لیا جائے گا اور فیصلہ ہوگا کہ آیا پاکستان کو مزید گرے لسٹ میں رکھا جائے یا نہیں۔ خیال رہے کہ2018 میں فنانشل ایکشن ٹاسک فورس نے پاکستان کو گرے لسٹ میں شامل کیا تھا۔ سال 2018 میں جب پاکستان کو گرے لسٹ میں شامل کیا گیا تو پاکستان کے مالی نظام اور قوانین کو ایف اے ٹی ایف کی 40 میں سے 13 سفارشات کے مطابق پایا گیا جبکہ باقی 27 سفارشات پر عمل درآمد کرنے کے لیے ایک سال کا وقت دیا گیا تھا۔

فروری 2020 تک پاکستان صرف 14 سفارشات پر ہی عمل درآمد کر سکا لہٰذا ایف اے ٹی ایف نےاکتوبر 2020 تک کا مزید وقت دیا تاکہ باقی 13 سفارشات پر بھی عمل درآمد کروایا جا سکے۔ اکتوبر 2020 میں ہونے والے ایف اے ٹی ایف کے اجلاس میں 6 سفارشات پر عمل درآمد کو غیر اطمینان بخش قرار دیا اور چار ایسے شعبوں کی نشاندہی کی جس میں مزید کام درکار تھا اور اس کے لیے پاکستان کو فروری 2021 تک کا اضافی وقت فراہم کیا۔ فروری2021 میں ایف اے ٹی ایف نے پاکستان کو باقی تین نکات پر عمل کرنے کے لیے چار ماہ(جون2021تک) کی مہلت دی۔

جون2021 تک پاکستان نے 27 میں سے 26 نکات پر عمل درآمد کیا۔ 25 جون2021 کو ایف اے ٹی ایف نے پاکستان کو مزید وقت کیلئے گرے لسٹ میں رکھتے ہوئے کہا کہ پاکستان نے 27 میں سے 26 نکات پر عمل درآمد کیا ہے۔ پاکستان کی کارکردگی تسلی بخش ہے لیکن آخری شرط سے منسلک 6 نکات پر عمل کرنا ہو گا۔ پاکستان کو اپنے سزا کے نظام کو بہتر بنانا ہوگا۔ یو این کے نامزد کردہ 1376دہشتگردوں کو سزائیں دینا ہوں گی۔

پاکستان جون 2018 سے ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ میں ہے جبکہ بھارت اور اس کے اتحادیوں کی کوشش رہی ہے کہ پاکستان کو بلیک لسٹ میں شامل کروایا جائے۔

محمد اکرم سینیئر ویب ایڈیٹر ہیں ۔ جرنلزم میں ایم فل ڈگری رکھتے ہیں۔ مختلف ٹی وی چینلز کے ویب اور سوشل میڈیا سے واسطہ رہے ہیں اب جی این این ٹی وی سے وابستہ ہیں۔ محمد اکرم بلاگز اور آرٹیکل بھی لکھتے ہیں۔

کھیل

چٹا گانگ ٹیسٹ : پاکستان نے بنگلادیش کو8 وکٹوں سے شکست دیدی

توفیق عمر اور عمران فرحت نے 2003 میں جنوبی افریقہ کے خلاف دونوں اننگز میں 100 رنز کی شراکت قائم کی تھی۔

پر شائع ہوا

Muhammad Akram

کی طرف سے

چٹا گانگ ٹیسٹ : پاکستان نے بنگلادیش کو8 وکٹوں سے شکست دیدی

ڈھاکہ :پہلے ٹیسٹ میچ میں بنگلہ دیش کو پاکستان نے 8 وکٹوں سے شکست دیدی ہے ۔ 

پاکستانی ٹیم نے دوسری اننگ میں یہ ہدف باآسانی حاصل کرلیا ۔ دوسری اننگ میں عابد علی نے 91 اور عبداللہ شفیق نے 71 رنز بنائے 

اس سے پہلے ٹیسٹ میچ میں بنگلہ دیش کی جانب سے جیت کے لیے دیئے گئے 202 رنز ہدف کے تعاقب میں پاکستانی اوپنرز نے شاندار آغاز فراہم کیا ۔

چٹا گانگ میں کھیلے جانے والے پہلے ٹیسٹ میچ کی دوسری اننگز میں بنگلا دیش کی پوری ٹیم 157 رنز  پر ڈھیر ہو گئی اور پاکستان کو جیت کے لیے 202 رنز کا ہدف دے دیا تھا۔

قومی ٹیم کی جانب سے دوسری اننگز کا آغاز اوپننگ جوڑی عابد علی اور عبداللہ شفیق نے کیا۔ دونوں کھلاڑیوں نے لگاتار دوسری اننگز میں 100 رنز کی شراکت داری قائم کر کے توفیق عمر اور عمران فرحت کا ریکارڈ برابر کر دیا۔

توفیق عمر اور عمران فرحت نے 2003 میں جنوبی افریقہ کے خلاف دونوں اننگز میں 100 رنز کی شراکت قائم کی تھی۔

عبداللہ شفیق 71 اورعابد علی 91 رنز پر آؤٹ ہوئے ۔ 

بنگلا دیش نے چوتھے روز اپنی دوسری اننگز کا آغاز 39 رنز چار کھلاڑی آوٹ پر کیا تو حسن علی مشفیق الرحیم کو کلین  بولڈ کر دیا،انہوں نے 16 رنزبنائے۔

یاسر علی 36 رنز بنا کر ریٹائرڈ ہرٹ ہو گئے، پہلی اننگز  میں سنچری بنانے والے لٹن داس 59 رنز بنا کر پویلین لوٹ گئے۔

پاکستان  کے فاسٹ باولر  شاہین آفریدی نے  دوسری اننگز کے ہیرو رہے، انہوں نے 5 کھلاڑیوں کو آوٹ کیا، ساجد خان  نے تین جبکہ حسن علی نے دو وکٹیں حاصل کیں۔

اس سے پہلے بنگلا دیش کی ٹیم نے پہلی اننگز میں 330 رنز بنائے تھے جس کے جواب میں پاکستان کی پوری ٹیم 286 رنز پر آوٹ ہو گئی تھی اور انہیں 44 رنز  کی برتری حاصل تھی۔

بنگلہ دیش کے تیج الاسلام کی تباہ کن بالنگ کے سامنے پاکستانی بیٹرز ٹک نہ سکے تھے انہوں نے 7 وکٹیں حاصل کیں تھیں۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

پاکستان کی او آئی سی کو افغان صورتحال پر اسلام آباد میں اجلاس کرنے کی پیشکش 

اسلام آباد: وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے  کہ ہم نے او آئی سی کو 17 دسمبر 2021 کو اسلام آباد میں اجلاس کی میزبانی کی پیشکش بھی کی ہے، ہم پراعتماد ہیں کہ او آئی سی رکن ممالک اس پیشکش کی تائید کریں گے۔

پر شائع ہوا

Umar Nawaz

کی طرف سے

پاکستان کی او آئی سی کو افغان صورتحال پر اسلام آباد میں اجلاس کرنے کی پیشکش 

تفصیلات کے مطابق وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ افغانستان او آئی سی کا بانی رُکن ہے، اسلامی امہ کا حصہ ہونے کی حیثیت سے ہم افغانستان کے عوام کے ساتھ اخوت وبھائی چارے کے دائمی برادرانہ رشتوں میں بندھے ہیں۔

شاہ محمود قریشی  نےکہا کہ آج ہمارے افغان بھائیوں اور بہنوں کو ہمیشہ سے بڑھ کر ہماری ضرورت ہے، آپ آگاہ ہیں کہ افغانستان اس وقت سنگین انسانی صورتحال سے دوچار ہے۔

 وزیر خارجہ نے کہا کہ لاکھوں افغان جن میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں جن کو خوراک، ادویات اور دیگر ضروری اشیاءکی فراہمی کی قلت کی بناءپر ایک غیریقینی مستقبل کا سامنا ہے۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ سردیوں کی آمد نے اس انسانی المیہ کو مزید گھمبیر بنادیا ہے، او آئی سی کو افغان بھائیوں کی مدد کے لئے آگے بڑھنا ہوگا۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ افغان عوام کی انسانی ضروریات کو پورا کرنے کی ہماری اجتماعی کوششوں کو تیز کرنا ہوگا، انہیں فوری اور مسلسل مدد فراہم کرنا ہوگی۔

شاہ محمود قریشی کا مزید کہنا تھا کہ افغانستان کی صورتحال پر او آئی سی کی وزرا خارجہ کونسل کا پہلا غیرمعمولی اجلاس جنوری 1980 میں اسلام آباد میں منعقد ہوا تھا، افغان عوام کے ساتھ دائمی بھائی چارے اور ان کی حمایت میں اگلے ماہ ایک بار پھر ہم اسلام آباد میں جمع ہوں گے۔

 

 

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

پاکستان میں کورونا سے اموات اور کیسز کی شرح میں کمی کارجحان  برقرار 

اسلام آباد:  پاکستان میں کورونا وائرس سے اموات اور کیسز کی شرح میں بتدریج کمی آرہی ہے،   گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کورونا کے مثبت کیسز کی شرح 1.1فیصد رہی۔

پر شائع ہوا

Asma Rafi

کی طرف سے

پاکستان میں کورونا سے اموات اور کیسز کی شرح میں کمی کارجحان  برقرار 

نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کی جانب سے جاری کیے گئے تازہ اعداد و شمارکے مطابق  ملک میں کورونا وائرس کی  چوتھی  لہر کے دوران ملک میں  مزید10 افراد  انتقال  کرگئے جبکہ 475نئے کیسز رپورٹ ہوئے ۔ 

ملک میں کورونا سے  اموات کی تعداد 28ہزار 728 ہوگئی ہے اور مجموعی کیسز 12 لاکھ 42ہزار 236تک جاپہنچے ہیں۔  

این سی اوسی  کے مطابق پاکستان میں کوروناکے905مریضوں کی حالت تشویشناک ہے ۔جبکہ چوبیس گھنٹے کے دوران  42 ہزار 577افراد کے ٹیسٹ کئےگئے گئے ۔

ملک میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران مزید 327افراد کورونا وائرس سے صحتیاب ہوئے ہیں ۔ اب تک  95.9 فیصد مریض کوویڈ سے صحت یاب ہوئے ، اب تک   مجموعی طور پر 12 لاکھ 42ہزار 236 مریض کورونا سےصحت یاب ہوچکےہیں۔

واضح رہے کہ پاکستان میں کورونا وائرس کا پہلا کیس 26 فروری 2020 کو ملک کے سب سے بڑے شہر کراچی میں سامنے آیا تھا۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll