جی این این سوشل

پاکستان

حکومت کا کم آمدن والوں کیلئے بڑا ریلیف پیکیج دینے کا فیصلہ

حکومت نے کم آمدن والوں کیلئے بڑا ریلیف پیکیج دینے کا فیصلہ کیا ہے۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

حکومت کا کم آمدن والوں کیلئے بڑا ریلیف پیکیج دینے کا فیصلہ
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

وزیراعظم شہباز شریف کی زیر صدارت اتحادیوں کا اہم اجلاس ہوا جس میں بڑے حکومتی فیصلے سامنے آگئے ہیں۔

 اجلاس میں حکومت نے اگست 2023تک مدت مکمل کرنے کا، پیٹرولیم مصنوعات میں اضافہ اور موٹر سائیکل اور رکشہ والوں کے لئے بڑا ریلیف پیکیج دینے کا فیصلہ کیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ پیکیج بی ایس پی اسکیم کے ذریعے دیا جائے گا، پیکیج سے سوا کروڑ افراد مستفید ہوں گے جبکہ اس کا اعلان وزیراعظم قوم سے خطاب میں کریں گے۔

اجلاس میں اتحادیوں نے وزیراعظم کو مشورہ دیا کہ  غیر یقینی صورتحال سے ملک کو نکالا جائے۔

شہباز شریف نے کہا کہ سب کو بتا دیں کوئی غیریقینی نہیں مدت مکمل کریں گے، دباؤ میں آکر کوئی انتخابات نہیں ہوں گے، ڈی چوک کسی کو دھرنا نہیں کرنے دیں گے، عمران چھ دن بعد آئیں مختص جگہ احتجاج کا شوق پورا کر لیں۔

وزیراعظم شہباز شریف نے کہا کہ دسمبر جنوری تک حکومتی پالیسیوں کے ثمرات سامنے آئیں گے، ملکی معیشت کو ترقی کی راہ پر گامزن کریں گے۔

پاکستان

"آرمی چیف کی تقرری کبھی بھی میرا ایشو نہیں رہا، سرحدوں پر ڈیوٹی دینے والے جوان میرے بچوں کی طرح ہیں"

عمران خان نے مزید کہا کہ سرحدوں پر ڈیوٹی دینے والے جوان میرے بچوں کی طرح ہیں۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

"آرمی چیف کی تقرری کبھی بھی میرا ایشو نہیں رہا، سرحدوں پر ڈیوٹی دینے والے جوان میرے بچوں کی طرح ہیں"

چیئرمین پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) اور سابق وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ آرمی چیف کی تقرری کبھی بھی میرا ایشو نہیں رہا۔ میں اپنی فوج کو کبھی کمزور نہیں دیکھ سکتا۔

عمران خان نے مزید کہا کہ سرحدوں پر ڈیوٹی دینے والے جوان میرے بچوں کی طرح ہیں۔

لاہور میں ملکی سیاسی صورتحال پر سینئر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ الیکشن پر ہر ایک سے بات کرنے کو تیار ہیں۔

انہوں نے کہا کہ الیکشن پر جو بھی بات کرنا چاہتا ہے تحریک انصاف کے دروازے کھلے ہیں۔ 
 
ان کا کہنا تھا کہ جنہیں مسلط کردیا گیا ہے، ڈر ہے کہ وہ ملک کا کیا حال کر دیں گے، مجھے اپنی نہیں ملک کی فکر ہے۔

چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ آج عوام جن مشکلات سے دوچار ہیں ان کے لیے آواز بلند کر رہا ہوں۔

ساتھ میں انہوں نے یہ بھی کہا کہ معیشت اور ملک کے ہر بحران کا بہتر حل الیکشن ہیں۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

وزیراعظم ہاؤس اور وزیراعظم آفس کو جلد از جلد شمسی توانائی پر منتقل کرنے کا فیصلہ

وزیراعظم ہاؤس اور وزیراعظم آفس کی عمارت کو ہنگامی بنیادوں پر شمسی توانائی پر منتقل کرنے کا فیصلہ کرلیا گیا۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

وزیراعظم ہاؤس اور وزیراعظم آفس کو جلد از جلد شمسی توانائی پر منتقل کرنے کا فیصلہ

وزیر اعظم شہباز شریف کی زیر صدارت انرجی ٹاسک فورس کا اجلاس ہوا، جس میں وفاقی وزیر توانائی انجینئر خرم دستگیر، وفاقی وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل، وفاقی وزیر منصوبہ بندی احسن اقبال، وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات مریم اورنگزیب، وزیر مملکت پٹرولیم مصدق ملک اور متعلقہ اعلیٰ افسران نے شرکت کی۔

اجلاس میں چاروں صوبوں کے چیف سیکرٹریز بذریعہ ویڈیو لنگ اجلاس میں شریک ہوئے۔

اجلاس میں ملک میں شمسی توانائی کے فروغ کے حوالے سے کیے جانے والے اقدامات پر تفصیلی بریفنگ دی گئی، اور بتایا گیا کہ ملک میں ایندھن سے چلنے والے پاور ہاؤسز کو شمسی توانائی پر منتقل کرنے اور 11 کے وی کے 2000 فیڈرز پر شمسی توانائی کی پیداوار کی تجویز بھی زیرِ غور ہے۔

اجلاس میں ملک بھر میں سرکاری عمارات کی شمسی توانائی پر منتقلی کی تجویز کے حوالے سے تفصیلی جائزہ لیا گیا، اور بتایا گیا کہ اگلے 10 سالوں میں سرکاری عمارتوں پر 1000 میگاواٹ تک کے شمسی توانائی پیدا کرنے کے پلانٹس لگائے جائیں گے۔

اجلاس کو بریفنگ دی گئی کہ ملک میں ٹیوب ویلز کی سولرائزیشن بھی کی جائے گی، حکومتی فنڈنگ سے بلوچستان میں ٹیوب ویلز کو شمسی توانائی پر منتقل کرنے کا منصوبہ زیرِ غور ہے، جس کے ذریعے سے صوبے میں 30 ہزار ٹیوب ویلز کو شمسی توانائی پر منتقل کیا جائے گا، اور اس منصوبے پر 300 بلین روپے کی لاگت آئے گی۔

اجلاس کو مزید بتایا گیا کہ شہریوں کو شمسی توانائی پیدا کرنے کے پلانٹس، جن میں نیٹ میٹرنگ کی سہولت بھی موجود ہو، مہیا کرنے پر غور کیا جارہا ہے۔

اجلاس میں سولر اور گرین انرجی پر منتقلی کے حوالے سے اہم اعلانات کرتے ہوئے یہ فیصلہ کیا گیا کہ یکم اگست کو قومی سولر انرجی پالیسی کا اعلان کیا جائے گا، پالیسی کا نفاذ مشترکہ مفادات کونسل کی منظوری سے مشروط ہوگا۔ جب کہ یہ فیصلہ بھی کیا گیا کہ ہنگامی بنیادوں پر وزیراعظم ہاؤس اور وزیراعظم آفس کی عمارات شمسی توانائی پر منتقل ہوجائیں گی، اس سلسلے میں متعلقہ حکام کو احکامات جاری کردیئے گئے ہیں۔

اس موقع پر وزیراعظم شہبازشریف کا کہنا تھا کہ عوام کو سستی اور ماحول دوست بجلی کی فراہمی حکومت کی اولین ترجیح ہے، اور کوشش ہے کہ ملک کو توانائی کے شعبے میں خود کفیل بنائے۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ شمسی توانائی بجلی پیدا کرنے کا ایک صاف،سستا اور ماحول دوست ذریعہ ہے، اور اس سے پیدا کی گئی بجلی سستی ہوگی، عوام پر مہنگائی کا بوجھ کم ہوگا۔

شہبازشریف نے کہا کہ ہم پاکستان کی پہلی جامع سولر انرجی پالیسی سامنے لا رہے ہیں، پالیسی کا نفاذ صوبوں کی باہمی مشاورت سے ہوگا۔

وزیراعظم نے سولر انرجی ٹاسک فورس کی تجاویز کو سراہتے ہوئے کہا کہ تمام صوبوں کو ان تجاویز سے آگاہ کر کے ان کی رائے لی جائے، متبادل توانائی کے تمام منصوبوں میں صوبوں کی ہم آہنگی ہو۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

14 سال بعد مہنگائی کے تمام ریکارڈ ٹوٹ گئے، شوکت ترین

شوکت ترین نے کہا کہ تیل، بجلی، گیس کی قیمتیں بڑھ چکی ہیں جو مہنگائی کو مزید بڑھائیں گی اور مارکیٹ میں اس وقت آٹا فی کلو 75 روپے سے زیادہ ہے۔ یہ مہنگائی کا رونا روتے تھے لیکن اب خود کیا کر رہے ہیں۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

14 سال بعد مہنگائی کے تمام ریکارڈ ٹوٹ گئے، شوکت ترین

کراچی: سابق وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا ہے کہ 14 سال کے بعد مہنگائی کے تمام ریکارڈ ٹوٹ گئے۔

سابق وزیر خزانہ شوکت ترین نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ پچھلے 17 سال میں اتنی ترقی نہیں ہوئی جتنی پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) حکومت میں ہوئی اور پی ٹی آئی کے دور حکومت میں 2 روپے بڑھتے تھے تو یہ مارچ کرتے تھے۔

انہوں نے کہا کہ 14 سال کے بعد مہنگائی کے ریکارڈ ٹوٹ گئے اور مہنگائی 21.2 فیصد پر پہنچ گئی ہے جبکہ ہم مہنگائی 12 فیصد پر چھوڑ کر گئے تھے۔ 2008 کے بعد مہنگائی کی شرح اس بار سب سے زیادہ بڑھی۔

شوکت ترین نے کہا کہ تیل، بجلی، گیس کی قیمتیں بڑھ چکی ہیں جو مہنگائی کو مزید بڑھائیں گی اور مارکیٹ میں اس وقت آٹا فی کلو 75 روپے سے زیادہ ہے۔ یہ مہنگائی کا رونا روتے تھے لیکن اب خود کیا کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پیاز اور آلو کی بڑی فصل ہے لیکن یہ مارکیٹ میں قیمت 80 روپے کلو کیوں ہے ؟ حکمران تو30 سال سے لگے ہوئے ہیں اور نیب کو ختم کرنے کی کوشش کی گئی۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll