جی این این سوشل

پاکستان

منی لانڈرنگ ریفرنس : وزیراعظم  ، وزیراعلی ٰ پنجاب عدالت میں پیش

لاہور : وزیر اعظم شہباز شریف اور وزیر اعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز منی لانڈرنگ کیس میں اسپیشل کورٹ سینٹرل پیش ہوگئے۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

منی لانڈرنگ ریفرنس : وزیراعظم  ،  وزیراعلی ٰ پنجاب  عدالت میں پیش
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

تفصیلات کے مطابق ایف آئی اے منی لانڈرنگ کیس میں  اسپیشل کورٹ سینٹرل میں شہباز شریف اورحمزہ شہباز کے خلاف منی لانڈرنگ کیس کی سماعت ہورہی ہے۔

 وزیراعظم شہبازشریف اور حمزہ شہباز عدالت کے روبرو پیش ہوگئے  ۔ 

شریک ملزمان سلمان شہباز، طاہر نقوی، ملک مقصود اور غلام شبیر کی گرفتاری سے متعلق رپورٹ عدالت میں پیش کردی گئی ۔

عدالت نے شہباز شریف اور حمزہ شہباز کو آج طلب کر رکھا تھا، شہباز شریف کے وکیل امجد پرویز عبوری ضمانت کی توثیق کے لیے دلائل دیں گے۔

عدالت نے وزیراعظم کے وکلا کو عبوری ضمانتوں پر دلائل مکمل کرنے کی ہدایت کررکھی ہے۔ 

گزشتہ سماعت میں وزیراعظم شہبازشریف اور وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز کی عبوری ضمانت میں 28 مئی تک توسیع کی گئی تھی ۔ عدالت نے سلمان شہباز، طاہر نقوی اور ملک مقصود کے وارنٹ گرفتار جاری کیے تھے ۔ 

پاکستان

گھڑیاں بیچنا عمران خان کا حق تھا، فواد چوہدری

سابق وزیراعظم عمران خان کی جانب سے توشہ خانے میں جمع کروائے بغیر گھڑیاں بیچنے کو رہنما پی ٹی آئی فواد چوہدری نے اُن کا حق قرار دے دیا۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

گھڑیاں بیچنا عمران خان کا حق تھا، فواد چوہدری

میڈیا سے گفتگو میں فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ جس کی گھڑی ہے وہ چاہے بیچے، پھینکے، رکھے، یا کسی کو تحفہ دے، دوسرا کون ہوتا ہے اس سے پوچھنے والا؟

انہوں نے کہا کہ گھڑی بیچنے سے زیادہ عجیب بات ہے کہ ملک کا وزیراعظم 16 ارب روپے کی منی لانڈرنگ کرے۔

 فواد چوہدری سے بار بار رپورٹر نے سیدھے سوالات کیے، لیکن وہ سیدھا جواب دینے کے بجائے ہر بار بات گھما گئے۔

واضح رہے کہ سابق وزیراعظم عمران خان نے توشہ خانے سے 15 کروڑ 40 لاکھ روپے کی تین قیمتی گھڑیاں اسلام آباد کے واچ ڈیلر کو فروخت کیں اور مجموعی طور پر 3 کروڑ 60 لاکھ روپے کمائے۔

یہ تینوں گھڑیاں مشرق وسطیٰ کے خلیجی جزیرے کے شاہی خاندان کے ایک فرد اور اسی جزیرے کے ایک معزز شخص نے دی تھیں، یہ ان گھڑیوں کے علاوہ ہیں جو پہلے میڈیا میں رپورٹ ہوئی تھیں۔

پڑھنا جاری رکھیں

دنیا

بھارت میں مسلمان صحافی کی گرفتاری پر اقوام متحدہ کا ردعمل

بھارت میں مسلمان صحافی محمد زبیر کی گرفتاری پر اقوام متحدہ نے ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ صحافیوں کو کچھ لکھنے، بولنے یا ٹوئٹ کرنے پر جیل میں نہیں ڈالنا چاہیے۔ 

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

بھارت میں مسلمان صحافی کی گرفتاری پر اقوام متحدہ کا ردعمل

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل کے ترجمان نے اس حوالے سے مزید کہا کہ صحافیوں کو ہراسگی کے بغیر آزادانہ اظہار خیال کا حق ملنا چاہیے۔ 

ترجمان کا کہنا تھا کہ دنیا بھر میں ہر جگہ صحافیوں کو آزادانہ اظہار رائے کا حق ملنا چاہیے۔

واضح رہے کہ بھارتی پولیس نے فیکٹ چیکنگ ویب سائٹ کے شریک بانی محمد زبیر کو پیر کو گرفتار کیا تھا۔ 

نئی دلی سے موصولہ اطلاع کے مطابق محمد زبیر کو 2018 میں کیے گئے ایک ٹوئٹ پر گرفتار کیا گیا، ان پر مذہبی جذبات مجروح کرنے کا الزام لگایا گیا ہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

ذی الحج کا چاند نظر نہیں آ یا، رویت ہلال کمیٹی لاہور

لاہور:رویت ہلال کی زونل کمیٹی لاہور کے عہدیداران نے کہا ہے کہ ذی الحج کا چاند نظر نہیں آیا، عیدالاضحٰی 10 جولائی کو ہوگی۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

ذی الحج کا چاند نظر نہیں آ یا، رویت ہلال کمیٹی لاہور

تفصیلات کے مطابق ذی الحج کا چاند دیکھنے کے لیے مرکزی رویت ہلال کمیٹی کا اجلاس چیئرمین مولانا عبدالخبیر آزاد کے زیر صدارت  محکمہ موسمیات کے دفتر کراچی میں جاری ہے جبکہ اس حوالے سے زونل کمیٹیوں کے اجلاس بھی جاری ہیں۔

مرکزی رویت ہلال کمیٹی کے اجلاس میں مرکزی اور زونل رویت ہلال کمیٹی کے اراکین، محکمہ موسمیات سمیت متعلقہ اداروں کے حکام بھی شریک ہیں۔ 

تازہ اطلاعات کے مطابق زونل کمیٹی لاہور نے اعلان کیا ہے کہ ذی الحج کا چاند نظر نہیں آیا، عیدالاضحٰی 10 جولائی بروز اتوار کو ہو گی، تاہم اس حوالے سے حتمی اعلان مرکزی رویت ہلال کمیٹی کرے گی۔

اس حوالے سے ڈائریکٹر مذہبی امور پنجاب نے بتایا کہ ذی الحج کا چاند آج صبح 7 بج کر 52 منٹ پر پیدا ہوا،غروبِ آفتاب کے وقت چاند کی عمر 11 گھنٹے اور 49 منٹ ہے، پنجاب میں غروب آفتاب کا وقت 7 بج کر 13 منٹ ہے۔

انہوں نے کہا کہ چاند 7 بج کر 45 منٹ یعنی 32 منٹ تک دیکھ جا سکتا ہے، چاند کی عمر 19گھنٹے سے کم ہو تو ملک کے کسی کونے میں کہیں نظر نہیں آتا، چاند کی عمر 26 گھنٹے تک ہو جائے تو وہ نظر آ سکتا ہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll