جی این این سوشل

پاکستان

توانائی سیکٹر کا گردشی قرضہ 2.31 کھرب روپے تک جا پہنچا

وزارت  توانائی کے مطابق پاکستان میں گردشی قرضے کے دیرینہ مسئلے نے تشویشناک رخ اختیار کر لیا ہے۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

توانائی سیکٹر کا گردشی قرضہ  2.31 کھرب روپے تک  جا پہنچا
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

اسلام آباد:وزارت  توانائی کے مطابق پاکستان میں گردشی قرضے کے دیرینہ مسئلے نے تشویشناک رخ اختیار کر لیا ہے۔ تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق جون 2023 تک یہ حیرت انگیز طور پر بڑھ کر 2.31 ٹریلین روپے تک پہنچ گیا ہے۔

وزارت توانائی کی حالیہ گردشی قرضوں کی رپورٹ کے مطابق یہ 2022 کی اسی مدت کے مقابلے میں سال بہ سال تشویشناک 2.5 فیصد اضافہ، یا 57 ارب روپے کا اضافی ہے۔

ماہ بہ ماہ کا موازنہ کیا جائے تو گردشی قرضے میں مئی 2023 کے 2.65 ٹریلین روپے سے 336 ارب روپے کی کمی کے ساتھ کمی ہوتی نظر آتی ہے، لیکن ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ طویل مدتی مسئلہ اب بھی ایک شدید خطرہ ہے۔

اپریل 2023 میں فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کی جانب سے 5 ارب روپے کی واپسی اس کمی کا زیادہ تر ذمہ دار ہے۔ اس کے علاوہ گزشتہ سال کے غیر ادا شدہ کلیمز کی مد میں 21 ارب روپے جاری کیے گئے ہیں۔

 

پاکستان

عید قربان: جانوروں کی قیمتیں آسمان سے باتیں کرنے لگیں

قربانی کے دن نزدیک آتے ہی چھریاں چاقو تیز کرنے والوں کی بھی چاندی ہو گئی ہے جہاں شہریوں سے منہ مانگی قیمتیں وصول کی جارہی ہیں

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

عید قربان: جانوروں کی قیمتیں آسمان سے باتیں کرنے لگیں

عید قربان میں 2روز باقی رہ گئے ہیں۔ ملک کے مختلف شہروں میں منڈیاں تو سج گئیں لیکن ان منڈیوں میں خریداروں کا تناسب بہت کم نظر آتا ہے، منڈیوں میں جانور تو بہت ہیں لیکن خریدار کم ہیں۔

 عید میں بہت تھوڑے دن رہ جانے کے باوجود زیادہ رش نہیں۔ منڈی میں خریداروں کے کم ہونے کی وجہ جانورں کی آسمان سے باتیں کرتی قیمتیں ہیں جس سے خریدار پریشان ہیں جب کہ بیوپاری منڈی میں آنے والے اخراجات اور جانوروں کے مہنگے چارے کا رونا روتے نظر آرہے ہیں۔

مہنگائی کے باعث ابھی گاہک بکروں ، دنبوں اور بیلوں کے آسمان سے باتیں کرتے نرخ پوچھ کر واپس چلے جاتے ہیں اور اس طرح زیادہ تر لوگ عید سے ایک روز قبل دوبارہ منڈی مویشیاں کا رخ کریں گے۔

اجتماعی قربانی کرنے والے افراد اور اداروں کی طرف سے بکنگ کا سلسلہ جاری ہے جو اس کی روشنی میں ہی جانوروں کی خریداری کریں گے۔

دوسری جانب قربانی کے دن نزدیک آتے ہی چھریاں چاقو تیز کرنے والوں کی بھی چاندی ہو گئی ہے جہاں شہریوں سے منہ مانگی قیمتیں وصول کی جارہی ہیں۔ 

پڑھنا جاری رکھیں

علاقائی

مشکل حالات میں بجٹ بنایا، وزیراعلیٰ سندھ کی پوسٹ بجٹ پریس کانفرنس

نگران حکومت کے بجٹ میں شامل ترقیاتی اسکمیں بند کرنے سے سست روی ہوئی، مہنگائی کی وجہ سے قیمتوں میں اضافہ ہوا، مراد علی شاہ

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

مشکل حالات میں بجٹ بنایا، وزیراعلیٰ سندھ کی پوسٹ بجٹ پریس کانفرنس

وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا کہ ہم نے مشکل حالات میں بجٹ بنایا ہے۔ نگران حکومت کے بجٹ میں شامل ترقیاتی اسکمیں بند کرنے سے سست روی ہوئی، مہنگائی کی وجہ سے قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے اس کی وجہ سے تخمینہ بڑھ سکتا ہے، موجودہ بجٹ میں سیلاب متاثرین کی بحالی کے اقدامات کیے گئے ہیں۔

کراچی میں پوسٹ بجٹ پریس کانفرنس کرتے ہوئے سید مراد علی شاہ نے کہاکہ بجٹ کا کل حجم 3 ہزار 56 ارب ہے، یہ بجٹ پچھلے سے 34 فیصد زیادہ ہے، ہم اگلے سال میں مزید گروتھ کی طرف جائیں گے، سندھ حکومت کا بجٹ ہر سال زیادہ ہوتا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ نگران دور میں نئی سکیموں کو روک دیا گیا تھا، سیلاب زدگان کی سکیموں کو بند کیا گیا، ہمارا ڈویلپمنٹ کا بجٹ باقی سب صوبوں سے زیادہ ہے، ہم بڑی آسانی سے پانچ سو ارب روپے کی نئی سکیمیں ڈال سکتے تھے، ہم نہ پہلی بار حکومت کر رہے ہیں نہ آخری بار کرنے جا رہے، ہم لانگ ٹرم منصوبہ بندی کرتے ہیں۔

وزیراعلیٰ سندھ کا کہنا تھا کہ کہ ہمیں وفاق سے 1900 ارب روپے ملنے کی توقع ہے، کم ازکم 37 ہزار تنخواہ سے مطمئن نہیں ہوں، بجٹ میں پرانی سکیمیں مکمل کرنے پر زور رہے گا، سندھ کابینہ نے فیصلہ کیا ہے نئی سکیم شامل نہیں کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ اگلے سال کیلئے ساڑھے 3 فیصد جی ڈی پی گروتھ کی بات کی جا رہی ہے، کوشش کریں گے جی ڈی پی کے حوالے سے وفاق کے ساتھ پورے طریقے سے تعاون کریں۔

مراد علی شاہ کا کہنا تھا کہ چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے فری بجلی کا کہا تھا، ہم نے وہ بھی اس بجٹ میں رکھا ہے، ہم سولر سسٹم نصف کرنے جارہے ہیں، سندھ میں فری بجلی دینے کی شروعات کر رہے ہیں، صوبے کے ہر شہری کو پینے کا صاف پانی ملے گا، معذور افراد کیلئے الگ ہسپتال اور پارک تعمیر ہوگا۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے آئندہ مالی سال کا 3 ہزار 56 ارب روپے کا بجٹ پیش کیا، جس میں تنخواہوں میں 30 فیصد اور پنشن میں 15 فیصد کا اضافہ کیا گیا ہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

موسم

گرمی کی شدت میں کمی کا امکان، محکمہ موسمیات نے بارشوں کی نوید سنا دی

بحیرہ عرب کی نم ہوائیں ملک میں داخل ہونے کی وجہ سے 16 سے 22جون تک بارشوں کا سلسلہ شروع ہو گا، محکمہ موسمیات

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

گرمی کی شدت میں کمی کا امکان، محکمہ موسمیات نے بارشوں کی نوید سنا دی

پنجاب کے بعض علاقوں میں 20 سے 22 جون بارشوں کی پیش گوئی کی گئی ہے۔

کشمیر، خیبر پختونخوا،گلگت بلتستان ، پنجاب کے کئی شہروں میں مطلع آبرآلود رہے گا ، پنجاب کے کئی شہروں میں بھی آج بادل برسنے کا امکان ہے۔

محکمہ موسمیات کے راولپنڈی،مری،جہلم،گجرات،گوجرانوالہ،لاہور،سیالکوٹ سمیت دیگر شہروں میں بھی بارش کا امکان ہے۔ بحیرہ عرب کی نم ہوائیں ملک میں داخل ہونے کی وجہ سے 16 سے 22جون تک بارشوں کا سلسلہ شروع ہو گا، 20سے 22جون کو جنوبی پنجاب میں بارشوں کی پیشگوئی کر دی ۔

محکمہ موسمیات نے معمول سے زیادہ بارشیں ہونے کا امکان ظاہر کیا ہے۔ جاری کردہ مون سون آئوٹ لک رپورٹ کے مطابق ملک کے بیشتر علاقوں میں معمول سےزیادہ بارشیں ہونے کا خدشہ ظاہر کیا گیا ہے۔

بالائی پنجاب اورزیریں سندھ میں زیادہ بارشیں ہونے کی توقع ہے، بلوچستان میں معمول سے کچھ زیادہ بارشیں ہونے کا امکان ظاہر کیا گیا ہے۔

دوسری جانب ملک بھر میں گرمی کا راج برقرار ہے ، گزشتہ روز شمالی علاقہ جات اور کشمیر کے علاوہ پورہ ملک شدید گرمی کی لپیٹ میں رہا تھا ۔محکمہ موسمیات کے مطابق زیادہ سے زیادہ درجہ حرارت 47ریکارڈ ہوا سندھ کے میدانی علاقوں اور جنوبی پنجاب میں گرمی کی شدت آج بھی برقرار ہے ۔

ملک کے بعض شہر گزشتہ روز شدید گرمی کی لپیٹ میں رہے۔جس میں سندھ ،جنوبی پنجاب اور بلوچستان کے کئی اضلاع میں 47ڈگری ریکارڈ کیا گیا۔ سندھ کے میدانی علاقے شدید گرمی کی لپیٹ میں رہیں گے جبکہ لاڑکانہ ،دادو، جیکب آباد ، نواب شاہ میں بھی سورج آج اپنے جوبن پر رہے گا۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll