ایدھی فاؤنڈڈیشن کا غزہ میں ریسکیو آپریشن کا فیصلہ

ایدھی فاؤنڈڈیشن کا غزہ میں ریسکیو آپریشن کا فیصلہ ایدھی فاؤنڈڈیشن کا غزہ میں ریسکیو آپریشن کا فیصلہ

کراچی : ایدھی فاؤنڈڈیشن نے غزہ میں ریسکیو آپریشن کا فیصلہ کرلیا ۔فیصل ایدھی نے فلسطینی حکام سے اجازت مانگ لی۔

تفصیلات کے مطابق  غزہ پر اسرائیل کی شدید بمباری جاری ہے۔ ایدھی فاؤنڈڈیشن   نےغزہ میں ریسکیو آپریشن کا فیصلہ کرلیا ہے۔

فیصل ایدھی کا کہنا ہے کہ  ریسکیو آپریشن کیلئے  فلسطینی حکام سے اجازت مانگی ہے، اجازات ملنے پر سعد ایدھی سمیت 5 افراد فلسطین روانہ ہونگے۔

عرب میڈیاکے مطابق گزشتہ روز اسرائیل کی جانب سے غزہ پر کم از کم 70 فضائی حملے کیے گئے ،  اسرائیل کی وحشیانہ بمباری سے غزہ جل رہا ہے۔ اتوار کودو  رہائشی عمارتوں  کو ملبے کا ڈھیر بنا دیا گیا ،   حملوں میں کم ازکم   42فلسطینی شہید اور متعدد زخمی ہوگئے۔ ملبے سے کئی بچوں کی لاشیں نکالنے کے لرزہ خیز مناظر سامنے آئے، ایک بچی 24 گھنٹوں بعد زندہ نکال لی گئی۔

پیرکے روز بھی اسرائیل کی جانب سے شدید بمباری  کی گئی ،  یہ 2014 میں ہونے والے بمباری کے بعد غزہ کا سب سے زیادہ شدید فضائی حملہ بتایا جاتا ہے۔   حماس کے میڈیا گروپ  کے مطابق  ان حملوں میں حماس کے سربراہ یحییٰ السنوار کے گھر کو بھی نشانہ بنایا گیا۔ پیر سے اب تک اسرائیل پر 3 ہزار میزائل داغے جا چکے ہیں۔ راکٹ داغنے کی شرح 2006 میں حزب اللہ کے راکٹ حملوں اور 2019 کی لڑائی سے بھی زیادہ ہے۔

دوسری جانب حماس کی جوابی گولہ باری کے نتیجے میں اسرائیل میں 10 افراد کی ہلاکت کی اطلاع ہے۔الجزیرہ کے نامہ نگار ، جو براہ راست غزہ سے رپورٹنگ کررہے ہیں ، انہوں نے ابھی تک کسی بھی زمینی حملے کی اطلاعات کی تردید کی ہے۔ تاہم  انہوں نے تصدیق کی ہے کہ اسرائیلی فوج سرحد پر بڑے پیمانے پر جمع ہورہی ہے۔ اسرائیل کے اس تازہ حملے سے قبل غزہ کی صورت حال سے متعلق اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا اجلاس بے نتیجہ ختم ہوگیا۔ اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انٹونیو گوٹیرس نے کہا کہ جنگ علاقے کو انسانی بحران سے دوچار کرسکتی ہے۔

علاوہ ازیں او آئی سی نے بھی اسرائیلی بمباری اور وحشیانہ حملوں کو روایتی قرارداد منظور کرکے نمٹادیا۔ قرارداد میں مطالبہ کیا گیا کہ عالمی برادری اپنی ذمہ داریاں پوری کرے۔ ایمنسٹی انٹرنیشنل نے اسرائیل سے غیر قانونی طاقت کا استعمال فوری روکنے کا مطالبہ کیا ہے۔

اس طرح کی مزید خبریں