جی این این سوشل

پاکستان

کورونا وائرس : ملک میں مزید 47اموات ، ایک ہزار سے زائد متاثر

اسلام آباد : ملک میں کورونا وائرس کی تیسری لہر کے دوران مزی47 افراد انتقال کر گئے جبکہ 1ہزار303نئے کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

کورونا وائرس : ملک میں مزید 47اموات ، ایک ہزار سے زائد متاثر
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

تفصیلات کے مطابق  نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کی جانب سے جاری کیے گئے تازہ اعداد و شمارکے مطابق  ملک میں گزشتہ 24 گھنٹوں میں کورونا سے مزید76فراد چل بسے ۔ ملک میں  اموات کی مجموعی تعداد21 ہزار576ہوگئی ہے،جبکہ  متاثرہ افراد کی مجموعی تعداد 9 لاکھ 38ہزار 737ہو گئی ہے ۔

پنجاب

پنجاب میں کورونا مریضوں کی تعداد 3لاکھ43ہزار 499 ہوگئی ۔ جبکہ صوبے میں اب تک 10ہزار547افراد جان سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں ۔

سندھ

سندھ میں کورونا وائرس سے سب سے زیادہ متاثرہ مریضوں کی تعداد  3 لاکھ 26ہزار 413ہو گئی جبکہ صوبے میں اب تک 5 ہزار196افراد جان کی بازی ہار گئے ۔

خیبرپختون خوا

خیبرپختون خوا میں کورونا وائرس سے متاثرہ مریضوں کی تعدادایک لاکھ 35ہزار383ہوچکی ہے ۔ صوبے میں 4194افراد چل بسے۔

بلوچستان

بلوچستان میں کورونا وائرس کے اب تک 26ہزار052کیسز رپورٹ ہوئے ہیں جبکہ صوبے میں 291مریض چل بسے ۔

اسلام آباد

وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں مجموعی طورپرمتاثرہ افراد کی تعداد82 ہزار001جبکہ اموات کی تعداد769تک جاپہنچی ۔

گلگت بلتستان

گلگت بلتستان میں اب تک 5 ہزار 682افراد کورونا کا شکار ہوئے ہیں جبکہ 108افراد جان سے ہاتھ دھو بیٹھے ۔

آزاد کشمیر

آزاد جموں کشمیرمیں کورونا سےمتاثرہ افراد کی تعداد 19 ہزار675ہوچکی ہے جبکہ 560افراد جان کی بازی ہار گئے ۔

ملک بھرمیں صحت یاب ہونے والے افراد کی تعداد بھی تیزی سے بڑھنے لگی ہے، این سی اوسی کے مطابق گزشتہ  24گھنٹوں میں 1978فرادکوروناوائرس کوشکست دےچکے ہیں۔ ملک بھر میں اب تک 8لاکھ73ہزار543مریض کورونا کو شکست دے چکے ہیں ۔

واضح رہے کہ پاکستان میں کورونا وائرس کا پہلا کیس 26 فروری 2020 کو ملک کے سب سے بڑے شہر کراچی میں سامنے آیا تھا ۔

تجارت

ایکسپوٹرز کا ملکی معیشت میں کلیدی کردار،نظر انداز نہیں کیا جاسکتا، جام کمال

جام کمال خان اور علی پرویز ملک سے پاکستان کارپٹ مینو فیکچررز اینڈ ایکسپورٹر زایسوسی ایشن کے وفد نے الگ الگ ملاقاتیں

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

ایکسپوٹرز کا ملکی معیشت میں کلیدی کردار،نظر انداز نہیں کیا جاسکتا، جام کمال

وفاقی وزیر تجارت جام کمال خان نے کہا کہ ایکسپورٹرز کا ملکی معیشت میں کلیدی کردار ہے جسے نظر انداز نہیں کیا جا سکتا ،حکومت اس سے آگاہ ہے کہ پاکستان کی ترقی کے لئے ایکسپورٹ میں اضافہ نا گزیر ہے اور اس کے لئے ہر ممکن اقدامات اٹھائے جارہے ہیں۔

وفاقی وزیر تجارت جام کمال خان اوروزیر مملکت خزانہ علی پرویز ملک سے پاکستان کارپٹ مینو فیکچررز اینڈ ایکسپورٹر زایسوسی ایشن کے وفد نے الگ الگ ملاقاتیں کیں۔ جس میں انہوں نے ایکسپورٹرز کیلئے ٹیکس رجیم کی تبدیلی پر تحفظات اورہاتھ سے بنے قالینوں کی صنعت کو درپیش مسائل کے حوالے سے آگاہ کیا ۔

سینئر وائس چیئرمین عثمان اشرف کی قیادت میں عبد اللطیف ملک ، میجر (ر) اختر نذیر اور شاہد حسن شیخ پر مشتمل وفد نے وفاقی وزیر تجارت جام کمال خان اور وزیر مملکت خزانہ علی پرویز ملک کو آگاہ کیا کہ بجٹ میں ایکسپورٹرز کے لئے ٹیکس رجیم میں تبدیلی کا جو فیصلہ کیا گیا ہے یہ ماضی میں بھی واپس لیا گیا تھا ۔

وفد نے وفاقی وزیر تجارت جام کمال خان اور وزیر مملکت خزانہ علی پرویز ملک کو ہاتھ سے بنے قالینوں کی صنعت کو درپیش مسائل ، اس صنعت کی ایکسپور ٹ کے کم ہونے کی وجوہات اور رواں سال اکتوبر میں پاکستان میں منعقد ہونے والی کارپٹ کی عالمی نمائش کے حوالے سے بھی آگاہ کیا ۔

وفاقی وزیر تجارت جام کمال خان نے کہا کہ ایکسپورٹرز کا ملکی معیشت میں کلیدی کردار ہے جسے نظر انداز نہیں کیا جا سکتا ،حکومت اس سے آگاہ ہے کہ پاکستان کی ترقی کے لئے ایکسپورٹ میں اضافہ نا گزیر ہے اور اس کے لئے ہر ممکن اقدامات اٹھائے جارہے ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ حکومت کی بھرپور کوشش ہے کہ معیشت میں حصہ ڈالنے والے اسٹیک ہولڈرز کے مسائل کو سنا جائے اور انہیں حل کیا جائے ۔ انہوں نے وفد کو یقین دہانی کرائی کہ ہاتھ سے بنے قالینوں کی صنعت کو درپیش مسائل کے حل اورمطالبات کے حوالے سے پیشرفت کریں گے۔

وزیر مملکت خزانہ علی پرویز ملک نے کہا کہ حکومت نے دیگر اقدامات کے ساتھ ایکسپورٹ کے ذریعے معیشت کو فروغ دینے پر توجہ مرکوز کر رکھی ہے ۔ انہوں نے اکتوبر میں پاکستان میں ہاتھ سے بنے قالینوں کی عالمی نمائش کے انعقاد پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے اس امید کا اظہار کیا کہ ا س میگا ایونٹ سے پاکستان کی ہاتھ سے بنے قالینوں کی مصنوعات کی موثر تشہیر میں مدد ملے گی ۔

علی پرویز ملک نے کہا کہ کارپٹ ایسوسی ایشن کے وفد نے اپنے جن مطالبات سے آگاہ کیا ہے ان پر سنجیدگی سے غور کیا جائے گا اور اسے متعلقہ فورم پر سامنے بھی لایا جائے گا۔

پڑھنا جاری رکھیں

علاقائی

وزیراعلی پنجاب کا فلور ملز ایسوسی ایشن کی ہڑتال ختم کرنے کے اعلان کا خیرمقدم

آٹے کی قلت ہوگی نہ روٹی مہنگی ہوگی، مریم نواز

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

وزیراعلی پنجاب کا فلور ملز ایسوسی ایشن کی ہڑتال ختم کرنے کے اعلان کا خیرمقدم

وزیراعلی پنجاب مریم نوازشریف نے فلور ملز ایسوسی ایشن کی ہڑتال ختم کرنے کے اعلان کا خیرمقدم کیا ہے۔

مریم نواز نے کہا کہ آٹے کی قلت ہوگی نہ روٹی مہنگی ہوگی، فلور ملز ایسوسی ایشن ودہولڈنگ ٹیکس کے نفاذ کے خلاف پنجاب میں ہڑتال نہیں کرے گی۔

مریم نوازشریف کی ہدایت پر ہونے والے مذاکرات میں فلور ملز ایسوسی ایشن کی قیادت کو قائل کر لیا گیا۔

وزیراعلیٰ نے پنجاب میں ہڑتال نہ کرنے کے فیصلے پر ایسوسی ایشن کے چیئرمین اور دیگر قائدین کا شکریہ ادا کیا ہے۔

مریم نواز نے کہا کہ آٹا اور روٹی مہنگی ہونے کا نقصان صرف غریب عوام کو ہوگا، جائز تحفظات اور مسائل کے حل کے لیے بھرپور کردار ادا کروں گی، جائز مسائل کے حل کے لیے ہڑتال کرنے کی ضرورت نہیں۔

پڑھنا جاری رکھیں

دنیا

حماس کا بڑا فیصلہ، غزہ جنگ بندی مذاکرات سے دستبردار ہونے کا اعلان

اسرائیل کی جانب سے غزہ میں قتل عام کرنے اور مذاکرات میں اس کے غیر سنجیدہ رویے کی وجہ سے جنگ بندی کے مذاکرات سے دستبردار ہوئے ہیں، حماس

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

حماس کا بڑا فیصلہ، غزہ جنگ بندی مذاکرات سے دستبردار ہونے کا اعلان

حماس کا بڑا فیصلہ، غزہ جنگ بندی مذاکرات سے دستبردار ہونے کا اعلان کر دیا

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق حماس کے ایک سینیئر اہلکار نے کہا ہے وہ اسرائیل کی جانب سے غزہ میں قتل عام کرنے اور مذاکرات میں اس کے غیر سنجیدہ رویے کی وجہ سے غزہ تنازع پر ہونے والی جنگ بندی کے مذاکرات سے دستبردار ہو گیا ہے۔

سینئر عہدیدار کے مطابق حماس کے سیاسی رہنما اسمعیل ہنیہ نے بین الاقوامی ثالثوں قطر اور مصر کو جنگ بندی کے حوالے سے جاری مذاکرات سے دستبردار ہونے کے بارے میں بتادیا جسے مئی میں امریکی صدر جو بائیڈن نے پیش کیا تھا۔

اسمعیل ہنیہ نے کہا کہ حماس قابض (اسرائیل) کی جانب سے سنجیدگی کے فقدان، تاخیر اور رکاوٹ کی مسلسل پالیسی اور غیر مسلح شہریوں کے خلاف جاری قتل عام کی وجہ سے مذاکرات کو روک دے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ حماس نے ایک معاہدے تک پہنچنے اور جارحیت کو ختم کرنے کے لیے بڑی لچک دکھائی ہے اور جب قابض حکومت جنگ بندی کے معاہدے اور قیدیوں کے تبادلے کے معاہدے تک پہنچنے میں سنجیدگی کا مظاہرہ کرے گی تو وہ مذاکرات دوبارہ شروع کرنے کے لیے تیار ہے۔

اسمعیل ہنیہ نے ہفتے کو ایک بیان میں کہا کہ انہوں نے ثالثوں اور دیگر ممالک کو فون کیا ہے کہ وہ اسرائیل پر حملے روکنے کے لیے دباؤ ڈالیں۔

دوسری جانب اسرائیل نے کہا کہ محمد دیف، جسے وہ 7 اکتوبر کے حملوں کے ’ماسٹر مائنڈ‘ میں سے ایک سمجھتا ہے، جنوبی غزہ میں المواسی کیمپ پر کیے گئے حملوں کا ہدف تھا جہاں دوسرے اضلاع سے ہزاروں کی تعداد میں بے گھر فلسطینی جمع ہیں۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll