جی این این سوشل

پاکستان

الیکشن ایکٹ ترمیمی بل 2022سینیٹ سے منظور

اسلام آباد: سینیٹ نے  نیب اور الیکشن ایکٹ ترمیمی بل2022 اتفاق رائے سے منظور کرلیا۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

الیکشن ایکٹ   ترمیمی بل 2022سینیٹ سے منظور
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

جی این این کے مطابق چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کی زیر صدارت سینیٹ اجلاس ہوا، جس میں نیب اور الیکشن ایکٹ ترمیمی بل سینیٹ سے منظور کرلیا گیا ۔  

وزیر پارلیمانی امور مرتضی جاوید عباسی دونوں بل پیش کرنے کی تحریک ایوان میں پیش کی ۔ ایوان میں اپوزیشن کی جانب سے شور شرابہ بھی کیا گیا اور اپوزیشن ارکان چیئرمین سینیٹ کی نشست کے سامنے پہنچ گئے۔

سینیٹ کا اجلاس پیر کی شام 4 بجے تک ملتوی کردیا گیا۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز قومی اسمبلی نے نیب ترمیمی بل اور الیکشن ایکٹ 2017 ترمیمی بل منظور کئے تھے۔ بل کی منظوری کے بعد الیکٹرانک ووٹنگ مشین اور اوورسیز پاکستانیوں کی ووٹنگ سے متعلق سابق حکومت کی ترامیم ختم ہو گئی ہیں ۔ 

 

 

پاکستان

سپریم کورٹ: منحرف ارکان قومی اسمبلی سے متعلق پی ٹی آئی کی اپیل سماعت کیلئے مقرر

چیف جسٹس عمر عطا بندیال نے اپیلوں پر سماعت کے لیے تین رکنی بینچ تشکیل دے دیا۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

سپریم کورٹ: منحرف ارکان قومی اسمبلی سے متعلق پی ٹی آئی کی اپیل سماعت کیلئے مقرر

سپریم کورٹ میں منحرف ارکان قومی اسمبلی کے حوالے سے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی اپیل سماعت کے لیے مقرر کردی گئی۔

چیف جسٹس عمر عطا بندیال نے اپیلوں پر سماعت کے لیے تین رکنی بینچ تشکیل دے دیا۔

جسٹس اعجاز الا احسن کی سربراہی میں تین رکنی بینچ 19 جولائی کو سماعت کرے گا۔

الیکشن کمیشن نے منحرف ارکان قومی اسمبلی کے خلاف عمران خان کا ریفرنس خارج کردیا تھا۔

تحریک انصاف نے 19 ارکان قومی اسمبلی کی ڈی سیٹنگ کے لیے سپریم کورٹ میں اپیلیں دائر کیں۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

راولپنڈی عدالت نے بھی عمران ریاض خان کیس کا فیصلہ سنا دیا

راولپنڈی: عدالت نے عمران ریاض خان کیس کا فیصلہ سناتے ہوئےپیکا آرڈیننس کے تحت لگائی گئی دفعات خارج کر دیں۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

راولپنڈی عدالت نے بھی عمران ریاض خان کیس کا فیصلہ سنا دیا

راولپنڈی میں ایف آئی اے کی خصوصی عدالت کے مجسٹریٹ محمد پرویز خان نے سینئر صحافی عمران ریاض خان کیس کا محفوظ فیصلہ سناتے ہوئے کہا عمران ریاض پر ایف آئی اے کا کوئی کیس نہیں بنتا۔

اسپیشل مجسٹریٹ راولپنڈی نے سینئر اینکر پرسن پر پیکا آرڈیننس کے تحت لگائی گئی دفعات خارج کرتے ہوئے کیس واپس اٹک عدالت کو بھیج دیا ہے۔

مجسٹریٹ محمد پرویز خان نے کہا کہ یہ کیس اِس عدالت کے دائرہ اختیار میں نہیں، عمران ریاض کی ضمانت یا مقدمہ خارج کرنےکا فیصلہ اٹک عدالت کرسکتی ہے،خصوصی عدالت نے عمران ریاض خان کو آج ہی اٹک کی عدالت میں پیش کرنےکا حکم جاری کیا ہے۔

اس سے قبل خصوصی عدالت کے مجسٹریٹ پرویز خان کا کہنا تھا کہ میں ایف آئی اے کا مجسٹریٹ ہوں، مجھے جج کی کرسی اللہ نے دی ہے، جب تک وہ چاہےگا میں اس کرسی پرہوں۔

یاد رہے کہ سینئر اینکر پرسن عمران ریاض خان کو گزشتہ روز اٹک پولیس نے گرفتار کیا تھا، پولیس کا کہنا تھا کہ عمران ریاض کےخلاف اٹک میں ایف آئی آر درج ہے۔

پولیس کی جانب سے عمران ریاض خان کو اٹک کی مقامی عدالت میں پیش کیا گیا جس پر مقامی عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا تھا کہ یہ کیس عدالت کے دائرہ اختیار میں نہیں آتا، پولیس ملزم کو راولپنڈی کی متعلقہ عدالت میں پیش کرے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

لاہور ہائی کورٹ نے حلیم عادل شیخ کی گرفتاری غیرقانونی قرار دے دی

لاہور:صوبائی عدالت نے رہنما پاکستان تحریک انصاف حلیم عادل شیخ کی گرفتاری کوغیرقانونی قرار دے دیا ہے۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

لاہور ہائی کورٹ نے حلیم عادل شیخ کی گرفتاری غیرقانونی قرار دے دی

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائی کورٹ  نے رہنما پاکستان تحریک انصاف اور سندھ اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر حلیم عادل شیخ کی گرفتاری  کوغیرقانونی قرار دیتے ہوئے 18 جولائی تک حفاظتی ضمانت بھی منظور کر لی۔

لاہور ہائی کورٹ نے فیصلہ میں کہا کہ حلیم شیخ کی گرفتاری سے متعلق عدالت میں کوئی لیٹر پیش نہیں کیا گیا،حلیم عادل شیخ کو فوری رہا کیا جائے،جسٹس علی باقر نجفی نے حلیم عادل شیخ کی رہائی کا حکم جاری کیا۔

جسٹس علی باقر نجفی نے استفسار کیا کہ کوئی ایسا کاغذ ہے جس سے پتہ چلے کہ یہ تفتیشی ٹیم ہے جو گرفتار کرنے آئی ہے، مجھے کوئی ڈاکومنٹ نظر نہیں آ رہا۔

فیصلہ میں کہا گیا کہ اس میں کوئی شک نہیں رہنما تحریک انصاف کیخلاف مقدمہ درج کیا گیا مگر گرفتاری غیر قانونی ہے، عدالت کو مکمل اختیار ہے کہ اگر کسی کی گرفتاری غیر قانونی طور پر کی گئی ہے تو اسے آزاد کرے۔

واضح رہے کہ سندھ اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حلیم عادل شیخ کو لاہور کے ہوٹل سے گزشتہ رات گرفتار کیا گیا تھا، ان پر سرکاری زمین کے جھوٹے کاغذات بنانے کا الزام تھا۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll