جی این این سوشل

پاکستان

مفتی رفیع عثمانی کی نماز جنازہ کل ادا کی جائے گی : مفتی تقی عثمانی

کراچی : صدر جامعہ دارالعلوم کراچی مفتی رفیع عثمانی کی نماز جنازہ کل بروز اتوار  یعنی 20 نومبر کو ادا کی جائے گی۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

مفتی رفیع عثمانی کی نماز جنازہ کل ادا کی جائے گی : مفتی تقی عثمانی
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

تفصیلات کے مطابق مفتی تقی عثمانی کا کہنا ہے کہ مفتی مولانا رفیع عثمانی کی نماز جنازہ 9 بجے دارالعلوم کورنگی میں ادا کی جائے گی۔

وفاق المدارس العریبیہ پاکستان سے جاری بیان کے مطابق نماز جنازہ کے بعد جامعہ دارالعلوم کراچی کے قبرستان میں تدفین عمل میں لائی جائے گی۔

ممتاز عالم دین مفتی رفیع عثمانی انتقال کرگئے

واضح رہے کہ گزشتہ روزصدر جامعہ دارالعلوم کراچی مفتی رفیع عثمانی طویل علالت کے بعد کراچی میں انتقال کرگئے تھے، اُن کی عمر 86 برس تھی۔

مرحوم، مفتی تقی عثمانی کے بڑے بھائی، جامعہ دارالعلوم کراچی کے صدر اور دارالمدارس العربیہ کے سرپرست اعلیٰ بھی تھے۔

مفتی رفیع عثمانی کی تعلیم اور خدمات

مفتی محمد رفیع عثمانی و فاق المدارس العربیہ پاکستان کے نائب صدر ، کراچی یونیورسٹی اور ڈاو یونیورسٹی کے سنڈیکیٹ ممبر، اسلامی نظریاتی کونسل، رویت ہلال کمیٹی اور زکوۃ و عشر کمیٹی سندھ کے ممبر اور سپریم کورٹ آف پاکستان اپیلٹ بنچ کے مشیر بھی رہے ہیں۔ 

تحریک ختم نبوتؐ، دفاع صحابہ ،مذہبی سیاسی تحریکوں میں نمایاں کردار رہا ہے۔ جمعہ کو وہ دارلعلوم کراچی میں خالق حقیقی سے جاملے۔ مفتی اعظم پاکستان مفتی محمد رفیع عثمانی 21 جولائی 1936ء میں ہندوستان کے صوبہ اُترپردیش کے ضلع سہارنپورؔ کے مشہور قصبہ دیوبندؔ میں تحریک پاکستان کے سرکردہ رہنماء مفتی اعظم محمد شفیع عثمانی رحمہ اللہ کے گھرپیدا ہوئے،ابتدائی تعلیم اور حفظ قرآن کا آغاز دارلعلوم دیوبند سےکیا۔

 1947میں خاندان کے ہمراہ ہجرت کرکے پاکستان آئے تو آپ کی عمر 12سال تھی،1948میں مسجد باب السلام آرام باغ کراچی سے حفظ قرآن کی تعلیم مکمل کی۔

1951 میں اپنے والد کی قائم کردہ دینی درسگاہ جامعہ دارالعلوم کراچی نانک واڑہ سے درس نظامی کی تعلیم کےلئے داخلہ لیا ،آپ کا شمار دارالعلوم کے اولین طلبا میں ہوتاہے، جہاں سے 1960ء میں عالم فاضل ، مفتی کی تعلیم مکمل کرنے کے ساتھ پنجاب یونیورسٹی سے فاضل عربی کی ڈگری حاصل کی ۔

جامعہ دارالعلوم کراچی سےہی تدریس کا آغاز کیا، 1971میں دارالافتاء اور دارالحدیث کی ذمہ داریاں آپ کے سپرد ہوئی اور 1976میں مفتی شفیع رحمہ اللہ کے انتقال سے دارالعلوم کے انتظام وانصرام آپ کے کندھوں پر آیا، آپ کی شبانہ روز انتھک جدوجہد ہے کہ دارالعلوم کاشمارچآج پاکستان کی منفرد ، منظم بڑی جامعات میں ہوتاہے۔

 1995 ءمفتی اعظم ولی حسن ٹونکی رحمہ اللہ کے انتقال ہوا تو اعلیٰ ترین علمی خدمات پر مشاہیر علما کرام نے مفتی اعظم پاکستان کا عہدہ آپ کےسپرد کردیا اورہر موقع پرآپ نے قوم کی بھرپور رہنمائی فرمائی ، آپ ایک نابغہ روزگار علمی شخصیت ،ملک وملت کےلیے علمی اور سماجی گراں قدر خدمات ہیں۔

آپ نے  2درجن سے زائد ضخیم تحقیقی ، علمی و اصلاحی کتب اور دیگر شہ کارکتب تصنیف فرمائی، جن میں اختلاف رحمت، فرقہ بندی حرام،دو قومی نظریہ ،فقہ میں اجماع کا مقام ،یورپ کا جاگیرداری،سرمایہ داری اور اشتراکی نظام کا تاریخی پس منظراور مسلکِ دیوبند فرقہ نہیں اتباع سنت سمیت دیگر کتب شامل ہیں ۔

تعزیتی پیغامات

مفتی محمد رفیع عثمانی کے انتقال پرصدرمملکت، وزیراعظم اور جمعیت علمائے اسلام پاکستان کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن سمیت دیگر علمائے کرام نے دکھ اور غم کا اظہار کیا۔

اسپیکر قومی اسمبلی راجا پرویز اشرف اور ڈپٹی اسپیکر زاہد اکرم درانی نے مفتی اعظم پاکستان مفتی رفیع عثمانی کے انتقال پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کیا ہے.

وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات مریم اورنگزیب نے مفتی رفیع عثمانی کے انتقال پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ مفتی رفیع عثمانی کا انتقال ناقابل تلافی نقصان ہے، مرحوم کی دینی خدمات کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا۔

وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے ممتاز عالم دین مفتی محمد رفیع عثمانی کے انتقال پر دکھ کا اظہار کیا اور کہا کہ مفتی صاحب کا انتقال اسلام کے لیے عظیم سانحہ ہے، ان کی دینی خدمات لازوال ہیں۔

کھیل

پاکستان ورلڈ کپ کی دوڑ سے باہر

پہلے میچ میں امریکا نے ہرایا، ڈیلس میں جہاں دنیا کا بہترین بولنگ اٹیک کی دعوی دار ٹیم 159 رنز کا دفاع کرنے میں ناکام رہی

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

پاکستان ورلڈ کپ کی دوڑ سے باہر

آئی سی سی ٹی20 ورلڈ کپ 2024ء کا 30واں اور گروپ اے میں امریکا اور آئرلینڈ کا اہم ترین بارش کی وجہ سے منسوخ کردیا گیا۔

امریکا اور آئرلینڈ کا میچ بلا نتیجہ ختم ہونے کے بعد پاکستان کرکٹ ٹیم کا میگا ایونٹ سے واپسی کا ٹکٹ کٹ گیا ، امید کی کرن بھی بارش کے پانی سے بجھ گئی، پاکستان کرکٹ ٹیم کا ٹی20 ورلڈ کپ 2024 میں سفر ختم ہوگیا۔

امریکا اور آئرلینڈ کا میچ بارش کی نذر کیا ہوا، تمام پاکستانیوں کا چہرہ اتر گیا، میگا ایونٹ میں ٹیم پاکستان کی کہانی 3 میچز کھیل کر ہی تمام ہوگئی ، لاڈر ہل میں بارش کا پانی پاکستان ٹیم امیدوں کا بہا کر لے گیا، امریکا کی ٹیم گروپ اے سے بھارت کے ساتھ سپر ایٹ مرحلے میں پہنچ گئی، اب پاکستان کا آئرلینڈ سے اتوار کو ہونے والا میچ رسمی کارروائی بن کر رہ گیا۔

ٹی 20 ورلڈ کپ میں پہلے ہی میچ سے ٹیم پاکستان نے ایسا کھیل کھیلا کہ ہر طرف سے اس پر طنز کے تیر برستے رہے۔

پہلے میچ میں امریکا نے ہرایا، ڈیلس میں جہاں دنیا کا بہترین بولنگ اٹیک کی دعوی دار ٹیم 159 رنز کا دفاع کرنے میں ناکام رہی۔

شاہین ہوں، شاداب یا حارث حریف بیٹرز نے خوب مار لگائی، ٹائی میچ کا سپر اوور بہت تجربہ کار بولر محمد عامر سے کروایا گیا، جو گیند کو کنٹرول ہی نہ کر پائے، ایک دو نہیں 3 وائیڈ گیندیں کیں اور 18 رنز دیے۔

پھر افتخار، شاداب اس ہدف کو نہ پا سکے، فخر دوسرے اینڈ پر تماشا دیکھتے رہ گئے، اوور مکمل ہوا امریکیوں کا جشن شروع ہوگیا۔

دوسرے میچ میں روایتی حریف بھارت کے خلاف پاکستان کے بولرز چلے تو بلے باز ایکسپوز ہو گئے، کیا بابر، کیا فخر، عثمان، عماد، شاداب کسی کی نہ چلی، 120 رنز کا ہدف بھی پار نہ لگا سکے۔

پڑھنا جاری رکھیں

تجارت

اچانک پیٹرول کی قیمتوں میں 10 روپے سے زائد کمی

واضح رہے کہ ان قیمتوں میں کمی وزیر اعظم آفس کی جانب سے کی گئی ہے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

اچانک پیٹرول کی قیمتوں میں 10 روپے سے زائد کمی

حکومت پاکستان کی جانب سے پیٹرول کی قیمت میں 10 روپے 20 پیسے کمی کر دی گئی ہے جبکہ ڈیزل کی قیمت میں بھی 2 روپے 33 پیسے کمی کی گئ ہے ۔ 

واضح رہے کہ ان قیمتوں میں کمی وزیر اعظم آفس کی جانب سے کی گئی ہے ۔ 

 

پڑھنا جاری رکھیں

علاقائی

ڈاکٹر محمد یوسف کی تصنیف ریسرچ اور تہذیب کے لیے اہم سنگ میل ہے،صوبائی وزیر تعلیم

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے صوبائی وزیر تعلیم رانا سکندر حیات نے کہا کہ اس کتاب کی صورت میں ڈاکٹر یوسف بشیر نے گلوبل ساؤتھ کی ثقافتی تاریخ کو محفوظ کردیا ہے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

ڈاکٹر محمد یوسف کی تصنیف ریسرچ  اور تہذیب کے لیے اہم سنگ میل ہے،صوبائی وزیر تعلیم


لاہور : ڈاکٹر محمد یوسف کی تصنیف ریسرچ ،ثقافت اور تہذیب کے لیے اہم سنگ میل ہے ۔ 
ڈاکٹر شاہد منیر نے کہا کہا کہ یہ تحقیقی کام قابل ستائش ہے اور عالمی جنوبی خطے کے اسکالرز کے لیے مشعل راہ ہے ۔
معروف محقق ،استاد اور میڈیا سکالر پروفیسر ڈاکٹر محمد یوسف بشیر کی تدوین کردہ کتاب ،،دی کنسٹرکشن آف کلچر اینڈ کمیونیکیشن ان گلوبل ساؤتھ کی تعارفی تقریب قاسم علی شاہ فاؤنڈیشن میں منعقد ہوئی ۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے صوبائی وزیر تعلیم رانا سکندر حیات نے کہا کہ اس کتاب کی صورت میں ڈاکٹر یوسف بشیر نے گلوبل ساؤتھ کی ثقافتی تاریخ کو محفوظ کردیا ہے ۔اس طرح کے تحقیقی کام کی ہرصورت میں بھرپور حوصلہ افزائی کی جانی چاہئے ۔ پروفیسر ڈاکٹر شاہد منیر چئیر پرسن پنجاب ہائیر ایجوکیشن کمیشن نے اپنے خطاب میں ڈاکٹر محمد یوسف کے تخلیقی کام کو سراہا اور اس کتاب کو عالمی جنوبی خطے کے اساتذہ اور طلبہ کے لیے اہم دستاویز اور سنگ میل قرار دیا ۔

پروفیسر ڈاکٹر نوشینہ سلیم ڈائریکٹر انسٹیٹیوٹ آف کمیونیکیشن نے اپنے خطاب میں کہا کہ انہیں فخر ہے کہ صاحب کتاب ان کے شاگردوں میں سے ہیں ۔کاشف منظور ڈائریکٹر جنرل پبلک لائبریز نے کہا کہ پروفیسر ڈاکٹر محمد یوسف بشیر کی کاوش لائق تحسین اور اس کے زریعے بہت سے مسائل کا حل مل سکتا ہے ۔پروفیسر ڈاکٹر زاہد بلال نے کہا کہ آج ہمیں اپنے کلچر اور اقدار سے جڑنے کی ضرورت ہے ۔

کتاب کے ایڈیٹر ڈاکٹر محمد یوسف نے کہا   کی ہم نے اس کتاب میں مغرب کے برعکس دوسرے ممالک میں تخلق ہونے والے علم اور اسکی تدوین کا خلاصہ بیان کرنے کی کوشش کی ہے۔ کا مرزا محمد یسین بیگ نے کہا کہ ایسی کتب سے مقامی منظر نامے کو سمجھنے میں مدد ملے گی ۔دیگر مقررین میں ڈاکٹر مبینہ افتخار  نے اپنی پی ایچ ڈی ڈگری کے سفر کا تذکرہ  کرتے ہرے بتایا کہ ڈاکٹر محمد یوسف نے انکے زندگی کو تبدیل کر کے رکھ دیا ہے۔ ڈاکٹر مرتضی عاشق نے کہا یہ کتاب پاکستان میں اساتذہ اور طلبا کے لیے ریفریس کا کام کرے گئی۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll