جی این این سوشل

پاکستان

کراچی کے لوگوں کو سڑکوں پر لائیں گے: مصطفی کمال

متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) پاکستان کے رہنما مصطفیٰ کمال نےکہا ہےکہکراچی کے لوگوں کو سڑکوں پر لائیں گے۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

کراچی کے لوگوں کو سڑکوں پر لائیں گے: مصطفی کمال
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) پاکستان کے رہنما مصطفیٰ کمال نےکہا ہےکہ فروری کے پہلے ہفتے میں احتجاج کی تیاری شروع کردی ہے،کراچی کے لوگوں کو سڑکوں پر لائیں گے۔

کراچی میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مصطفیٰ کمال کا کہنا تھا کہ کراچی سمیت سندھ کے شہری علاقوں کے شہری سوال پوچھ رہے ہیں، جو کچھ یہاں ہو رہا ہے پورے پاکستان میں کہیں نہیں ہو رہا، یہاں آبادی کو کم گنا جا رہا ہے، 98 لاکھ کی آبادی میں مردم شماری کے مطابق 209 حلقے تھے تو ایک کروڑ 60 لاکھ کی آبادی پر دگنے حلقے ہونے چاہیے تھے۔

مصطفیٰ کمال کا کہنا تھا کہ آبادی 100 فیصد بڑھنے پر نشستیں 38 بڑھائی گئیں، آج ہم سوال کرتے ہیں ہم کس درجے کے پاکستانی ہیں؟ کیا آبادی کم گننا اور نمائندگی کم کرنے  سے ملک کی خدمت ہوئی؟ “کراچی سب کا” بینر لگانے سے کچھ نہیں ہوتا، آصف زرداری حالات کو کیوں نہیں دیکھ رہے؟ بلاول اگر وزیراعظم بنتے ہیں تو کیا وہ چاہیں گے کراچی حیدرآباد والے ان کے خلاف ہوں۔

ایم کیوایم رہنما کا کہنا تھا کہ سندھ حکومت نےتسلیم کیا کہ 53 حلقےکم ہیں، اتنی نشستوں پر پورا شہر بن جاتا ہے، حلقہ بندیاں ختم ہونے کے بعد الیکشن جعلی ہیں۔

کھیل

ورلڈ چیمپیئنز شپ آف لیجینڈز کافائنل آج پاکستان بھارت کے خلاف کھیلے گا

ورلڈ چیمپیئنز شپ آف لیجینڈز 3 جولائی 2024 کو برطانیہ میں شروع ہوئی جس میں دنیا بھر کے مایہ ناز سابق کرکٹرز نے اپنے اپنے ملک کی نمائندگی کی

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

ورلڈ چیمپیئنز شپ آف لیجینڈز کافائنل آج پاکستان بھارت کے خلاف کھیلے گا

 

 ورلڈ چیمپیئنز شپ آف لیجینڈز 2024 میں آج 13 جولائی کو دو روایتی حریف ٹیمیں پاکستان اور بھارت آپس میں ٹکرائیں گی۔ آج بروز ہفتہ پاکستان اور بھارت کے مابین ورلڈ چیمپیئنز شپ آف لیجینڈز 2024 کا فائنل کھیلا جائے گا۔  
تفصیلات کے مطابق ورلڈ چیمپیئنز شپ آف لیجینڈز 2024 کا فائنل میچ پاکستانی وقت کے مطابق آج رات  9 بجے شروع کیا جائے گا، جس میں پاکستان اور بھارت کے مایہ ناز ریٹائرڈ کرکٹرز میدان میں کھیلتے نظر آئیں گے۔ ورلڈ چیمپیئنز شپ کا فائنل میچ برطانیہ کے شہر برمنگھم میں کھیلا جائے گا۔
پاکستان کرکٹ ٹیم میں کپتان یونس خان  سمیت، وکٹ کیپر کامران اکمل، شرجیل خان، صہیب مقصود، شعیب ملک، شاہد آفریدی، عامر یامین، مصباح الحق، وہاب ریاض، سہیل تنویر، سہیل خان، سعید اجمل، عمر اکمل، تنویر احمد ، یاسر عرفات، محمد حفیظ، توفیق عمراور  عبدالرزاق شامل ہوں گے۔ 
دوسری جانب بھارت کی جانب سے ٹیم کی نمائندگی روہت شرما کریں گے، جبکہ ٹیم میں رابن اتھپا، نمن اوجھا، سریش رائنا، گورکیرت سنگھ مان، عرفان پٹھان، یوسف پٹھان، ونے کمار، ہربھجن سنگھ، دھول کلکرنی، آر پی سنگھ، راہول شکلا، سوربھ تیواری، انوریت سنگھ، امباتی رائیڈو، پون نیگی اور راہول شرما شامل ہوں گے۔  
واضح رہے کہ ورلڈ چیمپیئنز شپ آف لیجینڈز 3 جولائی 2024 کو برطانیہ میں شروع ہوئی جس میں دنیا بھر کے مایہ ناز سابق کرکٹرز نے اپنے اپنے ملک کی نمائندگی کی۔ اپنے وقت کے بڑے نام ورلڈ چیمپیئنز شپ آف لیجینڈز کے تحت کرکٹ گراؤنڈز میں بین الاقوامی سطح کے کرکٹ میچوں میں کھیلتے نظر آئے۔ کرکٹ شائقین نے ورلڈ چیمپیئنز شپ آف لیجینڈز کو مجموعی طور پرحد درجہ پسند کیا۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

عدت نکاح کیس میں  عمران خان اور بشری بی بی کی سزائیں کالعدم، بری کرنے کا حکم

عدالت نے سابق وزیر اعظم اور ان کی اہلیہ کے خلاف عدت نکاح کیس میں سزا کے خلاف اپیلیں منظور کرتے ہوئے ان کی7،7سال قیدکی سزائیں معطل کردیں

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

عدت نکاح کیس میں  عمران خان اور بشری بی بی کی سزائیں کالعدم، بری کرنے کا حکم


اسلام آباد کی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن عدالت نے سابق وزیر اعظم عمران خان اور ان کی اہلیہ بشریٰ بی بی کے خلاف عدت نکاح کیس میں محفوظ فیصلہ سنا دیا۔

عدالت نے سابق وزیر اعظم عمران خان اور ان کی اہلیہ بشریٰ بی بی کے خلاف عدت نکاح کیس میں سزا کے خلاف اپیلیں منظور کرتے ہوئے ان کی7،7سال قیدکی سزائیں معطل کردیں۔

عدت نکاح کیس میں سزا کیخلاف اپیلوں پر سماعت ایڈیشنل اینڈ سیشن جج افضل مجوکا نے کی، خاور مانیکا کے وکیل زاہد آصف ایڈووکیٹ اور عمران خان کے وکیل عمران صابر، مرتضیٰ طوری، زاہد ڈار عدالت میں پیش ہوئے۔

وکیل زاہد آصف نے مؤقف اپنایا کہ اگر ملزمان کوئی مزید شواہد پیش کرنا چاہتے ہیں ، تو پیش کر سکتے ہیں، ہمیں کوئی اعتراض نہیں، مزید کہنا تھا کہ کسی بھی پارٹی سے ان کے فقہ کے بارے میں نہیں پوچھا گیا۔

وکیل زاہد آصف نے دلائل دیے کہ مفتی سعید نے بھی نہیں کہا کہ ملزمان حنفی فقہ سے ہیں، سلمان اکرم راجہ کہتے ہیں کہ ان کے کلائنٹ بانی پی ٹی آئی عمران خان نے شادی کی ہے انہیں عدت کے بارے میں علم نہیں۔

وکیل زاہد آصف کا کہنا تھا کہ تمام تر ذمہ داری بشری بی بی کے کندھوں پر منتقل کی جارہی ہے، شوہر عورت کی قربانیوں کو سائیڈ پر رکھ کر کہہ رہا ہے میں نے کچھ نہیں کیا، خاتون مشکل وقت میں خاوند کے ساتھ کھڑی رہی۔

وکیل زاہد آصف نے دلائل جاری رکھتے ہوئے کہا کہ ایک لیڈر سے ایسی توقع نہیں کی جاسکتی، بیوی بنی گالہ کی آسائش چھوڑ کر اڈیالہ جیل تک چلی گئی، ایسے ہو ہی نہیں سکتا اگر شادی ہوئی تو دونوں ذمہ دار ہیں۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بشری بی بی کی جانب سے کہا گیا کہ اپریل 2017 میں زبانی طلاق دی گئی، اگر خاتون کہتی ہے کہ اسے زبانی طلاق دی گئی تو کیا اس کی زبانی بات پر اعتبار کیا جائے گا، زبانی طلاق کی کوئی حیثیت نہیں ہے اس حوالے سے عدالتی فیصلے موجود ہیں، قانون کہتا ہے دستاویزی ثبوت زبانی بات پر حاوی ہو گا۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بشری بی بی نے کس بیان میں کہا شادی عدت کے دوران نہیں ہوئی، مفتی سعید نے بشری بی بی کی بہن کے کہنے پر کہ شادی کے لوازمات پورے ہیں نکاح پڑھوایا، کسی جگہ بشری بی بی نے مفتی سعید کو نہیں کہا کہ انکی عدت پوری ہے ، جس بہن نے عدت پوری ہونے کا کہا اسے پھر بطور گواہ لایا جاتا۔

جج افضل مجوکا نے کہا کہ پراسیکوشن کی ڈیوٹی ہے کہ وہ ثابت کرے کہ عدت پوری نہیں، 16وکیل زاہد آصف نے کہا کہ جنوری 2024 کو بشری بی بی پر فرد جرم عائد ہوئی اور صحت جرم سے انکار کیا، بشری بی بی نے نہیں کہا کہ انھوں نے عدت مکمل ہونے پر شادی کی، بانی پی ٹی آئی کا بیان پر فرد جرم عائد ہوئی، جس کے جواب میں بانی پی ٹی آئی نے کہا کہ یہ جھوٹا کیس ہے اور لندن پلان کا حصہ ہے اور اس کا مقصد پارٹی کا ختم کرنا اور سافٹ ویئر اپ ڈیٹ کرنا ہے۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بانی پی ٹی آئی نے بھی کہیں نہیں کہا کہ انھوں نے عدت مکمل ہونے پر شادی کی، اگر ٹرائل کورٹ میں کوئی غیر قانونی کام ہوا تو کیا کیس ریمانڈ بیک کروانا چاہتے ہیں۔

وکیل عثمان گل نے کہا کہ ہم کیس ریمانڈ بیک نہیں بلکہ ہائی کورٹ کی ٹائم لائن کے مطابق اپیلوں پر فیصلہ چاہتے ہیں۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بشری بی بی کا کوئی بیان دکھا دیں جس میں کہا گیا ہو کہ عدت مکمل کرنے پر شادی کی، پوری کیس فائل میں ایسا بیان موجود نہیں، بطور گواہ عدالت میں پیش ہونے سے بھی دونوں ملزمان نے انکار کیا، بانی پی ٹی آئی اور بشری بی بی اس کیس میں بہترین گواہ تھے۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بانی پی ٹی آئی اور بشری بی بی حلف پر اپنے حق میں گواہی دیتے، طلاق ڈیڈ پر ٹمپرنگ کا کہا گیا مگر شواہد پیش نہیں کیے گئے، ہم مطمئن ہیں کہ طلاق ڈیڈ پر کوئی ٹمپرنگ نہیں، اپریل میں کوئی طلاق نہیں دی نومبر 2017 خاور مانیکا نے تحریری طلاق دی۔

انہوں نے مؤقف اپنایا کہ قرآن پاک میں ہے دوران عدت رجوع کرنے کا حق اور عدت مکمل ہونے پر دوسری شادی کی اجازت دی گئی، عدت کے دوران دوسری شادی کا فیصلہ بھی نہیں کیا جا سکتا، اسلام کہتا ہے کہ اکٹھی تین طلاقوں کو ایک تصور کیا جائے گا، خاور مانیکا نے کہیں نہیں کہا کہ وہ فقہ حنفی سے ہیں وہ بطور مسلمان عدالت میں پیش ہوئے ہیں۔

وکیل زاہد آصف کا کہنا تھا کہ جب تک عدت مکمل نہیں ہوتی خاتون طلاق دینے والے کی بیوی ہی تصور گی۔

بعد ازاں محفوظ فیصلہ جاری کرتے ہوئے عدالت نے دورانِ عدت نکاح کیس میں سزا کیخلاف مرکزی اپیلیں منظور کرتے ہوئے عمران خان اور ان کی اہلیہ کی7،7سال قیدکی سزائیں کالعدم قرار دے دیں۔

عدالت نے بانی پی ٹی آئی اور سابق خاتون اول کو بری کرنے کا حکم دیا ور کہا کہ کسی دوسرے مقدمے میں مطلوب نہیں تو فوری رہا کیا جائے۔

جج افضل مجوکا نے بانی پی ٹی آئی اور بشریٰ بی بی کی رہائی کی روبکار جاری کردیے، عدالت نے کہا کہ میڈیکل بورڈ اور علماء کی رائے سے متعلق دونوں درخواستیں مسترد کی جاتی ہیں۔

پڑھنا جاری رکھیں

دنیا

جنگلی ہاتھی کا جنگل میں رحم دلی کا مظاہرہ ، ہاتھی  شیرنی کے بچوں پر حملہ کرنے سے گریزاں 

ہاتھی کو دیکھ کر شیرنی نے بدحواسی میں اپنے چھوٹےبچوں سمیت  بھاگنا شروع کیا، مگر بدقسمتی سے شیرنی کے بچے پیچھے رہ گئے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

جنگلی ہاتھی کا جنگل میں رحم دلی کا مظاہرہ ، ہاتھی  شیرنی کے بچوں پر حملہ کرنے سے گریزاں 

ایک جنگلی ہاتھی نے جنگل کے قانون میں انسانیت کی شق متعارف کروا دی۔  شیرنی کے بچوں کو تنہا دیکھتے ہوئے ایک جنگلی ہاتھی  حملہ کرنے سے پیچھے ہٹ گیا۔   
تفصیلات کےمطابق ایک سوشل میڈیا صارف نے ایک ویڈیو شیئر کی، جس میں ایک شیرنی اپنے بچوں کے ساتھ جنگل میں چہل قدمی کر رہی تھی۔ اچانک ایک بڑے ہاتھی نے شیرنی کو اس کے بچوں سمیت  دیکھ لیا۔ ہاتھی، شیرنی کو دیکھ کر شیرنی کی جانب لپکا۔ ہاتھی کے اچانک حملے سے شیرنی بدحواس ہو گئی۔ 
ہاتھی کو دیکھ کر شیرنی نے بدحواسی میں اپنے چھوٹےبچوں سمیت  بھاگنا شروع کیا، مگر بدقسمتی سے شیرنی کے بچے پیچھے رہ گئے۔ 
ہاتھی نے شیرنی کا تعاقب کیا، مگر شیرنی تب تک دور جا چکی تھی۔ 
شیرنی تو ہاتھی کی پہنچ سے دور نکل گئی، مگر شیرنی کے بچے ہاتھی کی دسترس میں آگئے۔ 
عین اسی لمحے ایک حیرت انگیز بات یہ ہوئی کہ ہاتھی نے شیرنی کے تنہا بچوں پر حملہ نہیں کیا اور واپس پلٹ گیا۔ 
جنگل کے ایک جنگلی جانور نے چھوٹے بچوں پر حملہ نہ کر کے  انسانیت کا اعلیٰ درس دے دیا۔ انسانی معاشرے کے لیے اس واقعے میں ایک بڑا درس ہے۔ انسانی معاشرے میں بچوں کے ساتھ انسانیت سوز واقعات اکثر رپورٹ ہوتے رہتے ہیں۔   

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll