جی این این سوشل

دنیا

امریکا کی افغانستا ن کے فوجی انخلاء کی تاریخ میں توسیع کے معاملے پر طالبان کا رد عمل

ترجمان طالبان کا کہنا ہے کہ تمام غیرملکی فوجیں دوحہ معاہدے میں مقرر کردہ تاریخ تک افغانستان سے نکل جائیں۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

امریکا کی افغانستا  ن کے فوجی انخلاء کی تاریخ میں توسیع  کے معاملے پر طالبان کا رد عمل
امریکا کی افغانستا ن کے فوجی انخلاء کی تاریخ میں توسیع کے معاملے پر طالبان کا رد عمل

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکہ کی جانب سے افغانستان کے فوجی انخلاء کی تاریخ میں توسیع کے معاملے پر  طالبان کا ردِ عمل سامنے آگیا۔ ترجمان طالبان کا کہنا ہے کہ  تمام غیرملکی فوجیں دوحہ معاہدے میں مقرر کردہ تاریخ تک افغانستان سے   نکل جائیں، دوحہ معاہدے کی خلاف ورزی اور مقرر کردہ تاریخ کے بعد افغانستان میں غیرملکی افواج کا قیام مسائل کا سبب بنےگا۔ا

ترجمان طالبان کا کہنا ہے کہ  ان مسائل کا ذمہ دار دوحہ معاہدے کی خلاف ورزی کرنیوالے ہوں گے۔

واضح رہے کہ امریکا کی جانب سے 11ستمبر تک افغانستان سے تمام فوجی اہلکار نکالنے کا اعلان کیاگیاہے۔نیٹو نے بھی امریکہ کیساتھ ہی افغانستان سے اپنی فوج نکالنے کا اعلان کیاہے۔

یاد رہے کہ 29 فروری 2020 کو قطر کے دارالحکومت دوحہ میں امریکہ اور افغان طالبان کے مابین تاریخی معاہدہ طے پایا تھا۔جس کے بعد یہ امید کی جارہی تھی کہ اس سے گذشتہ کئی برسوں سے شورش کے شکار ملک افغانستان میں امن کی راہیں کھلیں گی۔

 اس معاہدے میں یہ طے پایا تھا کہ نہ صرف امریکہ مئی 2021 تک اپنی فوجوں کا انخلا کرے گا بلکہ امریکہ اور طالبان، افغان فریقین کے مابین مذاکرات سے پہلے ہزاروں قیدیوں کا تبادلہ کریں گے۔

دوسری جانب طالبان بھی وعدہ کر چکے ہیں کہ وہ شدت پسندوں کو افغانستان میں سرگرم نہیں ہونے دیں گے۔

پاکستان

کمشنر ملتان محمد عامر خٹک کمشنر راولپنڈی تعینات

سابق کمشنر راولپنڈی لیاقت چٹھہ نے یہ الزامات عائد کیے تھے کہ 8 فروری کو راولپنڈی کے حلقوں میں 70 ، 70 ہزار کی لیڈ سے جیتنے والے امیدواروں کو ہرایا اور ہارے ہوئے امیدواروں کوجتوایا گیا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

کمشنر ملتان محمد عامر خٹک کمشنر  راولپنڈی تعینات

کمشنر ملتان محمد عامر خٹک کا تبادلہ کرکے انہیں کمشنر راولپنڈی تعینات کر دیا گیا اور سیکریٹری آئی اینڈ سی مریم خان کا تبادلہ کر کے  کمشنر ملتان تعینات کر دیا گیا ہے۔

سابق کمشنر راولپنڈی لیاقت چٹھہ نے یہ الزامات عائد کیے تھے کہ 8 فروری کو راولپنڈی کے حلقوں میں 70 ، 70 ہزار کی لیڈ سے جیتنے والے امیدواروں کو ہرایا اور ہارے ہوئے امیدواروں کوجتوایا گیا ، پیمرا کی جانب سے سابق کمشنر راولپنڈی کی پریس کانفرنس کا ٹرانسکرپٹ بھی کمیٹی کو دے دیا ہے، جبکہ آر اوز نے تحریری بیانات بھی الیکشن کمیشن کی تحقیقاتی کمیٹی کو جمع کرا دیے ہیں۔

یاد رہے کہ  اس حوالے سے الیکشن کمیشن کی تحقیقاتی کمیٹی نے راولپنڈی ڈویژن کے قومی و صوبائی اسمبلیوں کے آر اوز کے بیانات ریکارڈ کر لیے ہیں۔

 

 

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

مخلوط حکومت کسی صورت ملک نہیں چلاسکے گی ،فیصل واوڈا

سابق وزیرفیصل واوڈا  نے کہا کہ پیپلزپارٹی اس قت وِِن ون پوزیشن میں ہے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

مخلوط حکومت کسی صورت ملک نہیں چلاسکے گی ،فیصل واوڈا

فیصل واوڈا  نے کہا کہ اس کی بہت سی وجوہات ہیں کہ جس کے باعث مخلوط حکومت سے ملک نہیں چل سکتا ، انہوں نے کہا کہ ملک پاکستان نے آئی ایم ایف کو 24 ارب ڈالر ادا کرنے ہیں، پاکستان  کے پاس 2 ارب ڈالر کا ذخیرہ ہے، معاملہ کیسے چلے گا، خزانے میں کوئی خاص طاقت نہیں صرف بے چینی ہے۔

فیصل واوڈا نے کہا کہ کے پی پی ٹی آئی، بلوچستان اور سندھ پیپلزپارٹی کو اور پنجاب (ن) لیگ کوملا، سب کا زور اپنے صوبوں پر ہے، جو ایکسپائرڈ اور نااہل لیڈرہیں وہ ہمارے پاس موجود ہیں، پاکستان کو برباد کر کے آباد کرنے کا نعرہ لگا کر آرہے ہیں، وہ ابھی احمقوں کی جنت میں سوچتے ہیں کہیں اگر کوئی بحران آیا تو وفاقی حکومت گر جائے گی۔


سابق وزیرفیصل واوڈا  نے کہا کہ پیپلزپارٹی اس قت وِِن ون پوزیشن میں ہے، پی ٹی آئی کو سمجھایا تھا کہ آپ اقتدار کے اندر آجائیں، جمہوری ڈھانچے کے اندر آجائیں جبکہ عمرایوب وہاں سے ٹاٹا اور بائی بائی کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ 16 ماہ پہلے جو کر کے گئے ہیں وہ آج کیسے ٹھیک ہوگا؟ اتحادی حکومت میں میں بندر بانٹ ہوتی ہے، آپ کا ڈی سی میرا ایس پی، آپ کا ایس پی میرا ڈی سی، یہ سب چیزیں اسٹریم لائن ہو رہی ہیں۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

بلوچستان میں تین پارٹیوں کی مخلوط حکومت بننے گی

وزیر اعلیٰ بلوچستان کا تعلق پیپلز پارٹی سے ہو گا جبکہ سینئر وزراء کا تعلق مسلم لیگ ن سے ہوگا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

بلوچستان میں تین پارٹیوں کی مخلوط حکومت بننے گی

کوئٹہ: پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) اور پاکستان مسلم لیگ (ن) کے درمیان وفاقی حکومت سازی کے معاملات پر اتفاق ہونے کے بعد اب بلوچستان میں صوبائی حکومت کے خدوخال بھی واضح ہونا شروع ہوگئے ہیں۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق بلوچستان میں پیپلز پارٹی، مسلم لیگ ن اور بلوچستان عوامی پارٹی (بی اے پی) پر مشتمل تین جماعتی مخلوط حکومت بنے گی۔

اطلاعات کے مطابق جمعیت علمائے اسلام (جے یو آئی)، نیشنل پارٹی، بلوچستان نیشنل پارٹی (بی این پی) اور بی این پی عوامی کے اپوزیشن میں بیٹھنے کا امکان ہے۔

اطلاعات میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ ایک سے دو روز میں حکومت سازی کے معاملات کو حتمی شکل دینے کے بعد وزیر اعلیٰ کے نام کا اعلان کر دیا جائے گا۔

وزیر اعلیٰ بلوچستان کا تعلق پیپلز پارٹی سے ہو گا جبکہ سینئر وزراء کا تعلق مسلم لیگ ن سے ہو گا۔

گورنر بلوچستان کی تقرری مسلم لیگ (ن) سے کی جائے گی جب کہ اسپیکر اسمبلی بھی مسلم لیگ (ن) سے اور ڈپٹی اسپیکر بی اے پی سے ہوگا۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll