جی این این سوشل

پاکستان

اختلاف کو چھوڑ کر ملک کیلئے سوچنا چاہیے: چیف جسٹس

چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا ہے کہ قانون کی بالادستی ہر حال ہونی چاہیے، ملکی حالات کیلئے اختلاف کو چھوڑ کر ملک کے لیے سوچنا چاہیے۔ قانون اور عدالتوں کا احترام ہونا چاہیے۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

اختلاف کو چھوڑ کر ملک کیلئے سوچنا چاہیے: چیف جسٹس
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا ہے کہ قانون کی بالادستی ہر حال ہونی چاہیے، ملکی حالات کیلئے اختلاف کو چھوڑ کر ملک کے لیے سوچنا چاہیے۔ قانون اور عدالتوں کا احترام ہونا چاہیے۔

کوئٹہ میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس عمر عطا بندیال کا کہنا تھا کہ کوئٹہ میں نئی عمارت کے قیام سے حصول انصاف میں بہتری آئیگی، اللہ ہم سے حق، آئین اور قانون کے مطابق فیصلے کروائے، عمارت کی کوئی اہمیت نہیں ہوتی، انصاف کی فراہمی بنیاد ہے۔

اپنی بات کو جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ قوموں کی تقدیر عدالتی فیصلوں سے نہیں، قیادت سے ہوتی ہے، بلوچستان کے لوگوں میں بہت صلاحیتیں ہیں، صوبے ترقی نہیں کر سکا، ترقی نہ ہونے کی ذمہ داری صرف ریاست پر نہیں ڈال سکتے، اس کیلئے ہر انسان کو کردار ادا کرنا ہوگا۔

چیف جسٹس آف پاکستان کا مزید کہنا تھا کہ ملک میں قانون کی بالادستی ہونی چاہیے اور ترقی کے لیے قربانیاں دینی پڑتی ہیں جب کہ ملکی حالات ہمارے سامنے ہیں لہٰذا اختلاف کو چھوڑ کر ملک کے لیے سوچنا چاہیے۔ ریاست ماں کی طرح ہوتی ہے اور شہریوں کو تحفظ دینا ریاست کی ذمہ داری ہے جب کہ ہماری ذمہ داری ہے آئین اور قانون کے مطابق اداروں کا تحفظ کریں، قانون اور عدالتوں کا احترام ہونا چاہیے۔

جسٹس عمر عطاء بندیال کا مزید کہنا تھا کہ ماتحت عدالتوں میں بدتمیزی اور بد نظمی نظر آتی ہے، قانون و عدالت کی عزت نہیں ہوگی تو افراتفری کی صورتحال ہوگی، ارجنٹ کیسز کے لیے ہم نے ارجنٹ کیسز فارم بنایا اور پرائیوٹ کیسز میں عملدرآمد کے معاملات ہوتے ہیں، ہمارے وسائل اتنے وسیع نہیں، جتنی آپ کی ضرورت ہے لہٰذا ویڈیو لنک کی سہولت کو استعمال کیا جائے۔

پاکستان

وفاقی کابینہ کی جانب سے آن لائن ویزہ درخواستوں کے نظام کے نفاذ کی منظوری

اس سلسلے میں وزارت داخلہ میں ایک ڈیش بورڈ قائم کیاجائے گا تاکہ آن لائن ویزے کے نظام کی نگرانی کی جاسکے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

وفاقی کابینہ کی جانب سے  آن لائن ویزہ درخواستوں کے نظام کے نفاذ کی منظوری

وفاقی کابینہ نے آن لائن ویزہ درخواستوں کے نظام کے نفاذ کی منظوری دے دی ۔

جس کے تحت 126 ملکوں کے شہری 24 گھنٹے کے اندر کاروباری اورسیاحتی ویزے حاصل کرسکیں گے ان 125 ملکوں کے شہریوں کو ویزہ فیس سے استثنی حاصل ہوگا۔

کابینہ نے جس کا اجلاس وزیراعظم شہبازشریف کے زیر صدارت آج(بدھ) کو اسلام آباد میں ہوا ویزہ آن ارائیول  کی ایک ذیلی کیٹگری کی بھی منظوری دی جس کا مقصد تیسرے ملک کے پاسپورٹ رکھنے والے سکھ یاتریوں کوسہولت فراہم کرنا ہے۔

اس سلسلے میں وزارت داخلہ میں ایک ڈیش بورڈ قائم کیاجائے گا تاکہ آن لائن ویزے کے نظام کی نگرانی کی جاسکے۔

کابینہ نے ملک کے مختلف شہروں میں خصوصی اور بینکنگ عدالتوں کے نوٹی فیکیشن کی منظوری دی یہ عدالت سیکورٹی اینڈ ایکس چینج کمیشن آف پاکستان کے تحت کام کریں گی۔

کابینہ نے پاکستان اور ڈنمارک کے درمیان لاجسٹکس ، ٹرانسپورٹ، سرسبز اور پائیدار ترقی واٹر WASTE مینجمنٹ ، شہری علاقوں میں ماحول دوست منصوبوں کی ترقی ، قابل تجدید توانائی اور سرکاری ونجی شراکت کے تحت بنیادی ڈھانچے کی تعمیر سمیت مختلف شعبوں میں تعاون کو فروغ دینے کیلئے ایک مفاہمتی یادداشت پردستخط کرنے کی بھی منظوری دی۔

وفاقی کابینہ نے ایک قرارداد بھی منظور کی ہے جس میں اسرائیل کی مذمت اور فلسطینیوں کی حمایت کی گئی ہے اور جنگی جرائم کے ارتکاب پر اسرائیل کے خلاف مقدمہ چلانے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

اجلاس میں کہا گیا کہ اسرائیلی فورسز کی بلاامتیاز بمباری سے شہری آبادی، ہسپتال، سکول، اقوام متحدہ کے دفاتر اور صحافی کچھ بھی محفوظ نہیں ہے۔

اجلاس میں کہا گیا کہ مقبوضہ فلسطینی علاقے قبرستان اور ملبے کا ڈھیر بن چکے ہیں۔

اجلاس میں مزیدکہا گیا کہ عالمی عدالت انصاف فلسطینی علاقوں میں اسرائیلی اقدامات کو پہلے ہی غیر قانونی اور بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزی قرار دے چکی ہے۔

اجلاس میں اس مسئلے سے موثر طور پر نمٹنے کے لئے تمام بین الاقوامی فورمز پر اسلامی ممالک کی جانب سے متحدہ حکمت عملی کی ضرورت پر بھی زور دیا گیا۔

وفاقی کابینہ نے مسئلہ فلسطین پر شنگھائی تعاون تنظیم کے موقف کو بھی سراہا اور عالمی برادری پر زور دیا کہ غزہ میں اسرائیل کے مذموم جنگی جرائم کے خلاف کارروائی کرے۔

اجلاس میں اس تنازع کے حل کے لئے1967 سے پہلے کی سرحدوں اور دارالحکومت القدس الشریف کے ساتھ فلسطینی ریاست کے قیام پر مبنی دو ریاستی حل کے حوالے سے پاکستان کے دیرینہ موقف کا اعادہ کیا گیا۔

پڑھنا جاری رکھیں

تجارت

حکومت کا پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کی ذمہ داری سے نکلنے کا فیصلہ

حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں مقرر کرنے کا اختیار آئل مارکیٹنگ کمپنیوں کو منتقل کرنے کا فیصلہ کر لیا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

حکومت کا پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کی ذمہ داری سے نکلنے کا فیصلہ

حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں مقرر کرنے کا اختیار آئل مارکیٹنگ کمپنیوں کو منتقل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق وفاقی حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کی ذمہ داری سے نکلنے کا فیصلہ کیا ہے،وزیراعظم شہبازشریف نےقیمتیں مقرر کرنے کا حکومتی اختیارختم کرنے کی ہدایت کردی۔

ذرائع کے مطابق قیمتیں بڑھانے کےنتیجے میں حکومت کو شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑتا ہے،قیمتیں کم ہونے کی صورت میں حکومت کو مطلوبہ عوامی ستائش نہیں ملتی۔جس پر آئل مارکیٹنگ کمپنیوں کو مرحلہ وار قیمتیں مقرر کرنے کا اختیار دینے کی تیاری کرلی گئی ہے۔

وزیراعظم کی ہدایت پر وزیر پیٹرولیم نے اہم اجلاس کل طلب کرلیا۔چئیرمین اوگرا کو قیمتیں ڈی ریگولیٹ کرنے کے اثرات اور لائحہ عمل تیار کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں ڈی ریگولیٹ کرنے کا حتمی فریم ورک وزیراعظم کو پیش کیا جائے گا۔

پیٹرولیم ڈیلرز نے آئل مارکیٹنگ کمپنیوں کو قمتیں مقرر کرنے کااختیار دینے کی مخالفت کی تھی۔ ان کاکہناہے کہ کھلا اختیار ملنے پر آئل مارکیٹنگ کمپنیوں کی جانب ناجائز منافع خوری کا خدشہ ہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

تفریح

لارنس بشنوئی مجھے ختم کرنا چاہتا ہے ، سلمان خان

بھارتی میڈیا کے مطابق اداکار کا بیان ممبئی پولیس کی جانب سے اس واقعہ کے سلسلے میں عدالت میں دائر چارج شیٹ کا حصہ ہے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

لارنس بشنوئی مجھے ختم کرنا چاہتا ہے ، سلمان خان

بالی وڈ کے سپرسٹار سلمان خان نے کہا ہے کہ ’انہیں یقین ہے کہ رواں برس اپریل میں ممبئی میں واقع اُن کی رہائش گاہ پر فائرنگ میں لارنس بِشنوئی گینگ ملوث ہے۔

انہوں نے کہا کہ لارنس بشنوئی مجھے اور میرے پورے خاندان کو ختم کرنا چاہتا ہے ۔

بھارتی میڈیا کے مطابق اداکار کا بیان ممبئی پولیس کی جانب سے اس واقعہ کے سلسلے میں عدالت میں دائر چارج شیٹ کا حصہ ہے۔

سلمان خان نے پولیس کو بتایا کہ انہوں نے 14 اپریل کی صبح گلیکسی اپارٹمنٹس میں اپنی رہائش گاہ پر سوتے ہوئے پٹاخوں جیسی آواز سنی۔

 

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll