جی این این سوشل

پاکستان

پنجاب کابینہ نے سول سروس پنشن رولز میں ترمیم کی منظوری دیدی

نگران وزیراعلیٰ پنجاب محسن نقوی کی زیر صدارت صوبائی کابینہ کا 16 واں اجلاس ہوا۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

پنجاب  کابینہ نے سول سروس پنشن رولز میں ترمیم کی منظوری دیدی
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

کابینہ نے پنجاب سول سروس پنشن رولز میں ترمیم کی منظوری دیدی،ملازمین کو ریٹائرمنٹ کے بعد 65 فیصد پنشن کی فوری ادائیگی یقینی ہو گی۔

جب تک پنشن کے مکمل کاغذات تیار نہیں ہوتے تب تک 65 فیصد پنشن ملتی رہے گی،نگران وزیر اعلیٰ محسن نقوی نے تمام محکموں کو سرکاری ملازمین کی ترقی کے کیسز جلد نمٹانے کا حکم بھی دیدیا۔

اجلاس میں سڑکوں کوٹوٹ پھوٹ سے بچانے کیلئے ایکسل لوڈ مینجمنٹ رجیم متعارف کرانے کا فیصلہ کیا گیا، فیکٹریوں سے نکلنے والے بڑے ٹرالر کے وزن کو باقاعدہ چیک کیا جائے گا،زیادہ وزن والے ٹرالرکو سڑک پر نہیں آنے دیا جائے گا

پنجاب کے 5 شہروں میں مفلوج ہونے والے مریضوں کی بحالی کیلئے خصوصی سنٹرز بنائے جائیں گے،لاہور،شہروں میں ملتان، تونسہ، لاہور، فیصل آباد اور واہ میں سنٹرز بنیں گے۔

نگران وزیر اعلی ٰمحسن نقوی نے اسموگ پر قابو پانے کے لئے جامع پلان طلب کر لیا،اکبر چوک لاہور پر فلائی اوور پراجیکٹ کیلئے گرانٹ ان ایڈ ،پنجاب انوائرمنٹل پروٹیکشن(سنگل یوز پلاسٹک پراڈکٹ کے استعمال) کے قوانین 2023 کی منظوری بھی دیدی گئی ۔

پاکستان

باڈر لائن کے دونوں جانب آج کشمیری یوم شہدا منا رہے ہیں

مقبوضہ جموں و کشمیر میں مکمل ہڑتال کی جائے گی اور سرینگر کے علاقے نقشبند صاحب میں واقع شہداقبرستان کی طرف مارچ کیا جائے گا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

باڈر لائن کے دونوں جانب آج  کشمیری یوم شہدا منا رہے ہیں

کنٹرول لائن کے دونوں جانب اور دنیا بھر میں مقیم کشمیری آج یوم شہدائے کشمیر منا رہے ہیں جس کا مقصد 13 جولائی 1931 اورتحریک آزادی کشمیرکے ان تمام شہداکو خراج عقیدت پیش کرنا ہے ۔جنہوں نے بھارتی غلامی سے آزادی کیلئے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا۔ مقبوضہ جموں و کشمیر میں مکمل ہڑتال کی جائے گی اور سرینگر کے علاقے نقشبند صاحب میں واقع شہداقبرستان کی طرف مارچ کیا جائے گا جہاں 13 جولائی کے شہدامدفون ہیں۔ ہڑتال کی اپیل کل جماعتی حریت کانفرنس کی نظر بند قیادت نے کی ہے۔

1931 میں آج کے روزڈوگرہ مہاراجہ کے فوجیوں کی گولیوں کا نشانہ بننے والے 22 کشمیری شہداکو خراج عقیدت پیش کرنے کیلئے آزاد کشمیر اور دنیا بھر کے بڑے شہروں میں ریلیوں، سیمینارزاور دیگر تقریبات کا اہتمام کیا جائے گا۔

 

پڑھنا جاری رکھیں

دنیا

ٹرمپ حملے پر جو بائیڈن سمیت مختلف رہنماؤں کی مذمت

 ٹرمپ اس قاتلانہ حملے میں محفوظ کا سن کر خوشی ہوئی ، امریکا میں ایسے واقعات کی کوئی گنجائش نہیں ہے، جوبائیڈن کی مذمت

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

ٹرمپ حملے پر جو بائیڈن سمیت مختلف رہنماؤں کی مذمت

پنسلواینا میں انتخابی مہم کے دوران سابق امریکی صدر اور ری پبلکن امیدوار ڈونلڈ ٹرمپ پر ہونیوالے قاتلانہ حملے پر امریکی صدرجوبائیڈن سمیت مختلف رہنمائوں میں سخت مذمت کی ہے۔

امریکی صدر جوبائیڈن نے کہا کہ ٹرمپ اس قاتلانہ حملے میں محفوظ کا سن کر خوشی ہوئی ، امریکا میں ایسے واقعات کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایسے واقعات کی پر زور مذمت کرتے ہیں۔

سابق امریکی صدر بش نے ٹرمپ پر قاتلانہ حملے کو بزدلانہ فعل قرار دے دیا۔

اس حوالے سے سابق صدر بارک اوباما نے بھی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ہماری جمہوریت میں سیاسی تشدد کی قطعاً کوئی جگہ نہیں ہے۔

پنسلوانیا کے گورنر نے ڈونلڈ ٹرمپ کی ریلی میں فائرنگ کے واقعہ کو قابل مذمت قرار دیا اور کہا کہ کسی سیاسی پارٹی یا لیڈر پر تشدد ناقابل قبول ہے۔

سپیکر اسمبلی نینسی پلوسی نے کہا ہے شکر ہے ڈونلڈ ٹرمپ حملے میں محفوظ رہے، ڈیموکریٹک سینیٹر چک شمر نے ٹرمپ پر حملے کو خطرناک واقعہ قرار دیا۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

صنم جاوید رہائی کے فوری بعد دوبارہ گرفتار

صنم جاوید کی رہائی کے وقت گوجرانوالہ سینٹرل جیل کے باہر پولیس کی بھاری نفری تعینات تھی، جب کہ سیالکوٹ روڈ ٹریفک کے لیے بند کیا گیا تھا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

صنم جاوید رہائی کے فوری بعد دوبارہ گرفتار

اسلام آباد : گوجرانوالہ میں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی رہنما صنم جاوید کو رہائی کے بعد دوبارہ گرفتار کرلیا گیا۔

یاد رہے کہ لاہور ہائیکورٹ نے 3 روز پہلے صنم جاوید کو 9 مئی کے مقدمہ سے ڈسچارج کرنے کا حکم جاری کیا تھا۔ جس کے بعد ہفتے کو پی ٹی آئی رہنما کو سینٹرل جیل گوجرانوالہ سے رہا کیا گیا۔

رہائی کے بعد اسلام آباد پولیس نے گوجرانولہ میں سینٹرل جیل کے باہر سے صنم جاوید کو دوبارہ گرفتار کر لیا ، گوجرانوالہ سے گرفتاری کے بعد پولیس صنم جاوید کو لے کر وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کیلئے روانہ ہوئی۔

صنم جاوید کی رہائی کے وقت گوجرانوالہ سینٹرل جیل کے باہر پولیس کی بھاری نفری تعینات تھی، جب کہ سیالکوٹ روڈ ٹریفک کے لیے بند کیا گیا تھا۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll