جی این این سوشل

پاکستان

عمران خان کی سپریم کورٹ میں گفتگو کی آڈیو لیک

جنہوں نے نیب قانون بنایا اور فائدے حاصل کیا ہمارے پاس ان سیاستدانوں کی لسٹ موجود ہے، بانی پی ٹی آئی

پر شائع ہوا

کی طرف سے

عمران خان کی سپریم کورٹ میں گفتگو کی آڈیو لیک
عمران خان کی سپریم کورٹ میں گفتگو کی آڈیو لیک

نیب ترامیم کیس کی سماعت کے دوران بانی پی ٹی آئی عمران خان کی ججز کے ساتھ گفتگو کی آڈیو سامنے آگئی۔

آڈیو گفتگو میں جج نے عمران خان سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ آپ سیاستدان خود چاہتے ہیں کہ نیب آپ کے خلاف استعمال ہو ، ہمار ے پاس تو اس کا کوئی علاج نہیں ہے۔یہ آپ سیاستدانوں نے کا کام ہے کہ کون اس کو کنٹرول کرے گا یا کون اس کو چلائے گا۔انہوں نے کہا کہ آپ کل پارلیمنٹ میں آ جائیں اس پر قانون سازی کریں، آپ جس طریقے سے بنانا چاہتے ہیں بنائیں، ہم اس کی تائید کریں گے۔ہم تو نہیں کہتے کہ قانون سازی نہ کریں۔

اس پر عمران خان نے کہا کہ میں یہ کہہ رہا ہوں کہ 2 کروڑ کی چیز انہوں نے 3 ارب کی دیکھا دی تاکہ میں کیس میں پھنس جائوں، نیب نے 2017 تک 295ارب روپے ، 2018 سے 2021 تک 426 ارب روپے کی ریکوری کی جبکہ 2023 میں نیب نے ٹوٹل 3 لاکھ روپے کی ریکوری اور 2024 میں صرف 1 کروڑ 24 لاکھ روپے کی ریکوری کی۔

بانی پی ٹی آئی عمران خان نے کہا کہ جنہوں نے یہ قانون بنایا اور فائدے حاصل کئے ہمارے پاس ان سیاستدانوں کی لسٹ موجود ہے۔

یہ دنیا میں کہیں بھی نہیں ہے کہ آپ کوئی قانون بنائیں اور اس کا فائدہ اٹھائیں، اس لئے ہم سپریم کورٹ کے پاس آئیں ہیں۔

جج نے کہا کہ ہم یہ بات ما ن رہے ہیں فرض کریں کہ ہم یہ بات کہہ دیں کہ یہ غلط ہے تو آپ یہ سمجھتے ہیں کہ یہ کام پارلیمنٹ کا ہے اور پارلیمنٹ ہی کر سکتی ہے، یہ درست ہے یا نہیں؟۔

عمران خان نے کہا کہ وہ پارلیمنٹ ایسا کر سکتی ہے جو عوام کو جوابدہ ہو اور فارم 45 والی پارلیمنٹ ہو۔

جج نے اس پر کہا کہ آپ اس طرف نہ جائیں جو کیسز پہلے سے چل رہے ہیں اور ان کیسز  کا ابھی کوئی فیصلہ نہیں ہوا۔ جج نے کہا کہ آپ فارم 45 سے متعلق بات نہ ہی کریں تو مناسب ہو گا۔

پاکستان

وفاقی حکومت نے پیکا ایکٹ کے تحت ٹرائل کیلیے اسلام آباد میں خصوصی عدالتیں تشکیل دے دیں

اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن ججز، سول جج ایسٹ اینڈ ویسٹ کو ٹرائل کا اختیار دیا گیا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

وفاقی حکومت نے پیکا ایکٹ کے تحت ٹرائل کیلیے اسلام آباد میں خصوصی عدالتیں تشکیل دے دیں

وفاقی حکومت نے پیکا ایکٹ کے تحت ٹرائل کیلیے اسلام آباد میں خصوصی عدالتیں تشکیل دے دیں۔ 

پیکا ایکٹ کے ملزمان کا تحت ٹرائل کے معاملے پر بڑی پیشرفت اُس وقت سامنے آئی جب وفاقی حکومت نے پیکا ایکٹ کے تحت ٹرائل کیلئے اسلام آباد میں خصوصی عدالتیں تشکیل دیدی۔ذرائع کا کہنا ہے کہ سیکرٹری اطلاعات پی ٹی آئی روف حسن اور دیگر کا ٹرائل پیکا ایکٹ کے نئی قائم عدالتوں میں ہونے کا امکان ہے۔

عدالتوں کی تشکیل کے بعد ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن ججز، سول جج ایسٹ اینڈ ویسٹ کو ٹرائل کا اختیار دے دیا گیا ہے، دیگر صوبوں میں متعلقہ ہائیکورٹس کے چیف جسٹس صاحبان کی مشاورت سے ججز نامزد ہوں گے۔دوسری جانب وزارت قانون نے وضاحت کی ہے کہ جسٹس بابر ستار کے حکم کی روشنی میں پیکا ایکٹ ملزمان کے ٹرائل کیلئے عدالتیں تشکیل دی گئیں ہیں، جسٹس بابر ستار نے 6 جون 2024 کو وفاقی حکومت سے پیکا ایکٹ کے تحت عدالتوں کے عدم قیام پر جواب مانگا تھا۔

اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن ججز، سول جج ایسٹ اینڈ ویسٹ کو ٹرائل کا اختیار دیا گیا، دیگر صوبوں میں متعلقہ ہائیکورٹس کے چیف جسٹس صاحبان کی مشاورت سے ججز نامزد ہوں گے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

وفاقی کابینہ کی جانب سے آن لائن ویزہ درخواستوں کے نظام کے نفاذ کی منظوری

اس سلسلے میں وزارت داخلہ میں ایک ڈیش بورڈ قائم کیاجائے گا تاکہ آن لائن ویزے کے نظام کی نگرانی کی جاسکے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

وفاقی کابینہ کی جانب سے  آن لائن ویزہ درخواستوں کے نظام کے نفاذ کی منظوری

وفاقی کابینہ نے آن لائن ویزہ درخواستوں کے نظام کے نفاذ کی منظوری دے دی ۔

جس کے تحت 126 ملکوں کے شہری 24 گھنٹے کے اندر کاروباری اورسیاحتی ویزے حاصل کرسکیں گے ان 125 ملکوں کے شہریوں کو ویزہ فیس سے استثنی حاصل ہوگا۔

کابینہ نے جس کا اجلاس وزیراعظم شہبازشریف کے زیر صدارت آج(بدھ) کو اسلام آباد میں ہوا ویزہ آن ارائیول  کی ایک ذیلی کیٹگری کی بھی منظوری دی جس کا مقصد تیسرے ملک کے پاسپورٹ رکھنے والے سکھ یاتریوں کوسہولت فراہم کرنا ہے۔

اس سلسلے میں وزارت داخلہ میں ایک ڈیش بورڈ قائم کیاجائے گا تاکہ آن لائن ویزے کے نظام کی نگرانی کی جاسکے۔

کابینہ نے ملک کے مختلف شہروں میں خصوصی اور بینکنگ عدالتوں کے نوٹی فیکیشن کی منظوری دی یہ عدالت سیکورٹی اینڈ ایکس چینج کمیشن آف پاکستان کے تحت کام کریں گی۔

کابینہ نے پاکستان اور ڈنمارک کے درمیان لاجسٹکس ، ٹرانسپورٹ، سرسبز اور پائیدار ترقی واٹر WASTE مینجمنٹ ، شہری علاقوں میں ماحول دوست منصوبوں کی ترقی ، قابل تجدید توانائی اور سرکاری ونجی شراکت کے تحت بنیادی ڈھانچے کی تعمیر سمیت مختلف شعبوں میں تعاون کو فروغ دینے کیلئے ایک مفاہمتی یادداشت پردستخط کرنے کی بھی منظوری دی۔

وفاقی کابینہ نے ایک قرارداد بھی منظور کی ہے جس میں اسرائیل کی مذمت اور فلسطینیوں کی حمایت کی گئی ہے اور جنگی جرائم کے ارتکاب پر اسرائیل کے خلاف مقدمہ چلانے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

اجلاس میں کہا گیا کہ اسرائیلی فورسز کی بلاامتیاز بمباری سے شہری آبادی، ہسپتال، سکول، اقوام متحدہ کے دفاتر اور صحافی کچھ بھی محفوظ نہیں ہے۔

اجلاس میں کہا گیا کہ مقبوضہ فلسطینی علاقے قبرستان اور ملبے کا ڈھیر بن چکے ہیں۔

اجلاس میں مزیدکہا گیا کہ عالمی عدالت انصاف فلسطینی علاقوں میں اسرائیلی اقدامات کو پہلے ہی غیر قانونی اور بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزی قرار دے چکی ہے۔

اجلاس میں اس مسئلے سے موثر طور پر نمٹنے کے لئے تمام بین الاقوامی فورمز پر اسلامی ممالک کی جانب سے متحدہ حکمت عملی کی ضرورت پر بھی زور دیا گیا۔

وفاقی کابینہ نے مسئلہ فلسطین پر شنگھائی تعاون تنظیم کے موقف کو بھی سراہا اور عالمی برادری پر زور دیا کہ غزہ میں اسرائیل کے مذموم جنگی جرائم کے خلاف کارروائی کرے۔

اجلاس میں اس تنازع کے حل کے لئے1967 سے پہلے کی سرحدوں اور دارالحکومت القدس الشریف کے ساتھ فلسطینی ریاست کے قیام پر مبنی دو ریاستی حل کے حوالے سے پاکستان کے دیرینہ موقف کا اعادہ کیا گیا۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

شہباز شریف کا فلسطینی عبوری حکومت کی تشکیل کیلئے بیجنگ اعلامیے کا خیر مقدم

انہوں نے کہا کہ فلسطینی عوام نے طویل عرصہ سے مصائب اور تکالیف کے سوا کچھ نہیں دیکھا اور اس معاہدے سے پائیدار امن کے حصول کی امید پیدا ہوئی ہے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

شہباز شریف  کا فلسطینی عبوری حکومت کی تشکیل کیلئے بیجنگ اعلامیے کا خیر مقدم

وزیراعظم شہبازشریف نے سرکردہ فلسطینی گروپوں کے درمیان اتحاد اور متفقہ عبوری حکومت کی تشکیل کیلئے بیجنگ اعلامیہ کا خیر مقدم کیا ہے۔

سوشل میڈیا ایکس پر ایک پوسٹ میں انہوں نے اس اہم سفارتی کامیابی پر عوامی جمہوریہ چین کو خصوصی طور پرسراہا۔

انہوں نے کہا کہ فلسطینی عوام نے طویل عرصہ سے مصائب اور تکالیف کے سوا کچھ نہیں دیکھا اور اس معاہدے سے پائیدار امن کے حصول کی امید پیدا ہوئی ہے۔

وزیراعظم نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ فلسطینی عوام کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کرے اور اسرائیل پردباؤ ڈالے کہ وہ بدترین ظلم وتشدد کا سلسلہ ختم کرے جس نے غزہ کو تباہ کردیا ہے اور گزشتہ 10ماہ کے دوران تقریبا 40ہزار فلسطینیوں کو شہید کیا ہے۔

شہبازشریف نے کہاکہ فلسطینی د ھڑوں کے درمیان اتحاد، امن، انصاف اور ریاست کے درجہ کے طور پرمضبوط اور موثر آواز کیلئے ناگزیر ہے انہوں نے کہا کہ ہم فلسطینی عوام کے حق خودارادیت کے حصول کی جدوجہدمیں ان کے ساتھ کھڑے ہیں۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll