جی این این سوشل

پاکستان

بختاور بھٹو کے ہاں دوسرے بیٹے کی پیدائش

کراچی : سابق صدر آصف زرداری کی صاحبزادی اور وزیرخارجہ بلاول بھٹو کی ہمشیرہ  بختاور بھٹو کے ہاں دوسرے بچے  کی پیدائش ہوئی ہے۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

بختاور بھٹو کے ہاں دوسرے بیٹے کی پیدائش
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

تفصیلات کے مطابق سابق وزیراعظم بینظیر بھٹو اور سابق صدر آصف علی زرداری کی بڑی صاحبزادی بختاور بھٹو زرداری کے ہاں دوسرے بچے کی پیدائش ہوئی ہے۔

بختاور بھٹونے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر  پر دوسرے بیٹے کی پیدائش کی  خوشخبری  دی اور اللہ کا شکر ادا کیا۔

 بختاور نےپیغام میں  تاریخ گزشتہ روز 5 اکتوبر 2022  شئیر کی ہے ۔ 

 

خیال  رہے کہ   بلاول بھٹو زرداری کی بہن بختاور بھٹو زرداری کے ہاں گزشتہ برس 10 اکتوبر کو  پہلے بیٹے کی پیدائش  ہوئی تھی جس کا نام  میر حاکم چوہدری ہے۔

واضح رہے کہ آصف علی زرداری کی صاحبزادی 31 جنوری 2021 کو پاکستانی نژاد دبئی کے صنعت کار محمود چوہدری کے ساتھ رشتہ ازدواج میں منسلک ہوئی تھیں، ان کی شادی کی تقریبات ایک ہفتے تک جاری رہی تھیں ۔ 

پاکستان

آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ آج عہدے سے سبکدوش ہورہے ہیں

ملک کے 16 ویں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے اپنا عہدہ نومبر 2016 کو سنبھالاجو 29 نومبر 2022 تک آرمی چیف رہے۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ آج عہدے سے سبکدوش ہورہے ہیں

آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ اپنی 6 سالہ مدت ملازمت مکمل کر کے آج اپنے عہدے سے سبکدوش ہورہے ہیں۔

 پاک فوج میں کمانڈ کی تبدیلی کی پروقار تقریب آج صبح 9 بجے جنرل ہیڈ کوارٹرز ( جی ایچ کیو) میں ہوگی۔

جنرل قمر جاوید باجوہ کمان کی چھڑی جنرل عاصم منیر کو سونپیں گے۔ جس کے بعد جنرل عاصم منیر پاکستان آرمی کی کمان سنبھالنے والے 17ویں آرمی چیف بن جائیں گے۔

آرمی چیف  جنرل قمر جاوید باجوہ اپنا الوداعی خطاب کرینگے جبکہ سبکدوش آرمی چیف کو گارڈ آف آنر پیش کیا جائے گا ۔ وہ یادگار شہدا پر بھی حاضری دینگے اور فاتحہ خوانی کرینگے۔

جنرل قمر جاوید باجوہ نے پاک فوج کے سولہویں سربراہ کے طور پر 6 سال تک خدمات انجام دیں۔ اس سے قبل راولپنڈی کور کی کمانڈ سمیت کئی اہم عہدوں پر تعینات رہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

وزیراعظم کا فلسطینی عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی کےعالمی دن کے موقع پرپیغام

فلسطینی عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی کا  عالمی دن آج منایا جارہاہے ۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

وزیراعظم کا فلسطینی عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی کےعالمی دن کے موقع پرپیغام

وزیراعظم محمد شہباز شریف نے فلسطینی عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی کا اعادہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ مقبوضہ فلسطین کی صورتحال بین الاقوامی امن و سلامتی کیلئے سنگین چیلنج ہے ، عالمی برادری کو فلسطینی عوام کے حقوق کی خلاف ورزیاں رکوانے کیلئے اقدامات کرنے چاہئیں۔ 

وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان کے عوام اور حکومت کی جانب سے فلسطینی عوام کے ساتھ اپنی غیر متزلزل حمایت کا اظہار کرتے ہیں۔

 انہوں نے کہا کہ یہ بات ہمارے لئے انتہائی تشویش کا باعث ہے کہ فلسطینی عوام سات دہائیوں سے زائد عرصے سے اسرائیل کے غیر قانونی قبضے کی وجہ سے مسلسل مشکلات کا شکار ہیں، قابض فوج کے ہاتھوں اپنی روزمرہ کی زندگیوں میں ناانصافیوں کے علاوہ وحشیانہ قبضے نے بدحالی، مایوسی اور ناامیدی کو جنم دیا ہے، مسلسل اسرائیلی تشدد کی تازہ ترین مثال اس سال اگست میں دیکھنے کو ملی جب غزہ میں اسرائیلی بمباری کے نتیجے میں 17 بچوں سمیت تقریباً 50 فلسطینی جاں بحق اور 300 سے زائد زخمی ہوئے۔

انہوں نے کہا کہ اسرائیل کے اقدامات سے استثنیٰ کی حوصلہ افزائی ہوتی ہے، جب تک عالمی برادری مظالم کے خاتمے کے لئے کوئی ٹھوس اقدام نہیں کرتی فلسطینی عوام اموات، زخموں اور انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کا شکار ہوتے رہیں گے۔

وزیراعظم نے کہا کہ مقبوضہ فلسطین کی صورتحال بین الاقوامی امن و سلامتی کے لئے ایک سنگین چیلنج ہے، عالمی برادری کو فلسطینیوں کے حقوق کی خلاف ورزیوں کے خاتمہ کے لئے اپنی کوششوں میں اضافہ کرنا چاہئے، دو ریاستی حل کے امکانات کو بہتر بنانے کے لئے ضروری ہے کہ اسرائیل کو مشرقی بیت المقدس سمیت مقبوضہ فلسطینی علاقوں میں اپنی غیر قانونی بستیوں کی توسیع سے روکا جائے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان مسئلہ فلسطین کے دو ریاستی حل کے لئے اپنی مسلسل حمایت کا اعادہ کرتا ہے جن کا ذکر سلامتی کونسل اور جنرل اسمبلی کی متعلقہ قراردادوں میں کیا گیاہے۔

وزیراعظم نے مزید کہا کہ ہم فلسطینی عوام کے ساتھ اپنی یکجہتی کا اعادہ کرتے ہیں اور 1967 سے پہلے کی سرحدوں کے بین الاقوامی سطح پر متفقہ طریقہ کار کی بنیاد پر ایک قابل عمل، خود مختار اور فعال فلسطینی ریاست کے قیام کا مطالبہ کرتے ہیں جس کا دارالحکومت القدس الشریف ہو۔

پڑھنا جاری رکھیں

صحت

فٹبال کو سر سے ہٹ لگانے پر دماغی امراض کے بڑھنے کا خطرہ ہے

فٹبال کو سر سے ہٹ لگانے پر دماغی امراض کے بڑھنے کا امکان ہے، جس وجہ سے اسکاٹ لینڈ میں فٹبال کے کھلاڑیوں پر ٹریننگ اور میچ سے ایک دن پہلے فٹبال کو سر سے ہیڈر مارنے پر پابندی لگائی جا رہی ہے۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

فٹبال کو سر سے ہٹ لگانے پر دماغی امراض کے بڑھنے کا خطرہ ہے

 

گلاسگو یونیورسٹی کی تحقیق کے مطابق فٹبال کے کھلاڑیوں کے دماغی امراض سے مرنے کے امکانات دوسرے لوگوں کی نسبت ساڑھے تین گنا زیادہ ہوتے ہیں۔

فٹبالر کھیل کے دوران بار بار سر کا استعمال کرتے ہیں جس سے ان کے دماغ پر بھی اثر پڑتا ہے۔ فٹبال کلب ہفتے میں ایک مرتبہ سے زیادہ ایسے ٹریننگ سیشن منعقد نہیں کریں گے جن میں پیشہ ور فٹبالرز کو ہیڈنگ کی مشق کرائی جاتی ہے، اس سے قبل اسکاٹ لینڈ میں 12 سال سے کم عمر کے کھلاڑیوں کی تربیت میں ایک حد سے زیادہ ہیڈرز استعمال نہیں کیا جاسکتا۔

بی بی سی کے مطابق سکاٹ لینڈ دنیا کا و ہ پہلا ملک تھا جس نے تمام کھیلوں میں ’اگر شک ہوتا ہے تو کھلاڑیوں کو باہر بٹھائیں‘ کا اصول اپنایا تھا جس کا مطلب یہ ہے کہ اگر کسی کھلاڑی کو سر پر کسی قسم کی چوٹ لگتی ہے اور اسے سر چکرانے کی شکایت ہو تو اسے میدان سے باہر بھیج دیا جائے۔

یاد رہے کہ گذشتہ برسوں میں کئی بڑے بڑے فٹبالرز ڈمنشیا بیماری کی وجہ سے اپنی جان سے ہاتھ دھو چکے ہیں۔ ان  کھلاڑیوں میں سکاٹ لینڈ کے کلب ’کیلٹِک‘ کے سابقہ کپتان بِلی میکنیل اورانگلیڈ کو ورلڈ کپ میں فتح دلوانے والے جیک چارلٹن بھی شامل  تھے۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll