جی این این سوشل

پاکستان

نیلام گھر کے میزبان طارق عزیز کی چوتھی برسی 17جون کو منائی جائےگی

اس کے علاوہ بھی انہیں بہت  اعزازات ملے17جون 2020ءکو وہ 84برس کی عمر میں انتقال کر گئے

پر شائع ہوا

کی طرف سے

نیلام گھر کے میزبان طارق عزیز کی چوتھی برسی 17جون کو منائی جائےگی
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

معروف کمپیئر ،انائونسر اور ٹی وی شو نیلام گھر کے میزبان طارق عزیز کی چوتھی برسی 17جون کو منائی جائے گی۔ طارق عزیز 28اپریل 1936ءکو جالندھر (بھارت) میں پیدا ہوئے اس کے بعد ان کا خاندان ہجرت کرکے پاکستان آگیا ۔

1974ءمیں انہوں نے نیلام گھر کے نام سے کوئیز پروگرام کا آغاز کیا جو بعد ازاں طارق عزیز شو کے نام سے چلتا رہا ۔طارق عزیز 1997سے 1999 ءتک قومی اسمبلی کے ممبر بھی رہے ،ان کا پنجابی مجموعہ ،،ہمزاد دا دکھ ،،کے نام سے شائع ہوا 1992ءمیں انہیں تمغئہ حسن کارکردگی سے نوازا گیا ۔


اس کے علاوہ بھی انہیں بہت  اعزازات ملے17جون 2020ءکو وہ 84برس کی عمر میں انتقال کر گئے۔

پاکستان

پیپلز پارٹی کی مخصوص نشستوں کے فیصلے پر سپریم کورٹ میں نظر ثانی کی درخواست دائر

پیپلز پارٹی نے درخواست میں موقف اپنایا کہ تحریک انصاف کو مانگے بغیر ہی نشستیں دی گئیں ہیں

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

پیپلز پارٹی کی مخصوص نشستوں کے فیصلے پر سپریم کورٹ میں نظر ثانی کی درخواست دائر

مخصوص نشستوں کے فیصلے پر پیپلز پارٹی نے بھی سپریم کورٹ میں نظر ثانی کی درخواست دائر کر دی۔

سپریم کورٹ میں پیپلز پارٹی کی جانب سے فاروق ایچ نائیک نے درخواست دائر کی۔

پیپلز پارٹی نے 12 جولائی کے سپریم کورٹ کے مخصوص نشستوں کے فیصلے کے خلاف نظر ثانی کی درخواست دائر کی، جس میں مخصوص نشستوں سے متعلق فیصلہ واپس لینے کی استدعا کی گئی ہے۔

پیپلز پارٹی نے درخواست میں موقف اپنایا کہ تحریک انصاف کو مانگے بغیر ہی نشستیں دی گئیں ہیں۔

قبل ازیں مسلم لیگ (ن) مخصوص نشستوں کے فیصلے پر نظر ثانی کی درخواست سپریم کورٹ میں دائر کر چکی ہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

جو جج جان بوجھ کر غلط فیصلہ کرتا ہے اس پر اللہ کا قہر نازل ہو، جسٹس طارق محمود

وکلا اچھی معاونت کریں تو ججز کو بھی فیصلہ کرنے میں آسانی ہوتی ہے، اسلام آباد ہائیکورٹ بار سے خطاب

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

جو جج جان بوجھ کر غلط فیصلہ کرتا ہے اس پر اللہ کا قہر نازل ہو، جسٹس طارق محمود

اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس طارق محمود جہانگیری نے کہا ہے کہ میں روز قرآن پاک اور درود شریف پڑھ کر عدالت میں بیٹھتا ہوں اور جو جج جان بوجھ کر غلط فیصلہ کرتا ہے اس پر اللہ کا قہر نازل ہو۔

اسلام آباد ہائیکورٹ بار سے خطاب کرتے ہوئے جسٹس طارق محمود جہانگیری نے کہا کہ وکلا اچھی معاونت کریں تو ججز کو بھی فیصلہ کرنے میں آسانی ہوتی ہے، وکیل اگر تیاری کے ساتھ پیش ہوں تو خوشی ہوتی ہے،  جج بھی انسان ہیں، ہم ہرفیصلہ یہ سوچ کر لکھتے ہیں کہ یہ ہمارا ایگزامنیشن پیپر ہے، ہمارا فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج ہوتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ 8 فروری 2021 کے واقعہ کی وجہ سے بار اور بینچ میں کافی خلا  آگیا تھا، وکلا کو اپنےکیسز کی پیروی کےلیے مکمل تیاری کے ساتھ آنا چاہیے اور ججز کو بھی نوجوان وکلا کی اپنے بچوں کی طرح اصلاح کرنی چاہیے۔

جسٹس طارق محمود کا کہنا تھا کہ ایک نیا ٹرینڈ تھا کہ ملک بھر میں پرچے ہوجاتے تھے، میں نےفیصلہ دیاکہ ایک وقوعہ پر متعدد ایف آئی آرز درج نہیں ہوسکتیں، ہم نے آئین اور قانون کی پاسداری کا حلف اٹھا رکھا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ میں روز قرآن پاک اور درود شریف پڑھ کر عدالت میں بیٹھتا ہوں اور جو جج جان بوجھ کر غلط فیصلہ کرتا ہے اس پر اللہ کا قہر نازل ہو۔ 

پڑھنا جاری رکھیں

علاقائی

ناران :  2 سیاح فوٹو بنواتے ہوئے گلیشیئر گرنے سے جاں بحق

مقامی افراد نے لاشوں کو نکال کر ناران بی ایچ یو پہنچا دیا، جہاں سے لاشوں کو ایمبولینس کے ذریعے راجن پور روانہ کر دیا گیا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

ناران :  2 سیاح فوٹو بنواتے ہوئے گلیشیئر گرنے سے جاں بحق

مانسہرہ: مانسہرہ کے تفریحی مقام ناران میں آج ایک گلیشیئر کا ٹکڑا گرنے سے دو سیاح جاں بحق اور ایک زخمی ہو گیا۔

پولیس کے مطابق راجن پور سے تعلق رکھنے والی ایک فیملی ناران میں جھیل روڈ پر گھوم رہی تھی۔ 22 سالہ مہران اور اس کی 13 سالہ بھتیجی گلیشیئر کے نیچے تصاویر بنوا رہے تھے کہ اچانک گلیشیئر کا ایک وزنی ٹکڑا ٹوٹ کر ان کے اوپر آ گیا۔

مہران اور اس کی بھتیجی موقع پر ہی جاں بحق ہوگئے، جبکہ ان کے ساتھ موجود ایک اور رکن خاندان زخمی ہو گیا۔ زخمی شخص کو ناران کے مقامی ہسپتال منتقل کر دیا گیا ہے۔

مقامی افراد نے لاشوں کو نکال کر ناران بی ایچ یو پہنچا دیا، جہاں سے لاشوں کو ایمبولینس کے ذریعے راجن پور روانہ کر دیا گیا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ جائے حادثہ پر سیاحوں کو گلیشیئر سے دور رہنے کی ہدایات کا بورڈ بھی لگا دیا گیا تھا، لیکن سیاحوں نے ہدایات پر عمل نہیں کیا۔

یاد رہے کہ گزشتہ سال ناران میں اس طرح کا ایک واقعہ پیش آیا تھا جس میں برف کا ایک ٹکڑا گرنے سے کراچی کی دو خواتین جاں بحق ہو گئی تھیں۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll