جی این این سوشل

پاکستان

کرتار پور صاحب کے احاطے میں فوٹو شوٹ پر ماڈل سے معافی کا مطالبہ

کرتار پور صاحب کے احاطے میں فوٹو شوٹ کرانے پر وفاقی وزیر فواد چوہدری نےماڈل سے معافی کا مطالبہ کر دیا ۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

کرتار پور صاحب کے احاطے میں فوٹو شوٹ پر ماڈل سے معافی کا مطالبہ
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

سکھوں کے مذہبی مقام کرتارپور صاحب کے احاطے میں ماڈلنگ پر وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے تنقید کی ہے، انہوں نے ڈیزائنر اور ماڈل سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ سکھ برادری سے معافی مانگیں۔

سوشل میڈیا پر کرتارپور میں گوردوارہ سری دربار صاحب کے احاطے میں ایک فیشن برانڈ کے لیے خاتون ماڈل کی فوٹو شوٹ کی تصاویر سامنے آئی ہیں، جس پر سکھ برادری کی جانب سے ناراضی کا اظہار کیا گیا ہے۔

وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا ہے کہ کرتار پور کوئی فلم سیٹ نہیں، ایک مذہبی مقام ہے، ڈیزائنر اور ماڈل کو سکھ برادری سے معافی مانگنی چاہیے۔

 

شہروز اظہر 2018 سے ویب جرنلسٹ کے طور پر کام کر رہے ہیں۔ انہوں نے نیشنل یونیورسٹی آف ماڈرن لینگویجز سے ماس کمیونیکیشن میں بی ایس کیا ہے۔ مسٹر اظہر اس سے قبل معروف چینلز کے ساتھ کام کر چکے ہیں اور اب جی این این کے ساتھ بطور سینئر کنٹینٹ رائٹر وابستہ ہیں۔

تفریح

پاکستان کے قومی مصورعبدالرحمٰن چغتائی  کا 47 واں یوم وفات

ویب ڈیسک : معروف مصور عبدالرحمٰن  چغتائی  کو اس دنیا سے رخصت ہوئے 47 برس بیت گئے۔ 

پر شائع ہوا

Asma Rafi

کی طرف سے

پاکستان کے قومی مصورعبدالرحمٰن چغتائی  کا 47 واں یوم وفات

عبدالرحمن چغتائی 21 ستمبر 1897 میں لاہور کے ایک محلہ چابک ساواراں میں پیدا ہوئے ۔ ان کے آباؤ اجداد کا تعلق  تعمیرات، مصوری اور نقاشی سے تھا۔ ان کا خاندان چودہ پشتوں سے  عمارت سازی سے وابستہ رہا ۔ ان کے پردادا صلاح معمارکا شمار ان لوگوں میں ہوتا ہے  ، جو تاج محل، لال قلعہ اور بادشاہی مسجد جیسی عظیم عمارتوں کے خالق تھےاور جن  کی تخلیقات دنیا کےمختلف عجائب گھروں کی زینت بنتی تھی۔ 

مصورِ مشرق کا خطاب پانے والے عبد الرحمن چغتائی   نے جو تصویر بنائی شاہکار ٹھہری۔جس خیال کو بھی کینوس پر اتارا  اپنی مثال  آپ بن گیا ۔اپنے فن میں  منفرد مصور کو رنگوں کے استعمال کا ہنر خوب  آتا تھا ، انہوں نے ہمیشہ ہلکے رنگوں کو استعمال کیا اور  ہلکے رنگوں  کے امتزاج سے انہوں نے ایسے فن پارے تخلیق کیے  جن کی چمک آج بھی بر قرار ہے۔

ان کی پینٹنگز میں نفاست چمک اور دیرپا رہنے کی تکنیک کو"واش" کہا جاتا ہے  کیونکہ ان کی بنائی  ہوئی پینٹنگز کو اگر عرصہ دراز  تک پانی میں رکھا جائے تو وہ ویسے ہی چمکدار رہتی ہیں  ۔ عبد الرحمن چغتائی زیادہ تر   اپنی پینٹنگز  میں ہینڈ میڈ پیپر کا استعمال کرتے تھے ۔  غالب کی شاعری ہو یا علامہ اقبال کا کلام عبدالرحمن چغتائی نے معروف شاعروں کے کلام کو رنگوں کی زبان میں   اس خوبصورتی سے ڈھالا کے گویا اشعار  کو مجسم ہی کر دیا۔

عبد الرحمن چغتائی نے 1928 میں "مر قع چغتائی" شائع کی جس میں غالب کے کلام کی مصورانہ تشریح کی گئی  اور یہ اردوکی  اپنے طرز کی پہلی کتاب تھی جسے بے حد سراہا گیا ۔ 1935میں غالب کے کلام پر مبنی ان کی دوسری کتاب "نقش چغتائی"شائع ہوئی اور اس  کتاب نے  بھی بے حد مقبولیت حاصل کی  ۔

عبد الرحمن چغتائی کو  جنوبی ایشیا کا پہلا نمایاں جدید مسلم مصور  اور پاکستان کاقومی مصورسمجھا جاتا ہے۔آپ مغل  آرٹ ،مینی ایچر  اور اسلامی فن  ِ روایات سے متاثر تھےاور  اپنے  منفرد  اور مخصوص    پینٹنگ اسٹا ئل  کی وجہ سے پہچانے جاتے تھے۔انہوں نے  پاکستان کے پہلے ڈاک ٹکٹ ڈیزائن کرنے کے ساتھ ساتھ پی ٹی وی اور ریڈیو پاکستان کا   لوگو بھی ڈیزائن کیا۔

عبدالرحمن چغتائی کی پینٹنگز کی پہلی نمائش لاہور میں "فائن آرٹ سوسائٹی لاہور" اور آخری نمائش  2001 میں" لاہور الحمرا آرٹ گیلری" میں منعقد ہوئی۔ اس سے قبل 1964ء میں " کلام اقبال" کو"عمل چغتائی" مصوری کی نمائش الحمرا میں منعقد ہوئی  جس میں صدرِ پاکستان ایوب خان نے انہیں ایک لاکھ روپے انعام سے نوازا ۔

 عبد الرحمن چغتائی کو1934 میں "خان بہادر" کا لقب دیا گیا ۔عبد الرحمٰن  چغتائی کو ان کی خدمات کے صلے میں  1960 میں  ہلالِ امتیازجبکہ 1964ء میں مغربی جرمنی میں طلائی تمغے سے نوازا گیا۔

عبد الرحمن چغتائی 17 جنوری  1975 کو  اس دنیائے  فانی کو ہمیشہ کے لیے خیر باد کہہ گئے ۔  ان کے گھر کو "چغتائی میوزیم ٹرسٹ آرٹ گیلری"  کے نام سے منسوب کیا گیا ہےاور ان کے صاحبزادے  عارف چغتائی ہر سال 17 جنوری کوچغتائی آرٹ کی نمائش کا اہتمام کرتے ہیں ۔ 

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

بالوں پر بغیر کچھ لگائے سفید بال پھر سے کالے سیاہ کرنے کا آسان ترین آزمودہ قدرتی نسخہ

۔یہ جادوئی مکسچر دن میں تین بار استعمال کرنے سے نہ صرف بال مضبوط ہوکر سیاہ ہونے لگیں گے بلکہ اس سے صحت بھی اچھی رہے گی۔

پر شائع ہوا

Muhammad Akram

کی طرف سے

بالوں پر بغیر کچھ لگائے سفید بال پھر سے کالے سیاہ کرنے کا آسان ترین آزمودہ قدرتی نسخہ

لندن: ہر کوئی یہ سمجھتا ہے کہ اگر بال سفید ہوجائیں تو پھر انہیں سیاہ نہیں کیا جاسکتا اور اس لئے لوگ مختلف طرح کے ہیئرکلر استعمال کرتے ہیں لیکن آج ہم آپ کو سفید بالوںکو دوبارہ کالا کرنے کا آسان ترین نسخہ بتاتے ہیں۔

اجزاء

فلیکس سیڈ آئل (السی کا تیل)200گرام

لیموں چار عدد

لہسن کی تین توڑیاں

شہد ایک کلو

بنانے کا طریقہ

لیموں کا رس اورلہسن کو اچھی طرح پیس لیں،اسکے بعد فلیکس سیڈ اور شہد ڈالیں اور پھر پیس لیں۔اس مرکب کو کسی جار میں ڈال کر اچھی طرح بند کردیں اور مکسچر کو فریج میں رکھ دیں۔ہر کھانے سے 30 منٹ قبل ایک بڑا چمچ مکسچر کاکھائیں اور ہمیشہ لکڑی یا پلاسٹک کا چمچ استعمال کریں۔یہ جادوئی مکسچر دن میں تین بار استعمال کرنے سے نہ صرف بال مضبوط ہوکر سیاہ ہونے لگیں گے بلکہ اس سے صحت بھی اچھی رہے گی۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

پشاور میں ہندو برادری نے اپنے مردے جلانے کے بجائے دفنانے کا فیصلہ کیوں کیا ؟

پشاور: آزادی کے بعد پاکستان میں رہنے والی ہندو برادری نے اپنے مردے جلانے کے بجائے دفنانے کا فیصلہ کیوں کیا؟

پر شائع ہوا

Shehroz Azhar

کی طرف سے

پشاور میں ہندو برادری نے اپنے مردے جلانے کے بجائے دفنانے کا فیصلہ کیوں کیا ؟

اویناش اور آکاش لال کا تعلق تو دو مختلف ہندو خاندانوں سے ہے لیکن دونوں کی کہانی ایک جیسی ہے۔ نوتھیہ کے قدیم قبرستان میں دونوں کے آباؤ اجداد مدفن ہیں۔

اویناش کے دادا اور آکاش کے والد رام لال دونوں ہی سنہ 2018 میں دنیا سے رخصت ہوئے۔ دونوں کی وصیت کے مطابق ان کو مذہبی رسومات کے مطابق انتم سنسکار جلانے کے بجائے دفنانے کا فیصلہ کیا گیا۔

آکاش لال کے مطابق ان کے والد رام لال ہندو کمیونٹی کے صدر ہونے کے ساتھ پشاور صدر کالی باڑی کے سیوک خدمت گار تھے اور اپنے دھرم کے حوالے سے بڑے کٹر تھے۔ ہندو تعلیمات اور رسوم و رواج پر وہ کبھی سمجھوتہ نہیں کرتے تھے۔

تاہم انھیں بچپن میں اپنے والد سے سنی کہانی آج بھی من وعن یاد ہے۔ وہ بتایا کرتے تھے کہ تقسیم کے بعد ہندو برادری اقلیت میں آگئی جو معاشی طور پر بھی کمزور تھی۔ یہ وہ وقت تھا جب ہندو کسی طور مسلم اکثریتی علاقے میں مسلمانوں کے ساتھ کسی قسم کا تنازعہ مول لینے کی پوزیشن میں نہیں تھے لہذا مسلمانوں کے ساتھ بہتر تعلقات استوار کرنے کی یہی صورت تھی کہ جن معاملات میں یکجہتی اور یکسانیت ظاہر کی جا سکتی تھی، کر لی جائے۔

وہ کہتے ہیں کہ ایسے میں آخری رسومات پر جب نظر دوڑائی گئی تو ان کے دادا نے وصیت کر دی کہ ان کے انتقال کی صورت میں انھیں جلانے کی بجائے دفنا کر کریاکرم آخری رسومات کیا جائے۔

آکاش نے مزید بتایا کہ دادا کے بعد ان کے بھائیوں اور پھر ان کی دادی کو بھی دفنایا گیا اور جب رام لال کا آخری وقت قریب آیا تو انھوں نے بھی خاندانی رسم و رواج کے مطابق اپنے والد والدہ کے پاس ہی خود کو دفن کرنے کی وصیت کی۔

اویناش کے دادا دادی اور پردادا بھی وصیت کے مطابق دفنائے گئے اویناش کہتے ہیں کہ انھوں نے بھی گھر پر لگ بھگ آکاش کی کہانی جیسی ہی باتیں سن رکھی ہیں کہ کیسے اس زمانے میں مسلم ہندو فسادات اور لڑائی جھگڑوں سے بچنے کے لیے ان کے آباؤ اجداد نے آخری رسومات میں دفنائے جانے کو ترجیح دی۔

اویناش کا کہنا ہے کہ ان کے والد شری کبیر داس اب بیمار رہتے ہیں ان کی صحت کو لے کر وہ فکر مند تو ہیں مگر زندگی موت کی امانت ہے اور اس حقیقت سے بھی انکار ممکن نہیں۔

اویناش اس صورتحال میں جب مستقبل کا سوچتے ہیں تو ان کی ذاتی رائے یہ ہے کہ ’اب چونکہ حالات ماضی جیسے گھمبیر نہیں ہیں لہذا ان کے والد کی وفات کی صورت وہ انھیں ہندو دھرم کے انتم سنسکار کے طریقے سے اگنی چتا جلانے  کے خواہشمند ہیں تاہم اگر ان کے والد بھی اپنے دادا پردادا ہی کی طرح دفنائے جانے کی وصیت کریں گے تو انھیں اس وصیت کا احترام کرنا ہو گا۔

ہندومت میں آخری رسومات کی ادائیگی کن طریقوں سے ہوتی ہے؟

ہندو دھرم میں موت کے بعد انتم سنسکار سے مراد مکتی ہے۔ اس حوالے سے پشاور کے 76 سال کے پنڈت دیپ چند کا کہنا ہے کہ ہندوؤں کا یہ عقیدہ ہے کہ انسانی جسم مٹی، پانی، آگ، آسمان اور ہوا کا مجموعہ ہے اور موت کے بعد انسان کی مکتی اسی اصلیت کی طرف لوٹنے میں پوشیدہ ہے۔

ہندو برادری کی آخری رسومات میں مردے کو جلانے کو ہی ترجیح دی جاتی ہے لیکن انتم سنسکار کا ایک اور طریقہ ہندو عقیدے میں جل پروان یعنی میت کو بہتے پانی میں بہانا ہے۔

پنڈت دیپ چند نے بتایا کہ اپنی 76 سال کی زندگی میں انھیں جل پروان کے دو واقعات یاد ہیں۔ پہلا پچاس سال قبل نوشہرہ اور دوسرا کوئی تیس برس پہلے پشاور کے ایک ہندو کا ہے۔ دونوں کے جل پروان دریائے اٹک میں کیے گئے تھے۔

دیپ چند کا مؤقف ہے کہ خیبر پختونخوا میں جل گھاٹ کا رواج نہ ہونے کی وجہ دریاؤں اور ندیوں کی کمی بھی ہے۔

اس کے علاوہ ایک اور طریقہ سمادھی ہے مگر وہ انتہائی نیک، پرہیز گار اور عبادت گزار ہندو کی ہی بنائی جاتی ہے۔

پنڈت دیپ چند کے مطابق ہندو دھرم میں دفنانے کے حوالے سے کوئی روایت موجود نہیں ماسوائے نابالغ بچوں کے یا حادثاتی طور پر کسی کی ایسی موت جس میں میت کو فوری جلانا ممکن نہ ہو۔

پنڈت دیپ چند کے مطابق انڈیا میں نوے فیصد ہندوؤں کو اگنی سنسکار ہی دیا جاتا ہے البتہ دس فیصد کو ان کی خواہش کے مطابق جل گھاٹ بھی کیا جاتا ہے۔ کسی وجہ کی بنا پر کوئی اپنے مردے دفن کرتا ہو تو اس بارے میں وہ کچھ نہیں کہہ سکتے۔

البتہ اگر مرنے والے کا خاندان یہ کہے کہ اگلا جہان سدھارنے والے کی یہ وصیت تھی کہ اسے جلانے کی بجائے دھرتی کے سپرد کیا جائے تو پنڈت یا مذہبی عقائد اس حوالے سے اس کی رائے کا احترام کرتے ہیں۔ اس صورت میں قبر میں اتارنے کے بعد گیتاپاٹ کے ورد کے دوران میت کی دائیں ہتھیلی پر تانبے کا سکہ دہکا کر رکھا جاتا ہے جس پر گلاب جل چھڑکنے کے فوراً بعد مٹھی کپڑے سے بند کر دی جاتی ہے۔

اس سارے عمل کا مقصد اگنی چتا اورجل پروان کی رسم پوری کرنا ہے۔

پنڈت دیپ چند کا تقسیم ہند کے دوران اور بعد میں آخری رسومات کے حوالے سے کی جانے والی وصیتوں کے حوالے سے کہنا تھا کہ یہ فیصلہ مجبوراً کرنا پڑا لیکن کافی حد تک مثبت رہا جس کے اثرات آج بھی اس صورت دکھائی دیتے ہیں۔

وہ کہتے ہیں کہ جب بھی کسی ہندو کو اگنی سنسکار کے بجائے دفنایا جاتا ہے تو اس کی آخری رسومات میں مسلمان دوست احباب اور محلے دار بھی شرکت کرتے ہیں جو مذہبی ہم آہنگی اور ایک دوسرے کے ساتھ یکجہتی کی اچھی مثال ہے۔

ہندو مذہب میں دفنانے کا عقیدہ نہ ہونے کے باوجود پشاور میں ہندوؤں کا قبرستان کیوں آباد ہے؟

پشاور نوتھیہ میں گذشتہ صدی کے قبرستان میں اویناش اور آکاش کے آباو اجداد ہی نہیں دیگر ایسے خاندانوں کی قبریں بھی موجود ہیں جنھیں کسی وصیت کے تحت دفنایا گیا مگر مدفن لوگوں میں سینکڑوں ایسے بھی ہیں جو وسائل نہ ہونے کے سبب اگنی سنسکار سے محروم رہے۔

اگنی سنسکار کے لیے 12 من مہنگی لکڑی سمیت گھی ناریل کافور اور دیگر کئی اشیا کی ضرورت تو ہوتی ہی ہے لیکن جو سب سے بڑا مسئلہ انھیں درپیش ہوتا ہے وہ شمشان گھاٹ کی کم دستیابی کا ہے۔

ایک شہر سے دوسرے شہر تک میت کی منتقلی پر کم از کم پچاس تا ساٹھ ہزار خرچہ آتا ہے جسے اٹھانا ہندو برادری کے غریب افراد کے بس سے باہر ہے۔ ایسے حالات میں انھیں اپنے پیاروں کو مجبوراً قریبی قبرستان میں ہی دفنانا پڑتا ہے۔

پشاور کے سرگرم مذہبی اقلیتی رہنما ہارون سرب دیال کا کہنا ہے کہ آرٹیکل 25 کے تحت انھیں پاکستانی شہری ہونے کے تمام حقوق برابر حاصل ہیں مگر آج 70 سال بعد بھی وہ برابری کے حقوق کے لیے سراپا احتجاج ہیں۔

 

ان کا کہنا تھا کہ خیبر پختونخوا میں 50 ہزار کے آس پاس ہندو ہیں مگر ان کی آخری رسومات کے لیے کیے گئے اقدامات ناکافی ہیں۔

ہندو برادری کے دیرینہ مطالبے پر خیبرپختونخوا میں اقلیتی برادری کے لیے شمشان گھاٹ اور الگ قبرستان کے قیام کے لیے اقدامات جاری ہیں۔

خیبر پختونخوا اسمبلی کے رکن ہندو رکن روی کمار کے مطابق خیبر پختونخوا میں پشاور کے علاوہ ہندوؤں کی ایک بڑی تعداد نوشہرہ، سوات، ڈیرہ اسماعیل خان، بونیر، ہنگو، کوہاٹ اور بنوں کے اضلاع میں رہائش پذیر ہے۔

ہندو اقلیتی رہنما ہارون سر دیال کہتے ہیں آرٹیکل 25 کے تحت ہندو برادری کو مذہبی آزادی دی گئی تاہم ستر سال بعد بھی وہ اپنے حقوق کے لیے سراپا احتجاج ہیں

اس وقت کوہاٹ مردان بونیر اور سوات میں شمشان گھاٹ موجود ہیں تاہم حکومت نے زمین کی خریداری کے لیے چند دن قبل 10 اضلاع میں سیکشن فور نافذ کر دیا، جس کے لیے 10 کروڑ روپے بجٹ میں مختص ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ متعلقہ اضلاع کے ڈپٹی کمشنرز کی نگرانی میں زمین کی خریداری ہورہی ہے جس کے بعد پشاور سمیت دیگراضلاع میں شمشان گھاٹ نہ ہونے کی وجہ سے اقلیتی برادری کو درپیش مشکلات میں کمی آئے گی۔

یاد رہے سنہ 2018 میں بھی ہندوؤں نے اپنے اس دیرینہ مسلے کے حل کے لیے پشاور ہائیکورٹ سے رجوع کیا تھا جس پرعدالت نے انتظامیہ کو انھیں فوری شمشان گھاٹ مہیا کرنے کا حکم دیا تھا۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll