جی این این سوشل

پاکستان

لاہور ہائی کورٹ: بلدیاتی الیکشن کیلئے حلقہ بندیاں کالعدم قرار

عدالت نے درخواست گزاروں کو ہدایت کی کہ وہ 14جون کو الیکشن کمیشن میں پیش ہوں۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

لاہور ہائی کورٹ: بلدیاتی الیکشن کیلئے حلقہ بندیاں کالعدم قرار
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

لاہور ہائی کورٹ نے بلدیاتی الیکشن کے لیے کی جانے والی حلقہ بندیاں کالعدم قرار دے دیں، عدالت نے حلقہ بندیوں کے خلاف تمام درخواستیں فیصلے کے لیے الیکشن کمیشن کو بھجواتے ہوئے ایک ماہ میں ان کا فیصلہ کرنے کی ہدایت کی ہے۔

لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس جواد حسن نے بلدیاتی حلقہ بندیوں کے خلاف ایک ہی نوعیت کی 60 درخواستوں پر فیصلہ جاری کیا۔ 
 
عدالت نے درخواست گزاروں کو ہدایت کی کہ وہ 14جون کو الیکشن کمیشن میں پیش ہوں۔

لاہور ہائی کورٹ نے قرار دیا کہ حلقہ بندیوں کا فیصلہ حتمی سمجھا جاتا ہے اور اس کے خلاف اپیل کا حق موجود نہیں، الیکشن کمیشن انتخابات کرانے کیلئے آزاد اور غیر جانبدار آئینی ادارہ ہے اور وہی حلقہ بندیوں میں ترامیم کا اختیار رکھتا ہے۔

خیال رہے کہ درخواست گزاروں نے حلقہ بندیوں کے خلاف اپیل کا حق نہ ہونے پر عدالت سے رجوع کیا تھا۔

پاکستان

پی ٹی آئی رکن اسمبلی سعید آفریدی نے استعفیٰ دے دیا

کراچی: تحریک انصاف کے رہنما سعید آفریدی نے سندھ اسمبلی کی نشست سے استعفیٰ دے دیا۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

پی ٹی آئی رکن اسمبلی  سعید آفریدی نے استعفیٰ دے دیا

تفصیلات کے مطابق پی ٹی آئی رہنما سعید آفریدی نے اپنا استعفیٰ چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان اور اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی کو بھجوا دیا۔

 

 

سعید آفریدی کا کہنا تھا کہ ذاتی مصروفیات کے باعث سندھ اسمبلی کی نشست سے استعفیٰ دے رہا ہوں۔

ایم پی اے سعید آفریدی کے استعفے پر عمران خان زندہ باد بھی لکھا ہوا ہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

جولائی کے چوتھے ہفتے میں پاکستان آؤں گا، اسحاق ڈار

مسلم لیگ ن کے رہنما اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ وطن واپسی کا فیصلہ نوازشریف کے کہنے پر کیا، جولائی کے چوتھے ہفتے میں پاکستان آؤں گا۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

جولائی کے چوتھے ہفتے میں پاکستان آؤں گا، اسحاق ڈار

اپنے بیان میں انہوں نے کہا کہ وطن واپسی پر شہبازشریف کی رضامندی بھی شامل ہے، وزیرخزانہ بننے کا فیصلہ پارٹی کرے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ مجھے تحریک انصاف حکومت نے انتقام کا نشانہ بنایا، وطن واپسی سے قبل وکلا میری حفاظتی ضمانت کیلئے رجوع کریں گے۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز بی بی سی کو دیئے گئے انٹرویو میں ان کا کہنا تھا کہ وہ پاکستان واپسی کی تیاریوں میں مصروف ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ڈاکٹرز آئندہ چند روز میں میرے علاج کے مکمل ہونے کے بارے میں پرامید ہیں، پاکستان واپسی پر بطور سینیٹر حلف اٹھاؤں گا۔

2017 سے لندن میں مقیم سابق وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈارنے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ مجھ  پر پاکستان میں ایک ہی کیس ہے جو عمران نیازی کی جانب سے دائر کیا جانے والا جعلی مقدمہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ مجھ  پر جو جعلی کیس بنایا گیا اس کی کوئی بنیاد نہیں، یہ میرے ٹیکس ریٹرن پر بنایا گیا، میں ایسا شخص ہوں جو ٹیکس ریٹرن جمع کرانے میں کبھی تاخیر نہیں کرتا ہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

خیبرپختونخوا کے سرکاری دفاتر کو پیپر لیس بنانے کا فیصلہ

خیبرپختونخوا حکومت نے سرکاری دفاتر میں روایتی کاغذی فائلوں کے خاتمے کے منصوبے کا اعلان کردیا۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

خیبرپختونخوا کے سرکاری دفاتر کو پیپر لیس بنانے کا فیصلہ

خیبر پختونخوا حکومت نے ڈیجیٹل ٹرانسفرمیشن پروگرام کے سلسلے میں مختلف اداروں کے ساتھ معاہدوں پر دستخط کردیے۔

صوبائی حکومت نے صوبے میں سٹیزن فیسیلیٹیشن سنٹرز کے قیام کے لئے نادرا کے ساتھ معاہدے پر دستخط کیے۔

پروگرام کے پہلے مرحلے میں صوبے کے 7 ڈویژنل ہیڈکوارٹرز میں سٹیزن فسلیٹیشن سنٹر قائم کئے جائیں گے، حکام کے مطابق اگلے مرحلے میں سٹیزن فسلیٹیشن سنٹرز کو اضلاع تک توسیع دی جائے گی۔

فیسیلیٹیشن سنٹرز میں شہریوں کو مختلف شہری خدمات ایک ہی چھت تلے فراہم ہونگے جبکہ شہری مختلف نوعیت کی خدمات ویب پورٹل اور موبائل ایپ کے ذریعے گھر بیٹھے بھی حاصل کر سکیں گے۔

پروگرام کے تحت سرکاری محکموں کے جملہ امور کو ڈیجیٹلائز کیا جائے گا اور اس مقصد کے لئے سرکاری محکموں کے 170 امور کی نشاندہی کی گئی ہے۔

حکام کے مطابق پیپر لیس گورنمنٹ پروگرام پر عملدرآمد سے سرکاری محکموں کی استعداد میں بہتری کے ساتھ ساتھ سرکاری امور میں شفافیت اور احتساب کو یقینی بنایا جائے گا۔ پیپرلیس گورنمنٹ پروگرام تمام 32 انتظامی محکموں میں متعارف کروایا جائے گا۔

تقریب سے خطاب میں وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان کا کہنا تھا کہ صوبائی حکومت کا پیپر لیس گورنمنٹ پروگرام ڈیجیٹل گورننس کی طرف اہم اقدام ہے، ڈیجیٹل خیبرپختونخوا کی صورت میں عمران خان کے وژن ڈیجیٹل پاکستان کو عملی جامہ پہنائیں گے۔

وزیراعلیٰ محمود خان کا کہنا تھا کہ صوبائی حکومت محکموں میں پہلے ہی ای سمری متعارف کرا چکی ہے اور پیپر لیس گورنمنٹ پروگرام ڈیجیٹل گورننس کی طرف اہم اقدام ہے۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ صوبے میں تحریک انصاف حکومت کا دوسرا دور بھی آخری سال میں داخل ہوا لیکن حکومتی اعلانات کے مطابق اس عرصے میں زمینوں کا ریکارڈ کمپپوٹرائزڈ ہوا نہ ہی ارکان اسمبلی کمپوٹروں سے مستفید ہوئے۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll