جی این این سوشل

دنیا

چین کے ساتھ کوئی فوجی اتحاد نہیں بنا رہے:روسی صدر

روسی صدر ولادیمیر پیوٹن نے کہا ہے کہ چین کے ساتھ کوئی فوجی اتحاد نہیں بنا رہے۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

چین کے ساتھ کوئی فوجی اتحاد نہیں بنا رہے:روسی صدر
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

سرکاری ٹی وی کو دیے گئے انٹرویو میں روسی صدر نے کہا کہ چین کے ساتھ کوئی فوجی اتحاد نہیں بنا رہے۔ فوجی تکنیکی شعبے میں ہمارا تعاون ہے، ہم یہ نہیں چھپا رہے۔ یہ جو کچھ بھی ہو رہا ہے سب کچھ شفاف انداز میں ہو رہا ہے اس میں کوئی چیز نہیں چھپی ہوئی۔ مغربی طاقتیں عالمی سطح پر مزید اتحاد بنانے کی کوشش کر رہی ہیں۔

رائٹرز کے مطابق ولادیمیر پیوٹن نے امریکا اور نیٹو پر نیا ایکسز بنانے کا الزام لگایا ہے جو دوسری عالمی جنگ کے جرمنی، اٹلی، جاپان کے فوجی اتحاد سے مماثلت رکھتا ہے۔

اپنی بات کو جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اسی لیے مغربی تجزیہ کار۔ مغرب کے بارے میں بات کر رہے ہیں نیا ایکسز بنایا جا رہا ہے جیسا کہ 1930ء کی دہائی میں جرمنی، اٹلی کی فاشسٹ حکومتوں اور عسکریت پسند جاپان نے بنایا تھا۔’

یاد رہے کہ رواں ہفتے چین کے صدر شی جن پنگ نے روس کا دورہ کیا تھا۔ جہاں ان کی پیوٹن سے ملاقات ہوئی تھی اور تعلقات کو مزید مضبوط بنانے کا عہد کیا گیا تھا۔

جرم

جہلم : 2 گروپوںمیں خونی جھڑپ، 3 افراد ہلاک

فائرنگ کی اطلاع ملنے پر پولیس موقع پر پہنچ گئی، لاشوں کو قریبی ہسپتال منتقل کر دیا گیا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

جہلم : 2 گروپوںمیں خونی جھڑپ، 3 افراد ہلاک

جہلم شہر میں دو گروپوں میں تصادم کے نتیجہ میں 3 افراد ہلاک ہو گئے۔

تفصیلات کے مطابق جہلم کے علاقے میں 2 گروپوں کے درمیان تنازع پر فائرنگ کا تبادلہ ہوا جس کے نتیجے میں 3 افراد ہلاک ہو گئے۔

ذرائع کے مطابق فائرنگ کی اطلاع ملنے پر پولیس موقع پر پہنچ گئی۔ لاشوں کو قریبی ہسپتال منتقل کر دیا گیا۔

پولیس نے مقدمہ درج کر کے واقع کی تفتیش شروع کر دی۔ ابتدائی تفصیلات کے مطابق تنازع کی وجہ معلوم نہیں ہو سکی۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

آئی ایم ایف پروگرام پاکستان کی تاریخ کا آخری پروگرام ہو گا ، وزیر اعظم

وزیراعظم شہباز شریف نے کہا کہ اگر پوری قوم ذاتی دشمنیوں اور ذاتی مفادات کو ختم کرنے کا فیصلہ کر لے تو بہت جلد وہ مرحلہ آئے گا جس کا خواب بابائے قوم قائد اعظم محمد علی جناح نے دیکھا تھا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

آئی ایم ایف پروگرام پاکستان کی تاریخ کا آخری پروگرام ہو گا ، وزیر اعظم

اسلام آباد: وزیر اعظم شہباز شریف نے کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور فلسطین میں جنگ کی مذمت کرتے ہوئے کشمیر اور فلسطین دونوں کے عوام کی آزادی کے لیے دعا کی ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ ہم  نے اپریل 2022 میں دوبارہ اقتدار سنبھالا تو معاشی صورتحال سب کے سامنے بالکل واضح تھی۔


انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ ن کی قیادت میں پی ڈی جی حکومت نے ملک کو ڈیفالٹ سے بچایا۔ انہوں نے صدر آصف علی زرداری، پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو، مولانا فضل الرحمان اور دیگر کا ذکر کیا جنہوں نے ملک کو ڈیفالٹ سے بچانے میں کردار ادا کیا ، انہوں نے مزید کہا کہ آئی ایم ایف کا پروگرام پاکستان کی تاریخ کا سب سے آخری پروگرام ہو گا ۔ 


وزیراعظم شہباز شریف نے کہا کہ ملک اب معاشی استحکام کی طرف بڑھ رہا ہے اور یہ صورتحال طاقتور لوگوں سے قربانی مانگتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ جب انہوں نے 8 فروری 2024 کو دوبارہ اقتدار سنبھالا تو انہوں نے مہنگائی کو کنٹرول کرنے کے لیے اقدامات کیے جو کہ اب 38 فیصد سے بڑھ کر 12 فیصد پر ہے۔

انہوں نے کہا کہ قرضوں پر 22 فیصد سود کی شرح اب 20 فیصد ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح کی ترقی تحقیقات لائے گی اور ملک ترقی کی راہ پر گامزن ہو جائے گا۔ ۔ وزیر اعظم  نے کہا کہ  کہ عام آدمی کو کچھ ریلیف بھی فراہم کریں گے ۔

انہوں نے کہا کہ چار سالوں کے دوران عوام بالخصوص محنت کش طبقے کو مہنگائی کی وجہ سے بہت نقصان پہنچا۔ وزیر اعظم شہباز شریف نے کہا کہ وہ مہنگائی کو کم کرنے، کاروبار کو مضبوط کرنے اور نوجوانوں کو تعلیم دینے اور انہیں مالی خود مختاری کی طرف لانے کے لیے سخت محنت کریں گے۔

وزیراعظم شہباز شریف نے کہا کہ اگر پوری قوم ذاتی دشمنیوں اور ذاتی مفادات کو ختم کرنے کا فیصلہ کر لے تو بہت جلد وہ مرحلہ آئے گا جس کا خواب بابائے قوم قائد اعظم محمد علی جناح نے دیکھا تھا۔ 



 

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

ای آفس کے استعمال سے اربوں روپے بچائے جا سکیں گے، وزیراعظم

ای-آفس کے استعمال کا اصل مقصد عوام کو بہترین سروسز کی فراہمی اور حکومتی نظام میں شفافیت لانا ہے، شہباز شریف

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

ای آفس کے استعمال سے اربوں روپے بچائے جا سکیں گے، وزیراعظم

وزیراعظم شہباز شریف نے کہا کہ ای-آفس کے استعمال کا اصل مقصد عوام کو بہترین سروسز کی فراہمی اور حکومتی نظام میں شفافیت لانا ہے۔ای آفس پر منتقلی سے ملکی خزانے کے اربوں روپے بچائے جاسکیں گے۔

وزیراعظم کی زیر صدارت وفاقی حکومت کی وزارتوں اور اداروں کو الیکٹرانک-آفس (ای۔آفس) پر منتقل کرنے کے حوالہ سے اہم جائزہ اجلاس ہوا۔

وزیر اعظم کی چینی کمپنی ہواوے کے ساتھ تعاون کے معاہدے کے حوالے سے امور پر پیشرفت تیز کرنے کی ہدایت کر دی، اجلاس کو ای آفس کے نظام اور اسکے نفاذ اور اصلاحات پر پیش رفت کے حوالے سے آگاہ کیا گیا۔

وزیر اعظم آفس میڈیا ونگ سے جاری اعلامیہ کے مطابق وزیرِاعظم شہباز شریف کی زیرِ صدارت وفاقی حکومت کے دفاتر و اداروں میں ای آفس کے نفاذ کے حوالے سے اہم جائزہ اجلاس ہفتہ کو اسلام آباد میں منعقد ہوا۔  اجلاس کے شرکاء سے گفتگو کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ ای-آفس کے استعمال کا اصل مقصد عوام کو بہترین سروسز کی فراہمی اور حکومتی نظام میں شفافیت لانا ہے۔

انہوں نے کہا کہ کاغذ کا استعمال کم سے کم ہونے سے ماحول پر بھی مثبت اثرات مرتب ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ ای آفس پر منتقلی سے ملکی خزانے کے اربوں روپے بچائے جاسکیں گے۔ وزیراعظم نے ہدایت کی کہ ای آفس کو استعمال میں آسان اور محفوظ بنایا جائے۔ وزیر اعظم نے چینی کمپنی ہواوے کے ساتھ تعاون کے معاہدے کے حوالے سے امور پر پیشرفت تیز کرنے کی بھی ہدایت کی۔

اجلاس کو ای آفس کے نظام اور اسکے نفاذ اور اصلاحات پر پیش رفت کے حوالے سے آگاہ کیا گیا۔ بریفنگ کے دوران اجلاس کو بتایا گیا کہ ای-آفس کے نفاذ کی کامیابی جانچنے کے حوالے سے کی-پرفارمینس انڈیکیٹرز ترتیب دئے جا رہے ہیں، نیشنل انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ کی اوورہالنگ پر کام کا آغاز ہو چکا ہے۔

اجلاس میں وفاقی وزیرِ اقتصادی امور احد خان چیمہ، وزیرِ مملکت برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی شزہ فاطمہ خواجہ،وزیراعظم کے کوارڈینیٹر رانا احسان افضل اور متعلقہ اعلی حکام بھی شریک تھے۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll