جی این این سوشل

علاقائی

سندھ حکومت نے ورکرز کی کم از کم تنخواہ 33 ہزار 280 روپے مقرر کردی

سندھ حکومت کا کہنا ہے کہ حکومت کے اس اقدام پر عمل درآمد نہ کرنے والوں کے خلاف قانونی کاروائی عمل میں لائی جائے گی ۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

سندھ حکومت نے ورکرز کی کم از کم تنخواہ 33 ہزار 280 روپے مقرر کردی
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

سندھ حکومت نے ہنرمند مزدور طبقے کی کم از کم تنخواہ 33 ہزار 300 روپے مقرر کردی گئی ۔

سندھ حکومت کا کہنا ہے کہ حکومت کے اس اقدام پر عمل درآمد نہ کرنے والوں کے خلاف قانونی کاروائی عمل میں لائی جائے گی ۔

غیر ہنر مند مزدوروں کی تنخواہ 32000 روپے مقرر کردی گئی ، فیکٹری مالکان اب کم از کم 32000 روپے پر ملازم رکھ سکیں گے ۔

اس حکومتی فیصلے کا اطلاق جولائی 2023 سے کردیا گیا ہے ، ذوالفقار علی نامی  ورکرز  چیئرمین کی جانب سے احکامات جاری کیے گئے ہیں کہ جن فیکٹری مالکان کو اس فیصلے پر اعتراض ہے وہ اپنے اعتراضات 14 روز کے اندر جمع کروائیں ، بصورت دیگر کم ازکم 33 ہزار تنخواہ ادا کرنا ہوگی ۔

پاکستان

باڈر لائن کے دونوں جانب آج کشمیری یوم شہدا منا رہے ہیں

مقبوضہ جموں و کشمیر میں مکمل ہڑتال کی جائے گی اور سرینگر کے علاقے نقشبند صاحب میں واقع شہداقبرستان کی طرف مارچ کیا جائے گا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

باڈر لائن کے دونوں جانب آج  کشمیری یوم شہدا منا رہے ہیں

کنٹرول لائن کے دونوں جانب اور دنیا بھر میں مقیم کشمیری آج یوم شہدائے کشمیر منا رہے ہیں جس کا مقصد 13 جولائی 1931 اورتحریک آزادی کشمیرکے ان تمام شہداکو خراج عقیدت پیش کرنا ہے ۔جنہوں نے بھارتی غلامی سے آزادی کیلئے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا۔ مقبوضہ جموں و کشمیر میں مکمل ہڑتال کی جائے گی اور سرینگر کے علاقے نقشبند صاحب میں واقع شہداقبرستان کی طرف مارچ کیا جائے گا جہاں 13 جولائی کے شہدامدفون ہیں۔ ہڑتال کی اپیل کل جماعتی حریت کانفرنس کی نظر بند قیادت نے کی ہے۔

1931 میں آج کے روزڈوگرہ مہاراجہ کے فوجیوں کی گولیوں کا نشانہ بننے والے 22 کشمیری شہداکو خراج عقیدت پیش کرنے کیلئے آزاد کشمیر اور دنیا بھر کے بڑے شہروں میں ریلیوں، سیمینارزاور دیگر تقریبات کا اہتمام کیا جائے گا۔

 

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

بانی پی ٹی آئی کی 9 مئی کے 3 مقدمات میں گرفتاری کا امکان

دوسری جانب عمران خان کی اہلیہ بشریٰ بی بی کو بھی توشہ خانہ کیس میں گرفتار کیے جانے کا امکان ظاہر کیا جا رہا ہے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

بانی پی ٹی آئی کی 9 مئی کے 3 مقدمات میں گرفتاری  کا امکان

بانی پی ٹی آئی عمران خان کے خلاف 9 مئی کے 3 مقدمات میں گرفتاری ڈالنے کے لیے پولیس اڈیالہ جیل کے باہر پہنچ گئی۔ 
پاکستان تحریک انصاف کے بانی عمران خان کو حال ہی میں عدالت نے عدت نکاح کیس سے بری کر دیا، مگر سابق وزیر اعظم عمران خان کی گرفتاریوں کا خطرہ ابھی ٹلا نہیں ہے۔ 
ذرائع کے مطابق آج عدالت کے فیصلہ آنے سے قبل عدالت کےباہر پولیس کی بھاری نفری پہنچ گئی۔ 
پی ٹی آئی کے وکیل نعیم حیدرپنجھوٹہ نے ٹویٹ کرتے ہوئے بتایا کہ عدالت کے باہر پولیس کی اضافی نفری نظر آرہی ہے۔ پی ٹی آئی کے رہنماؤں نے عمران خان کی مزید کسی کیس میں گرفتاری ڈالنے کی مزمت کی۔ 
ذرائع نے دعویٰ کیا کہ عدالت کی جانب سے عدت نکاح کیس میں ریلیف ملنے کے بعد پولیس نفری 9 مئی کے 3 مقدمات میں گرفتار کرنے کے لیے اڈیالہ جیل پہنچ گئی۔ 
دوسری جانب عمران خان کی اہلیہ بشریٰ بی بی کو بھی توشہ خانہ کیس میں گرفتار کیے جانے کا امکان ظاہر کیا جا رہا ہے۔ 
عمران خان پر القادر ٹرسٹ کیس سمیت 9 مئی کے مقدمات بھی درج ہیں، جن پر ابھی فیصلہ آنا باقی ہے۔ بانی پی ٹی آئی عمران خان پر عائد تمام مقدمات کے فیصلوں تک عمران خان جیل سے باہر نہیں آسکیں گے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

عدت نکاح کیس : بانی پی ٹی آئی کی سزا کیخلاف اپیلوں پر فیصلہ محفوظ، آج سنایا جائیگا

عدت نکاح کیس میں سزا کیخلاف اپیلوں پر سماعت ایڈیشنل اینڈ سیشن جج افضل مجوکا نے کی

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

عدت نکاح کیس : بانی پی ٹی آئی کی سزا کیخلاف اپیلوں پر فیصلہ محفوظ، آج سنایا جائیگا

 

اسلام آباد کی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن عدالت نے سابق وزیر اعظم عمران خان اور ان کی اہلیہ بشریٰ بی بی کے خلاف عدت نکاح کیس میں سزا کے خلاف اپیلوں پر فیصلہ محفوظ کرلیا جسے دوپہر 3 بجے سنایا جائے گا۔

عدت نکاح کیس میں خاور مانیکا کے وکیل زاہد آصف ایڈووکیٹ اور عمران خان کے وکیل عمران صابر، مرتضیٰ طوری، زاہد ڈار عدالت میں پیش ہوئے۔

وکیل زاہد آصف نے مؤقف اپنایا کہ اگر ملزمان کوئی مزید شواہد پیش کرنا چاہتے ہیں ، تو پیش کر سکتے ہیں، ہمیں کوئی اعتراض نہیں، مزید کہنا تھا کہ کسی بھی پارٹی سے ان کے فقہ کے بارے میں نہیں پوچھا گیا۔

وکیل زاہد آصف نے دلائل دیے کہ مفتی سعید نے بھی نہیں کہا کہ ملزمان حنفی فقہ سے ہیں، سلمان اکرم راجہ کہتے ہیں کہ ان کے کلائنٹ بانی پی ٹی آئی عمران خان نے شادی کی ہے انہیں عدت کے بارے میں علم نہیں۔

وکیل زاہد آصف کا کہنا تھا کہ تمام تر ذمہ داری بشری بی بی کے کندھوں پر منتقل کی جارہی ہے، شوہر عورت کی قربانیوں کو سائیڈ پر رکھ کر کہہ رہا ہے میں نے کچھ نہیں کیا، خاتون مشکل وقت میں خاوند کے ساتھ کھڑی رہی۔

وکیل زاہد آصف نے دلائل جاری رکھتے ہوئے کہا کہ ایک لیڈر سے ایسی توقع نہیں کی جاسکتی، بیوی بنی گالہ کی آسائش چھوڑ کر اڈیالہ جیل تک چلی گئی، ایسے ہو ہی نہیں سکتا اگر شادی ہوئی تو دونوں ذمہ دار ہیں۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بشری بی بی کی جانب سے کہا گیا کہ اپریل 2017 میں زبانی طلاق دی گئی، اگر خاتون کہتی ہے کہ اسے زبانی طلاق دی گئی تو کیا اس کی زبانی بات پر اعتبار کیا جائے گا، زبانی طلاق کی کوئی حیثیت نہیں ہے اس حوالے سے عدالتی فیصلے موجود ہیں، قانون کہتا ہے دستاویزی ثبوت زبانی بات پر حاوی ہو گا۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بشری بی بی نے کس بیان میں کہا شادی عدت کے دوران نہیں ہوئی، مفتی سعید نے بشری بی بی کی بہن کے کہنے پر کہ شادی کے لوازمات پورے ہیں نکاح پڑھوایا، کسی جگہ بشری بی بی نے مفتی سعید کو نہیں کہا کہ انکی عدت پوری ہے ، جس بہن نے عدت پوری ہونے کا کہا اسے پھر بطور گواہ لایا جاتا۔

جج افضل مجوکا نے کہا کہ پراسیکوشن کی ڈیوٹی ہے کہ وہ ثابت کرے کہ عدت پوری نہیں، 16وکیل زاہد آصف نے کہا کہ جنوری 2024 کو بشری بی بی پر فرد جرم عائد ہوئی اور صحت جرم سے انکار کیا، بشری بی بی نے نہیں کہا کہ انھوں نے عدت مکمل ہونے پر شادی کی، بانی پی ٹی آئی کا بیان پر فرد جرم عائد ہوئی، جس کے جواب میں بانی پی ٹی آئی نے کہا کہ یہ جھوٹا کیس ہے اور لندن پلان کا حصہ ہے اور اس کا مقصد پارٹی کا ختم کرنا اور سافٹ ویئر اپ ڈیٹ کرنا ہے۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بانی پی ٹی آئی نے بھی کہیں نہیں کہا کہ انھوں نے عدت مکمل ہونے پر شادی کی، اگر ٹرائل کورٹ میں کوئی غیر قانونی کام ہوا تو کیا کیس ریمانڈ بیک کروانا چاہتے ہیں۔

وکیل عثمان گل نے کہا کہ ہم کیس ریمانڈ بیک نہیں بلکہ ہائی کورٹ کی ٹائم لائن کے مطابق اپیلوں پر فیصلہ چاہتے ہیں۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بشری بی بی کا کوئی بیان دکھا دیں جس میں کہا گیا ہو کہ عدت مکمل کرنے پر شادی کی، پوری کیس فائل میں ایسا بیان موجود نہیں، بطور گواہ عدالت میں پیش ہونے سے بھی دونوں ملزمان نے انکار کیا، بانی پی ٹی آئی اور بشری بی بی اس کیس میں بہترین گواہ تھے۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بانی پی ٹی آئی اور بشری بی بی حلف پر اپنے حق میں گواہی دیتے، طلاق ڈیڈ پر ٹمپرنگ کا کہا گیا مگر شواہد پیش نہیں کیے گئے، ہم مطمئن ہیں کہ طلاق ڈیڈ پر کوئی ٹمپرنگ نہیں، اپریل میں کوئی طلاق نہیں دی نومبر 2017 خاور مانیکا نے تحریری طلاق دی۔

انہوں نے مؤقف اپنایا کہ قرآن پاک میں ہے دوران عدت رجوع کرنے کا حق اور عدت مکمل ہونے پر دوسری شادی کی اجازت دی گئی، عدت کے دوران دوسری شادی کا فیصلہ بھی نہیں کیا جا سکتا، اسلام کہتا ہے کہ اکٹھی تین طلاقوں کو ایک تصور کیا جائے گا، خاور مانیکا نے کہیں نہیں کہا کہ وہ فقہ حنفی سے ہیں وہ بطور مسلمان عدالت میں پیش ہوئے ہیں۔

وکیل زاہد آصف کا کہنا تھا کہ جب تک عدت مکمل نہیں ہوتی خاتون طلاق دینے والے کی بیوی ہی تصور گی۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll