جی این این سوشل

دنیا

3 بار وزیراعظم بننے والے کو چوتھی بار لانے کی کوشش کی جا رہی ہے، چیئرمین پیپلز پارٹی

پیپلز پارٹی عوام کے ساتھ مل کر یہ منصوبہ ناکام بنائے گی، بلاول بھٹو زرداری

پر شائع ہوا

کی طرف سے

3 بار وزیراعظم بننے والے کو چوتھی بار لانے کی کوشش کی جا رہی ہے، چیئرمین پیپلز پارٹی
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

پاکستان پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ  3 بار وزیراعظم بننے والے کو چوتھی بار لانے کی کوشش کی جا رہی ہے، پیپلز پارٹی عوام کے ساتھ مل کر یہ منصوبہ ناکام بنائے گی۔ اسلام آباد کے بابو کی سوچ اور ذہنیت نہیں بدلی، اسلام آباد میں بیٹھے بابو خود کام کرتے ہیں نہ کسی کو کرنے دیتے ہیں۔

کوئٹہ میں لوکل کونسل ایسوسی ایشن آف بلوچستان کے سالانہ جنرل اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے سابق وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ اگر ہم مل کر کام کریں گے تو عوام کے مسائل حل کرسکتے ہیں، موسمیاتی تبدیلی کی وجہ سے پاکستان کو نقصان ہورہا ہے، موسمیاتی تبدیلی ایک بہت بڑا چیلنج ہے۔ میران یہ اعتراض نہیں کہ وہ بزرگ ہو چکے ہیں ، آپ بزرگ ہو کر بھی نئی سیاست لا سکتے ہیں۔

بلاول بھٹو نے مزید کہا کہ موسمیاتی تبدیلی سے سندھ اور بلوچستان کو شدید نقصان اٹھانا پڑا، موسمیاتی تبدیلی کے چیلنج سے نمٹنے کے لیے مستقبل کی منصوبہ بندی اشد ضروری ہے، موسمیاتی تبدیلی کے چیلنجز سے نمٹنے کے لیے دنیا کے ساتھ مل کر کام کرنا ہوگا۔

چیئرمین پیپلز پارٹی کا کہنا تھا کہ حکومت ملی تو بلوچستان کے دورافتادہ علاقوں میں بجلی کے مسائل کریں گے، بجلی کے مسائل کے حل کے لیے قابل تجدید توانائی ذرائع کی طرف جانا ہوگا، آپ لوگ گراس روٹ کے مسائل جانتے ہیں، آپ کے پاس لوکل ایشوز کی نشاندہی کی صلاحیت ہے، صوبے کا بجٹ کیا ہونا چاہیئے لوکل باڈی نمائندگان سے بھی پوچھنا چاہیئے۔

انہوں نے کہا کہ اسلام آباد میں بیٹھے بابو کو نہیں پتہ مسائل کیا ہیں، اسلام آباد میں بیٹھے بابو خود کام کرتے ہیں نہ کسی کو کرنے دیتے ہیں، ہمیں اپنا ترقیاتی پلان تبدیل کرنا ہوگا، پسماندہ علاقوں میں سرمایہ کاری کرنی ہوگی۔

بلاول بھٹو زرداری کا مزید کہنا تھا کہ کہا جاتا ہے میاں صاحب تیسری بار وزیراعظم بنے تو لوڈشیڈنگ ختم کی، سوچتا ہوں کون سا پاکستان ہے، جہاں 18 گھنٹے لوڈشیڈنگ ہوتی ہے، لوڈشیڈنگ کے خاتمے کے لیے گرین انرجی پارکس بنائیں گے۔

علاقائی

پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ اسد منظور بٹ لاہور ہائیکورٹ کے صدر بن گئے

لاہور ہائی کورٹ بار کے انتخابات میں کل 41ہزار 673 وکلاءہیں ان میں رجسٹرڈ ووٹوں کی تعداد 29ہزار 216 تھی ان میں خواتین ووٹر کی تعداد 2ہزار 101ہے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ اسد منظور بٹ لاہور ہائیکورٹ کے صدر  بن گئے

لاہور ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے سالانہ انتخابات میں پروفیشنل حامد خان گروپ نے عاصمہ جہانگیر گروپ کو شکست سے دو چار کردیا ۔پروفیشنل حامد خان گروپ کے صدارتی امیدوار  اسد منظور بٹ 6ہزار 195ووٹوں سے صدر منتخب ہوگئے ان کے مدمقابل  امیدوار ثاقب اکرم گوندل 5ہزار 768ووٹ حاصل کرسکے سیکرٹری کے عہدے پر دوبارہ انتخابات میں حصہ لینے والے ” قادر بخش چاہل نے کامیابی اپنے نام سمیٹی انہوں نے 7ہزار 119ووٹ لیے اسی طرح ان کے مد مقابل دونوں امیدواروں میں قاسم اعجاز سمراء3ہزار 553جبکہ تیسرے امیدوار آصف محمود چوہان 1ہزار 260ووٹ لے سکے اسی طرح لاہور ہائی کورٹ بار کے انتخابات میں نائب صدر کے لیے ” میاں سردار علی گہلن“ 3ہزار 344ووٹ لے کر کامیاب قرار پائے ہیں ان کے مد مقابل عبدالرحمان رانجھا 2ہزار 998ووٹ لے سکے حسیب بن یوسف 1905، ملک فدا حسین 1677، مظہر عباس سیال 615، اور میاں وحید نذیر 1369ووٹ لے سکے اسی طرح لاہور ہائی کورٹ بار کے انتخابات میں فنانس کے عہدے کے لیے تین امیدوار آمنے سامنے تھے ان میں خاتون وکیل فلک ناز گِل کامیاب قرار پائی ہیں انہوں نے 5ہزار 503ووٹ لیے ان کے مد مقابل حام بن شعیب کمبوہ 5ہزار 33اور فرخ شاہ 1389ووٹ لے سکے ۔

لاہورہائی کورٹ بار کے انتخابات میں دو بڑے گروپوں کے درمیان کانٹے دار مقابلہ دیکھنے کا ملا عاصمہ جہانگیر احسن بھون گروپ اور پروفیشنل حامد خان گروپ کے درمیان مقابلہ ہوا پولنگ کے دن سارا دن خوب گہما گہمی رہی وکلاءنے بڑھ چڑھ کر الیکشن میں حصہ لیا اور اپنے حمایت یافتہ امیدوار کو سپورٹ کیا جبکہ لیڈی لائرز کی جانب سے اپنے امیدواروں کے حق میں نعرے بازی بھی کرتی دکھائی دیں ۔

لاہور ہائی کورٹ بار کے انتخابات میں کل 41ہزار 673 وکلاءہیں ان میں رجسٹرڈ ووٹوں کی تعداد 29ہزار 216 تھی ان میں خواتین ووٹر کی تعداد 2ہزار 101ہے جبکہ مرد ووٹر 27ہزار 115 تھی لاہور ہائی کورٹ بار کے انتخابات میں الیکشن بورڈ کے چیئر مین کے فرائض میاں عرفان اکرم انجام دیئے جبکہ ان کا ساتھ دینے کے لیے حسیب اللہ خان اور خداداد چٹھہ ڈپٹی چیئر مین کے فرائض سر انجام دیئے انتخابات کے دوران سیکورٹی کے فول پروف انتظامات کئے گئے ہائی کورٹ کے تمام داخلی راستوں پر واک تھرو گیٹ نصب کئے گئے تھے جبکہ وکلاءکو کارڈ دکھائے بغیر داخل نہیں ہونے دیا گیا۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

ایرانی وزیرِ خارجہ کی پاکستان میں انتخابات کے انعقاد پر مبارکباد

ایرانی وزیر خارجہ نے پارلیمانی انتخابات کے کامیاب انعقاد پر نگراں حکومت کو مبارکباد پیش کی

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

ایرانی وزیرِ خارجہ کی پاکستان میں انتخابات کے انعقاد پر مبارکباد

پاکستان اور ایران نے باہمی دلچسپی کے تمام شعبوں میں دوطرفہ تعاون کو مزید مضبوط بنانے کے عزم کا اعادہ کیا ہے۔

اس عزم کا اظہار آج وزیر خارجہ جلیل عباس جیلانی اور ان کے ہم منصب ایران کے وزیرِ خارجہ حسین امیر  کے درمیان ٹیلی فونک گفتگو میں کیا گیا۔

ایرانی وزیر خارجہ نے پارلیمانی انتخابات کے کامیاب انعقاد پر نگراں حکومت کو مبارکباد پیش کی اور جلیل عباس جیلانی نے ایران کے برادر عوام کی جانب سے نیک خواہشات کو دل کی گہرائیوں سے سراہا۔

رواں ماہ کے اوائل میں ایرانی وزیر خارجہ کے دورہ پاکستان کے بعد سے دونوں ممالک نے سرکاری مصروفیات کو مکمل طور پر بحال کر دیا ہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

تجارت

سوتی دھاگہ کی برآمدات میں 49 فیصد اضافہ

گزشتہ مالی سال برآمدات سے ملک کو 449 ملین ڈالر کا زرمبادلہ حاصل ہوا تھا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

سوتی دھاگہ کی برآمدات میں 49 فیصد اضافہ

اسلام آباد: سوتی دھاگہ کی برآمدات میں جاری مالی سال کے پہلے 7 ماہ میں سالانہ بنیادوں پر 49 فیصد کی نمو ریکارڈ کی گئی ہے۔

پاکستان بیورو برائے شماریات کے اعدادوشمار کے مطابق مالی سال کے پہلے 7 ماہ میں سوتی دھاگہ کی برآمدات سے ملک کو 670 ملین ڈالر کا زرمبادلہ حاصل ہوا جو گزشتہ مالی سال کی اسی مدت کے مقابلے میں 49 فیصد زیادہ ہے۔

گزشتہ مالی سال کی اسی مدت میں سوتی دھاگہ کی برآمدات سے ملک کو 449 ملین ڈالر کا زرمبادلہ حاصل ہوا تھا۔ جنوری میں سوتی دھاگہ کی برآمدات کا حجم 81 ملین ڈالر ریکارڈ کیا گیا جو گزشتہ سال جنوری کے مقابلے میں 20 فیصد زیادہ ہے۔ گزشتہ سال جنوری میں سوتی دھاگہ کی برآمدات سے ملک کو 68 ملین ڈالر کا زرمبادلہ حاصل ہوا تھا۔

دسمبر کے مقابلے میں جنوری میں سوتی دھاگہ کی برآمدات میں ماہانہ بنیادوں پر 15 فیصد کی کمی ہوئی ہے۔ دسمبر میں سوتی دھاگہ کی برآمدات سے ملک کو 95 ملین ڈالر حاصل ہوئے جو جنوری میں کم ہو کر 81 ملین ڈالر ہوگئے۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll