جی این این سوشل

دنیا

کرغزستان :مقامی افراد کے پاکستانی طلبہ پر حملے، متعدد زخمی

گورنر سندھ کامران ٹیسوری اور مشیر اطلاعات خیبر پختونخوا بیرسٹر محمد علی سیف کا پاکستانیوں پر حملوں کے واقعات پر اظہار تشویش

پر شائع ہوا

کی طرف سے

کرغزستان :مقامی افراد کے پاکستانی طلبہ پر حملے، متعدد زخمی
کرغزستان :مقامی افراد کے پاکستانی طلبہ پر حملے، متعدد زخمی

کرغزستان کے دارالحکومت بشکیک میں طلبہ گروہوں کے درمیان ہنگامہ آرائی ہوئی ہے۔ اس ہنگامہ آرائی میں ملکی اور غیرملکی طلبہ میں لڑائی سے پاکستانی طلبہ بھی زد میں آگئے۔

مشتعل کرغز طلبہ نے پاکستانی طلبہ کے ہاسٹلز پر حملے میں متعدد پاکستانی طلبہ کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔

بشکیک میں تشدد کے واقعات میں پاکستانی طلبہ تشویش کا شکار ہیں۔ پاکستانی طلبہ کے ہاسٹلز پر حملے میں متعدد طلبہ کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔

ایک پاکستانی طالبعلم کا کہنا تھا کہ پاکستانی طالبات کو ہراساں کیا جارہا ہے۔ ہوسٹل میں لڑکوں اور لڑکیوں پرتشدد کیا گیا۔ کرغز طلبہ پورے بشکیک میں غیرملکی طلبہ وطالبات پر حملے کر رہے ہیں۔

دوسری جانب گورنر سندھ کامران ٹیسوری اور مشیر اطلاعات خیبرپختونخوا بیرسٹر محمد علی سیف نے کرغزستان میں پاکستانیوں سمیت غیر ملکی طلبہ پر حملوں کے واقعات پر تشویش کا اظہار کردیا ہے۔

اپنے بیان میں گورنر سندھ کامران ٹیسوری نے کہا کہ کرغزستان کے دارالحکومت بشکیک سمیت مختلف شہروں میں پاکستانی طلبہ کی بڑی تعداد زیرتعلیم ہے، کرغز حکومت طلبہ پر تشدد اور طالبات کو ہراساں کرنے کے معاملے کا نوٹس لے۔

کامران ٹیسوری نے مزید کہا کہ پاکستانی طالبات کو ہراساں کیا جانا انتہائی تشویش ناک ہے، پاکستانیوں سمیت تمام غیر ملکی طلبہ کی جان ومال کی حفاظت یقینی بنائی جائے۔

مشیر اطلاعات خیبرپختونخوا بیرسٹرمحمد علی سیف نے کہا کہ کرغزستان میں پاکستانی طلبہ پر حملوں کی خبریں تشویش ناک ہیں۔

پاکستان

پی ڈی ایم اے نے پنجاب میں مون سون ہواؤں کی پیش گوئی کردی

پی ڈی ایم اے کے نوٹیفکیشن کے مطابق جولائی کے پہلے ہفتے میں 15 سے 50 ملی میٹر اور دوسرے ہفتے میں 25 سے 35 ملی میٹر بارش کا امکان ہے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

پی ڈی ایم اے نے پنجاب میں مون سون ہواؤں کی پیش گوئی کردی

لاہور: پراونشل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (پی ڈی ایم اے) نے اتوار کو صوبے بھر کی انتظامیہ کو مون سون کی بارشوں کے حوالے سے نوٹیفکیشن جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس سال 35 فیصد زیادہ بارشوں کا امکان ہے۔

پی ڈی ایم اے نے یکم جولائی سے پنجاب میں مون سون بارشوں کے آغاز کی پیش گوئی کی ہے۔

پی ڈی ایم اے کے نوٹیفکیشن کے مطابق جولائی کے پہلے ہفتے میں 15 سے 50 ملی میٹر اور دوسرے ہفتے میں 25 سے 35 ملی میٹر بارش کا امکان ہے۔

نوٹیفکیشن میں بتایا گیا ہے کہ جولائی کے تیسرے ہفتے بالائی اور جنوبی پنجاب میں 15 سے 25 ملی میٹر جبکہ چوتھے ہفتے میں 50 سے 70 ملی میٹر بارش ہو سکتی ہے۔ بالائی، وسطی اور جنوبی پنجاب میں گرج چمک کے ساتھ موسلادھار بارش کا امکان ہے۔

پی ڈی ایم اے کے نوٹیفکیشن میں جولائی میں مون سون کی بارشوں کی وجہ سے جنوبی پنجاب میں شہری سیلاب اور پہاڑی طوفان کے خطرے سے خبردار کیا گیا ہے۔

وزیر اعلیٰ مریم نواز کی ہدایات کے مطابق متعلقہ محکموں کو الرٹ کر دیا گیا ہے۔

ڈی جی پی ڈی ایم اے عرفان علی کاٹھیا نے اس بات پر زور دیا کہ ضلعی انتظامیہ مون سون کی بارشوں سے قبل تمام احتیاطی تدابیر کو یقینی بنائے اور ندی نالوں اور نکاسی آب کے نظام کی صفائی کا کام جلد از جلد مکمل کیا جائے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

پاکستان تحریک انصاف کی کسی بھی ملٹری آپریشن کی مخالفت

اس موقع پر اپوزیشن لیڈر عمر ایوب کا کہنا تھا کہ کسی بھی قسم کا آپریشن کرنے سے پہلے پارلیمان کو اعتماد میں لیں

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

پاکستان تحریک انصاف کی کسی بھی ملٹری آپریشن کی مخالفت

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) نے کسی بھی ملٹری آپریشن کی مخالفت کر دی۔

قومی اسمبلی کے بجٹ اجلاس سے احتجاجاً واک آؤٹ کرنے کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے پی ٹی آئی چیئرمین بیرسٹر گوہر خان نے کہا کہ کسی بھی آپریشن کے لیے پارلیمان کو اعتماد میں لینا ضروری ہے، کوئی بھی کمیٹی کتنی ہی بڑی ہو آئین کے مطابق پارلیمان سپریم ہے۔

بیرسٹر گوہر نے مزید کہا کہ ہم اپنے آئینی فرائض سرانجام دے رہے ہیں، ہمارا مطالبہ یہی ہے کہ پارلیمان کو اعتماد میں لیے بغیر کوئی آپریشن شروع نہ ہو، ہمیں ٹائم نہیں ملا اس لیے ہم نے اجلاس سے واک آوٹ کر دیا۔

انہوں نے کہا کہ اپوزیشن کے بغیرجمہوریت نہیں ڈکٹیٹر شپ ہوتی ہے، اپوزیشن کاسب سے زیادہ کردار ہوتا ہے، پوائنٹ آف آرڈر پر بات کرنے کی اجازت مانگی تھی، کوئی بھی کمیٹی آئین کو نظر انداز نہیں کرسکتی، پہلے بھی فوجی آپریشن کے لیے پارلیمان نے آئین میں ترمیم کی، کسی آپریشن کے لیے پارلیمان کو اعتماد میں لینا ضروری ہے۔

 

“اتنے بڑے فیصلے پر پارلیمان کو اعتماد میں نہیں لیا جارہا”

دوسری جانب میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے پی ٹی آئی کے رہنما اسد قیصر نے کہا کہ اتنے بڑے فیصلے پر پارلیمان کو اعتماد میں نہیں لیا جارہا، ایک طرف آپریشن، دوسری طرف فاٹا، پاٹا پر ٹیکس لگائے جارہے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ مارشل لا ذہنیت ہے، بہت سے آپریشن ہوئے آج تک کونسا آپریشن کامیاب ہوا؟ میڈیا نمائندگان پر پابندیاں لگی ہوئی ہیں۔

“کسی بھی قسم کا آپریشن کرنے سے پہلے پارلیمان کو اعتماد میں لیں”

اس موقع پر اپوزیشن لیڈر عمر ایوب کا کہنا تھا کہ کسی بھی قسم کا آپریشن کرنے سے پہلے پارلیمان کو اعتماد میں لیں، چین سے آئے ساتھیوں نے واضح طور پر کہا تھا سی پیک پر سیکیورٹی خدشات ہیں، بانی پی ٹی آئی کئی بار کہہ چکے ہیں ملک میں امن رول آف لاء سے آئے گا، ملک میں رول آف لاء ہوگا تب ملک ترقی کرے گا۔

انہوں نے کہا کہ ہم عوام کی نمائندگی کررہے ہیں، ان کا رویہ اپوزیشن کے ساتھ ٹھیک نہیں، فارم 45 کےتحت پی ٹی آئی کی 180 سیٹیں بنتی ہیں، ایوان میں بات کرنی چاہی تو اسپیکر نے موقع نہیں دیا۔

عمر ایوب نے مزید کہا کہ موجودہ حکومت اینٹی اسٹیٹ ہے، یہ بجٹ اقتصادی دہشتگرد کا بجٹ ہے اسے مسترد کرتے ہیں۔

 

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

قومی اسمبلی میں آئندہ مالی سال25-2024 کے بجٹ پر بحث جاری

شاہدہ اختر علی نے صحت اور تعلیم کے شعبوں کیلئے بجٹ بڑھانے کی تجویز دی انہوں نے کارکن طبقہ کی تنخواہوں اورمراعات میں اضافے کی بھی تجویز دی

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

قومی اسمبلی میں آئندہ مالی سال25-2024 کے بجٹ پر بحث جاری

قومی اسمبلی میں آئندہ مالی سال25-2024 کے بجٹ پر بحث جاری ہے ۔

بحث میں حصہ لیتے ہوئے ڈاکٹر مہیش کمار ملانی نے زندگی بچانے والی ادویات پر ٹیکس واپس لینے کی تجویز دی تاہم انہوں نے پرتعیش اشیاء پر ٹیکس عائد کرنے کا خیرمقدم کیا ۔

ڈاکٹر مہیش کمار ملانی نے تمام سیاسی جماعتوں پر زوردیا کہ وہ اپنے اختلافات ختم کریں اور مذاکرات کی میز پر بیٹھیں تاکہ ملک کو بحرانوں سے نکالنے کیلئے مشترکہ حکمت عملی وضع کی جاسکے۔

شاہدہ اختر علی نے صحت اور تعلیم کے شعبوں کیلئے بجٹ بڑھانے کی تجویز دی انہوں نے کارکن طبقہ کی تنخواہوں اورمراعات میں اضافے کی بھی تجویز دی ۔

وزیر دفاع خواجہ محمد آصف نے کہا ہے کہ آئین مذہب اور عقیدے کے امتیاز کے بغیر ہرشہری کے حقوق کا تحفظ کرتا ہے اور مذہب کے نام پرہجوم کے ہاتھوں قتل کی اجازت نہیں دی جاسکتی۔

قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ ملک سے انتہاپسندی اور دہشت گردی کے خاتمے کیلئے آپریشن عزم استحکام شروع کرنے کے فیصلے کو کابینہ کے علاوہ ایوان میں مزید بحث کیلئے پیش کیاجائے گا ۔

انہوں نے کہاکہ حزب اختلاف اپنے تحفظات اور تجاویز ایوان میں پیش کرسکتی ہے۔ انہوں نے مزید کہاکہ خیبرپختونخوا کے وزیراعلی علی امین گنڈا پور گزشتہ روز ایپکس کمیٹی کے اجلاس میں شریک تھے جس میں عزم استحکام کی منظوری دی گئی ۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll