جی این این سوشل

تجارت

مالی سال 25-2024 کیلئے 18 ہزار 877 ارب روپے کا بجٹ پیش کرد یا گیا

پنشن اخراجات کیلئے ایک ہزار چودہ ارب روپے اور بجلی، گیس اور دوسرے شعبوں پر اعانت کے طور پر ایک ہزار تین سو تریسٹھ ارب روپے مختص کئے گئے ہیں

پر شائع ہوا

کی طرف سے

مالی سال 25-2024 کیلئے 18 ہزار 877 ارب روپے کا بجٹ پیش کرد یا گیا
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

آئندہ مالی سال کے وفاقی بجٹ کا اعلان کر دیا گیا ہے جس کا مجموعی حجم اٹھارہ ہزار آٹھ سو ستتر ارب روپے ہے۔

بجٹ میں مالیاتی نظم وضبط اور عام آدمی کے لئے سہولت فراہم کرنے پر خصوصی توجہ دی گئی ہے۔

وزیر خزانہ محمد اورنگزیب نے آج تیسرے پہر قومی اسمبلی میں بجٹ تجاویز پیش کرتے ہوئے کہا کہ ایف بی آر کے جانب سے جمع کئے گئے محاصل کا تخمینہ بارہ ہزار نو سو ستر ارب روپے بنتا ہے جو ختم ہونے والے مالی سال کے مقابلے میں اڑتیس فیصد زیادہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ وفاقی محاصل میں صوبوں کا حصہ سات ہزار چار سو اڑتیس روپے اور ٹیکس کے بغیر محاصل کا تخمینہ تین ہزار پانچ سو ستاسی ارب روپے ہے۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ آئندہ مالی سال میں مجموعی ملکی پیداوار کی شرح نمو 3.6 فیصد رہنے کی توقع ہے۔

انہوں نے کہاکہ افراط زر کی شرح بارہ فیصد اور بجٹ خسارہ 5.9 فیصد رہنے کا امکان ہے ، انہوں نے کہاکہ سود کی ادائیگی کا تخمینہ نوہزار سات سوپچھہتر ارب روپے ہے ، محمد اورنگزیب نے کہاکہ سرکاری شعبے کے ترقیاتی پروگرام کیلئے چودہ سو ارب روپے رکھے گئے ہیں ، انہوں نے کہاکہ سرکاری اور نجی شعبے کی شراکت والے منصوبوں کیلئے اضافی ایک سو ارب روپے رکھے گئے ہیں ۔

انہوں نے کہاکہ دفاعی ضروریات کیلئے دوہزار ایک سو بائیس ارب روپے فراہم کئے جائیںگے، وزیر خزانہ نے کہا کہ شہری انتظامیہ کے اخراجات کیلئے آٹھ سو انتالیس ارب روپے رکھے کئے ہیں۔

پنشن اخراجات کیلئے ایک ہزار چودہ ارب روپے اور بجلی، گیس اور دوسرے شعبوں پر اعانت کے طور پر ایک ہزار تین سو تریسٹھ ارب روپے مختص کئے گئے ہیں۔

محمد اورنگزیب نے کہا کہ بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام، آزادجموںوکشمیر، گلگت بلتستان، ضم شدہ اضلاع، اعلیٰ تعلیمی کمیشن، پاکستان ریلوے اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کے شعبے کیلئے ایک ہزار سات سو ستتر ارب روپے کی گرانٹس مختص کی گئی ہیں۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ ترقیاتی بجٹ کا بڑا حجم بنیادی ڈھانچے، نقل و حمل، توانائی اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کے شعبوں کی ترقی اور آبی وسائل کے نظم و نسق میں مسائل کے حل کیلئے حکومت کے عزم کی عکاسی کرتا ہے۔

 محمد اورنگزیب نے کہا کہ سرکاری شعبے کے زیرتکمیل ترقیاتی پروگرام آئندہ مالی سال میں مکمل کرنے کو ترجیح دی جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ بنیادی سہولیات کے نظام کی ترقی حکومت کی بنیادی ذمہ داری ہے اور اس مقصد کیلئے رقم کا انسٹھ فیصد مختص کرنے کی تجویز ہے۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ متوازن علاقائی ترقی کو یقینی بنانا ایک آئینی ذمہ داری ہے۔

اس لئے آزادجموں وکشمیر، گلگت بلتستان اور قبائلی اضلاع کے لئے دس فیصد وسائل مختص کئے گئے ہیں جبکہ آئی ٹی اور ٹیلی کام، سائنس اور ٹیکنالوجی، نظم و نسق اور پیداوار جیسے دوسرے شعبوں کے لئے تقریباً گیارہ اعشاریہ دو فیصد وسائل رکھے گئے ہیں۔

 وزیر خزانہ نے کہا کہ بنیادی ڈھانچے کیلئے سرکاری شعبے کے ترقیاتی پروگرام میں آٹھ سو چوبیس ارب روپے تجویز کئے گئے ہیں۔

توانائی کے شعبے کیلئے دو سو تریپن ارب روپے، ٹرانسپورٹ اورمواصلات کے شعبوں کیلئے دوسو اناسی ارب روپے، پانی کے شعبے کیلئے دو سو چھ ارب روپے اور منصوبہ بندی اور ہاؤسنگ کیلئے چھیاسی ارب روپے رکھے گئے ہیں۔

سماجی شعبے کیلئے دو سو اسی ارب روپے مختص کئے گئے ہیں جبکہ ختم ہونے والے مالی سال کیلئے دو سو چوالیس ارب روپے مختص تھے۔

آزادجموں وکشمیر اور گلگت بلتستان سمیت خصوصی علاقوں کیلئے 75 ارب روپے، قبائلی اضلاع کیلئے چونسٹھ ارب روپے اور سائنس اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کیلئے اناسی ارب روپے مختص کئے گئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ زراعت سمیت پیداوار کے شعبے کیلئے بھی پچاس ارب روپے رکھے جا رہے ہیں۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ قومی اقتصادی کونسل کے قواعد و ضوابط کے مطابق منظور کئے گئے منصوبوں کو ترجیح دی جائے گی۔

 وزیرخزانہ نے کہا کہ آبی وسائل ، نقل وحمل مواصلات اور توانائی کے شعبوںسمیت تزویراتی اور اہم منصوبوں کو خصوصی اہمیت دی جائے گی۔

انہوں نے کہاکہ غیرملکی اعانت سے شروع کیے گئے منصوبوں کے علاوہ ایسے منصوبوں کی بروقت تکمیل بھی یقینی بنائی جائے گی جن پر پہلے ہی اسی فیصد وسائل خرچ کیے جارہے ہیں ۔

محمد اورنگزیب نے کہاکہ برآمدات میں اضافے کیلئے مصنوعات کا معیار بہتر بنانے اور ڈیجیٹل بنیادی ڈھانچے کی بہتری ، صنعتی ترقی ، زرعی صنعت ، بحری ، معیشت ، سائنس وٹیکنالوجی اورتحقیق وترقی پرمبنی نئے منصوبوں کی حوصلہ افزائی کی جائے گی۔

انہوں نے کہاکہ سالانہ ترقیاتی منصوبے میں پائیدار اور متوازن ترقی کے فروغ کیلئے اقدامات بھی شامل ہیں ۔

وزیرخزانہ نے کہاکہ حکومت شاہراہوں کے نیٹ ورک کی بہتری اور بڑے شہروں اور علاقوں کو ایک دوسرے سے منسلک کرنے سمیت بنیادی ڈھانچے کی ترقی پر خصوصی توجہ دے گی ۔

اس کے علاوہ توانائی کے بنیادی ڈھانجے کو جدید خطوط پروسعت دینے کیلئے بھی اقدامات کیے جارہے ہیں جن میں پن بجلی کے حامل ڈیموں کی تعمیر اور شمسی توانائی کے پلانٹس اور ترسیلی لائنوں تنصیب شامل ہے تاکہ بجلی کی تقسیم کے موثر نظام کویقینی بناتے ہوئے بجلی کی بڑھتی ہوئی ضرورت پوری کی جاسکے۔

محمد اورنگزیب نے کہاکہ پانی کے بہتر انتظام کیلئے بھی اقدامات کیے جائینگے تاکہ سیلاب سے نمٹنے کے علاوہ مقامی اور زرعی ضروریات کیلئے پانی کی دستیابی یقینی بنائی جاسکے۔

 برآمدات میں اضافے کیلئے حکومت کے پختہ عزم کا اظہار کرتے ہوئے وزیرخزانہ نے کہاکہ برآمدات کی نئی شرائط پر قرضہ دینے کی سکیم تین ارب اسی کروڑ روپے سے برھا کر تیرہ ارب اسی کروڑ روپے کرنے کی تجویز ہے ۔

انہوں نے کہاکہ سٹیٹ بنک کے ذریعے پانچ سو انتالیس ارب روپے کی برآمدی مالیاتی سہولت فراہم کی جائے گی ۔

انہوں نے کہاکہ وزیراعظم نے ہدایت کی ہے کہ یہ سہولت چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباری اداروں کے شعبے کے کم ازکم چالیس فیصد اداروں کو دستیاب ہوگی۔

 وزیر خزانہ نے کہا کہ حکومت ٹیکس قوانین میں مساوات اور انصاف کے اصولوں کو لاگو کر رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ٹیکسز میں استثنیٰ اور چھوٹ سے حکومتی آمدن کم ہوتی ہے اورسماجی اور معاشی ترقی بھی متاثر ہوتی ہے۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ سیلز ٹیکس میں چھوٹ اور استثنیٰ کا جائزہ لینے کے بعد حکومت نے بعض رعایتوں اور استثنیٰ کو ختم کرنے کی تجویز دی ہے۔

انہوں نے کہا کہ بعض اشیاء پر کم شرح سے ٹیکس لگایا جائے گا جبکہ بعض اشیاء پر سٹینڈرڈشرح سے ٹیکس لگایا جائے گا۔

حکومت نے ٹیکسٹائل اور چمڑے کی مصنوعات کے ٹائرون پرچون فروشوں پر جی ایس ٹی کی شرح پندرہ سے بڑھا کر اٹھارہ فیصد تک کرنے کی تجویز بھی دی ہے۔

موبائل فونز پر سٹینڈرڈشرح کا اٹھارہ فیصد ٹیکس لاگو کرنے کی تجویز بھی دی گئی ہے۔

بجٹ میں تانبا، کوئلہ، کاغذ اور پلاسٹک کے سکریپ پر ودہولڈنگ ٹیکس لاگو کرنے کی تجویز دی گئی ہے جبکہ لوہے اور سٹیل سکریپ پر سیلز ٹیکس کے استثنیٰ کی تجویز بھی دی گئی ہے تاکہ جعلی یا مصنوعی انوائسز کے رجحان کی حوصلہ شکنی ہو سکے۔

 وزیر خزانہ نے کہا کہ اتحادی حکومت معاشرے کے نادار طبقوں کو زیادہ سے زیادہ مدد فراہم کرنے کیلئے پرعزم ہے۔

انہوں نے کہا کہ اگلے مالی سال کے دوران بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کے تحت مستحق خاندانوں کی مدد کا سلسلہ جاری رہے گا۔

انہوں نے کہا کہ بی آئی ایس پی کا بجٹ ستائیس فیصد اضافے کے ساتھ پانچ سو ترانوے ارب روپے کیا جا رہا ہے۔

محمد اورنگزیب نے کہا کہ کفالت پروگرام سے مستفید ہونے والوں کے لئے بجٹ ترانوے لاکھ سے بڑھا کر ایک کروڑ روپے کر دیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ ان خاندانوں کو نقد رقوم کی منتقلی میں اضافہ کیا جائے گا تاکہ وہ مہنگائی کے اثرات سے محفوظ رہیں۔

انہوں نے کہا کہ تعلیمی وظیفے کے پروگرام میں مزید دس لاکھ بچوں کا اندراج کیا جائے گا۔ اس سے مجموعی اسکالرشپس کی تعداد ایک کروڑ چالیس لاکھ ہو جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ آئندہ مالی سال میں نشوونما پروگرام میں مزید پانچ لاکھ خاندان شامل ہونگے۔

علاقائی

این ٹی ڈی سی کا 12 گھنٹے کی طویل لوڈشیڈنگ پر وضاحتی بیان

حیسکو ریجن میں 12گھنٹے تک کی لوڈشیڈنگ کی وجہ صرف این ٹی ڈی سی کو قرار دینا درست نہیں:ترجمان 

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

این ٹی ڈی سی کا 12 گھنٹے کی طویل لوڈشیڈنگ پر وضاحتی بیان

لاہور:نیشنل ٹرانسمیشن اینڈ ڈسپیچ کمپنی (این ٹی ڈی سی) کے ترجمان نے 22 جولائی کو حیدرآباد الیکٹرک سپلائی کمپنی (حیسکو) کے علاقوں میں بجلی کی حالیہ طویل بندش کے بارے میں وضاحت کی ہے۔

ترجمان این ٹی ڈی سی کے مطابق حیسکو ریجن میں اضافی لوڈ مینجمنٹ کے اقدامات نیپرا گرڈ کوڈ 2023 کے مطابق کیے گئے۔ یہ اقدامات 21 جولائی بروز ہفتہ اور 22 جولائی بروز اتوار کی درمیانی شب پیدا ہونے والی ہنگامی صورتحال کے پیش نظر کیے گئے۔

ترجمان این ٹی ڈی سی نے زور دے کر کہا کہ 12 گھنٹے تک کی لوڈ شیڈنگ کوصرف این ٹی ڈی سی سے منسوب کرنے کا دعویٰ مبالغہ آرائی پر مبنی تھا اور یہ صورتحال کی درست وضاحت نہیں تھی۔

ترجمان نے کہا کہ ان اقدامات کی بنیادی وجہ گھارو اور جھمپیر ونڈ کلسٹرز میں واقع 36 ونڈ فارمز سے بجلی کی پیداوار میں نمایاں کمی تھی۔ یہ ونڈ فارمز 1,845 میگاواٹ کی مشترکہ پیداواری استعداد کے ساتھ این ٹی ڈی سی کے 500 کے وی جامشورو گرڈ سٹیشن کو بجلی فراہم کرتے ہیں۔ ہوا کی غیر معمولی طور پر کم رفتار کے نتیجے میں ونڈ فارمز سے بجلی کی پیداوار میں نمایاں کمی واقع ہوئی جس کے نتیجے میں جامشورو گرڈ سٹیشن کے ٹرانسفارمرز پر بہت زیادہ بوجھ پڑا۔

اہم آلات کی حفاظت کی کوشش میں این ٹی ڈی سی نے اضافی لوڈ شیڈنگ کیلئے حیسکو حکام کے ساتھ رابطہ کیا تاہم اتوار کی صبح تک ہوا کی رفتار معمول پر آ گئی جس کے بعد بجلی کی پیداوار بڑھنے پر حیسکو کے علاقوںمیں اضافی لوڈ شیڈنگ کی ضرورت نہیں رہی۔

یہاں یہ واضح کرنا ضروری ہے کہ لوڈ شیڈنگ کا اصل دورانیہ 12 گھنٹے کے مقابلے میں نمایاں طور پر کم تھا۔ترجمان این ٹی ڈی سی کے مطابق 4 گھنٹے تک تقریباً 75 میگاواٹ اور 6 گھنٹے تک 142 میگاواٹ کا شارٹ فال رہا جس کے نتیجے میں حیسکو کی جانب سے مختلف 11 کے وی فیڈرز پر اوسطاً ایک گھنٹہ لوڈشیڈنگ کی گئی۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

بشریٰ بی بی کی مقدمات کی تفصیلات فراہمی کیلئے درخواست پر اعتراض ختم، سماعت کیلئے مقرر

درخواست گزار نے عدالت عالیہ سے استدعا کی کہ تمام مقدمات اور انکوائریوں کی تفصیلات فراہم کرنے کا حکم دیا جائے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

بشریٰ بی بی کی مقدمات کی تفصیلات فراہمی کیلئے درخواست پر اعتراض ختم، سماعت کیلئے مقرر

لاہور ہائیکورٹ نے بانی پاکستان تحریک انصاف عمران خان کی اہلیہ بشریٰ بی بی کی مقدمات اور انکوائریز کی تفصیلات فراہمی کیلئے دائر درخواست پر رجسٹرار آفس کا اعتراض ختم کر تے ہوئے اپیل کو کل سماعت کے لیے مقرر کرنے کی ہدایت کر دی۔

لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس طارق سلیم نے بشریٰ بی بی کی درخواست پر بطور اعتراض سماعت کی۔

بشریٰ بی بی کی جانب سے دائر درخواست میں مؤقف اختیار کیا گیا کہ بانی پی ٹی آئی کو وزیر اعظم کے عہدے سے ہٹانے کے بعد مقدمات درج کیے جا رہے ہیں، میرے خلاف درج مقدمات اور انکوائریز کی تفصیلات فراہم نہیں کی جا رہیں۔

درخواست گزار نے عدالت عالیہ سے استدعا کی کہ تمام مقدمات اور انکوائریوں کی تفصیلات فراہم کرنے کا حکم دیا جائے۔

درخواست پر رجسٹرار آفس لاہور ہائیکورٹ نے بشریٰ بی بی کی دستاویزات پر انگوٹھے کے نشان نہ ہونے کا اعتراض عائد کیا۔

لاہور ہائیکورٹ نے بشری بی بی کیخلاف درج مقدمات اور انکوائریز کی تفصیلات فراہمی کیلئے درخواست پر رجسٹرار آفس کا اعتراض ختم کرتے ہوئے درخواست کو کل سماعت کے لیے لگانے کی ہدایت کر دی۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

پی ٹی آئی رہنماء رؤف حسن 2 روزہ جسمانی ریمانڈ پر ایف آئی اے کے حوالے

عدالت نے تحریک انصاف کے دیگر کارکنان کو بھی 2 روزہ جسمانی ریمارنڈ منظور کر لیا جبکہ 2 خواتین کارکنان کو جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا گیا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

پی ٹی آئی رہنماء رؤف حسن 2 روزہ جسمانی ریمانڈ پر ایف آئی اے کے حوالے

اسلام آباد کی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن عدالت نے تحریک انصاف کےمرکزی سیکرٹری اطلاعات رؤف حسن کو 2 روزہ جسمانی ریمانڈ پر وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) کے حوالے کر دیا۔

عدالت نے تحریک انصاف کے دیگر کارکنان کو بھی 2 روزہ جسمانی ریمارنڈ منظور کر لیا جبکہ 2 خواتین کارکنان کو جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا گیا۔

یاد رہے کہ آج رؤف حسن و دیگر ورکرز کو جوڈیشل مجسٹریٹ عباس شاہ کی عدالت میں پیش کیا گیا تھا۔

سماعت کے آغاز پر وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) پراسیکیوٹر نے استدعا کی ہمیں سوشل میڈیا اکاؤنٹس اور ڈیوائسز کی ریکوری کرنی ہے جس کے لیے جسمانی ریمانڈ درکار ہے۔

وکیل تحریک انصاف لطیف کھوسہ نے استدعا کی مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ تحریک انصاف کا آفس سیل کردیا تھا، ہائی کورٹ میں کیس ہے، فل کورٹ کے 11 ججز نے کہا کہ تحریک انصاف سیاسی جماعت تھی اور رہے گی، سپریم کورٹ نے تحریک انصاف کو سیاسی جماعت کہا ہے جبکہ حکومت تحریک انصاف کو دہشتگرد قرار دے رہی ہے۔

وکیل صفائی نے بتایا کہ ماضی میں بینظیر بھٹو، ذوالفقار بھٹو، فاطمہ جناح کو بھی غدار کہا گیا، عمران خان کو غدار کہا جارہ ہے مگر کسی کو غداری کے سرٹیفکیٹ بانٹنے کا حق نہیں، حکومت تحریک انصاف پر پابندی لگانے کی کوشش کررہی ہے۔

وکیل لطیف کھوسہ نے مزید کہا کہ رؤف حسن کا میڈیا سیل سے کوئی تعلق ہی نہیں ہے، مخصوص نشستوں کی امیدوار خواتین تھیں انہیں بھی گرفتار کرلیا گیا، تحریک انصاف پر پریشر ڈالنے کی کوشش کی جارہی ہے، اب نظریں عدلیہ پر ہیں کہ کیا انصاف کے ساتھ کھڑی ہوتی ہیں؟

اس موقع پر وکیل صفائی لطیف کھوسہ نے رؤف حسن کے خلاف درج مقدمہ کی کاپی فراہم کرنے کی استدعا کردی۔

انہوں نے کہا کہ ڈیجیٹل دہشتگردی کا ایک نیا لفظ متعارف کروا دیا گیا ہے اور ڈیجیٹل دہشتگردی کا لفظ اب تحریک انصاف پر مسلّط کرنے لگے ہیں، تحریک انصاف کے لاہور اور اسلام آباد میں سینٹرل دفاتر سیل ہیں، اب رؤف حسن کو ڈیجیٹل دہشتگردی میں ملوث کرنے کی کوشش کررہے۔

انہوں نے بتایا کہ سکیورٹی اہلکار تحریک انصاف کا تمام ریکارڈ لے گئے ہیں، الیکشن کمیشن میں آج سماعت تھی مگر ہمارے امیدواروں کا ریکارڈ لے گئے ہیں۔

اس موقع پر رؤف حسن کے خلاف درج مقدمہ کی کاپی پی ٹی آئی وکلا کو فراہم کردی گئیں۔

وکیل علی بخاری نے روسٹرم پر آکر بتایا کہ مقدمے میں تحریر شدہ وقت پر وقوعہ ہوا ہی نہیں، لطیف کھوسہ نے کہا کہ ایک ملزم کے کہنے پر مقدمے میں رؤف حسن کو نامزد کیا گیا، تحریک انصاف کے گرفتار کارکنان کی ڈیوائسزز، موبائل ایف آئی اے کے پاس ہیں، واٹر چلر بھی تحریک انصاف کے دفتر سے اٹھا کر لے گئے ہیں، ایسا معلوم ہورہا ہے جیسے بھارت نے حملہ کردیا اور سب کچھ ساتھ لے گئے۔

لطیف کھوسہ کا مزید کہنا تھا کہ رہا ہونے والے تحریک انصاف کے کارکنان کو خالی ہاتھ چھوڑا گیا ہے۔

بعد ازاں ایف آئی اے نے رؤف حسن کے 10 روزہ جسمانی ریمانڈ کی استدعا کردی جبکہ وکیل صفائی نے رؤف حسن و دیگر کارکنان کو کیس سے ڈسچارج کرنے کی استدعا کی۔

وکیل لطیف کھوسہ نے کہا کہ سوشل میڈیا پر پراپیگنڈا کرنے کا کبھی کسی سیکیورٹی ایجنسی نے تحریک انصاف کے خلاف مؤقف اختیار نہیں کیا، تحریک انصاف اور عمران خان سے زیادہ محب وطن کوئی نہیں،وکیل صفائی علی بخاری نے کہا کہ رؤف حسن کا سوشل میڈیا سے کوئی تعلق ہی نہیں، تحریک انصاف کا کیا اسٹیٹس ہے؟ سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد کوئی ایسا سوال نہیں بنتا، روف حسن کو اغوا کیا گیا، قاتلانہ حملہ بھی حال ہی میں کیا گیا۔

وکیل نے بتایا کہ رؤف حسن کینسر کے مریض رہ چکے ہیں، ایک پڑھی لکھی فیملی سے تعلق رکھتے ہیں، ایف آئی اے نے گزشتہ 24 گھنٹوں میں کیا تفتیش کی؟ کچھ بھی نہیں۔

وکیل صفائی نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ جب کوئی ثبوت ہی نہیں تو 10 دن کا ریمانڈ مانگنے کی کیا ضرورت ہے؟ کیا موبائل فون استعمال کرنا جرم ہے؟ کیا رؤف حسن نے کچھ ٹویٹ کیا؟ رؤف حسن سے کوئی بم برآمد نہیں ہونا، سوشل میڈیا کی بات ہورہی، سب کو معلوم ہے کیس کی کیا حیثیت ہے، صرف ذلیل کرنا مقصد ہے۔

بعدازاں عدالت نے محفوظ فیصلہ سناتے ہوئے رؤف حسن کو 2 روزہ جسمانی ریمانڈ پر ایف آئی اے کے حوالے کر دیا، دیگر تحریک انصاف کے مرد کارکنان کا بھی 2 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کر لیا گیا جبکہ 2 خواتین کارکنان کو جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا گیا۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز پی ٹی آئی کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات رؤف حسن کو اسلام آباد پولیس نے تحریک انصاف کے مرکزی سیکرٹریٹ سے گرفتار کیا تھا۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll