جی این این سوشل

جرم

اسلام آباد : ڈائریکٹر سیف سٹی کی پھندا لگی لاش برآمد ، آئی جی کا نوٹس 

اسلام آباد : اسلام آباد پولیس میں گریڈ 19 کے افسر اور ڈائریکٹر سیف سٹی عبدالقدیر کی پھندا لگی لاش ملنے کا آئی جی نے نوٹس لیا ہے۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

اسلام آباد : ڈائریکٹر سیف سٹی کی پھندا لگی لاش برآمد ، آئی جی کا نوٹس 
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

جی این این کے مطابق اسلام آباد پولیس کی جانب سے جاری کیے گئے بیان کے مطابق تھانہ کھنہ کے علاقہ میں ڈائریکٹر سسٹم سیف سٹی کی پھندا لگی لاش برآمد کی گئی ،  عبدالقدیر این ٹی سی  کے  ملازم تھے اورڈیپوٹیشن پر اسلام آباد پولیس میں خدمات سرانجام دے رہے تھے، مزید جو بھی حقائق سامنے آئیں گے وہ شیئر کیے جائیں گے۔ 

اسلام آباد پولیس کے سربراہ نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے ڈی آئی جی آپریشنز کو کیس کی ہر پہلو سے شفاف تحقیقات کرنے کے احکامات جاری کیے ہیں۔

 

اسلام آباد پولیس نے بیان میں لواحقین سے  ہمدردی کا اظہار کیا ہے ۔ پولیس کی جانب سے  واقعے کی تحقیقات کی جا رہی ہے۔ ابتدائی بیان میں کہا گیا کہ واقعہ خودکشی کا لگتا ہے  ۔  سینیئر پولیس افسران اور فرانزک ٹیموں نے موقع پر پہنچ کر شواہد اکٹھے کیے اور لاش کو پوسٹ مارٹم کے لیے ہسپتال منتقل کردیا گیاہے ۔ 

واضح  رہے کہ اسلام آباد میں سیف سٹی سسٹم کے تحت سینکڑوں کیمرے شہر کی سڑکوں اور پرہجوم جہگوں پر نصب ہیں جن سے مانیٹرنگ کی جاتی ہے۔

پاکستان

الیکشن کمیشن کا پنجاب میں بلدیاتی انتخابات اپریل 2023 میں کرانے کا فیصلہ

پنجاب کے بلدیاتی اداروں کی معیاد یکم جنوری 2022 کو ختم ہو چکی ہے،سیکرٹری الیکشن کمیشن کی اجلاس میں بریفنگ

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

الیکشن کمیشن کا پنجاب میں بلدیاتی انتخابات اپریل 2023 میں کرانے کا فیصلہ

الیکشن کمیشن نے پنجاب میں بلدیاتی انتخابات اپریل 2023 کے آخری ہفتے میں کرانے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجہ کی زیر صدارت الیکشن کمیشن کا اجلاس ہوا،سیکرٹری الیکشن کمیشن نے اجلاس میں بریفنگ دی،سیکرٹری الیکشن کمیشن نے کہا کہ پنجاب کے بلدیاتی اداروں کی معیاد یکم جنوری 2022 کو ختم ہو چکی ہے۔ 

الیکشن کمیشن کو بلدیاتی انتخابات کے انعقاد کیلئے دو بار حلقہ بندیوں کا کام کرنا پڑا،دو بار بلدیاتی قوانین کو تبدیل کیا گیا۔ اجلاس میں الیکشن کمیشن نے پنجاب میں بلدیاتی انتخابات اپریل 2023 کے آخری ہفتے میں کرانے کا فیصلہ کیا ہے۔ یاد رہے کہ گزشتہ دنوں الیکشن کمیشن میں پنجاب کے بلدیاتی انتخابات سے متعلق سماعت ہوئی،اسپیشل سیکرٹری الیکشن کمیشن اور چیف سیکرٹری پنجاب الیکشن کمیشن میں پیش ہوئے۔

اسپیشل سیکرٹری نے بتایا کہ پنجاب میں دو بار حلقہ بندیاں کیں،اب تیسری بار کرنا ہوں گی۔ چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ پنجاب میں تیسری بار بلدیاتی حلقہ بندیاں کرانا مذاق نہیں،پرانی حلقہ بندیوں پر الیکشن ہو سکتے ہیں تو شیڈول جاری کریں،کوئی حکومت بلدیاتی انتخابات نہیں کرانا چاہتی۔ چیف الیکشن کمشنر نے سیکرٹری الیکشن کمیش کو ہدایت کی کہ آپ دوبارہ سپریم کورٹ کو خط لکھیں،اب الیکشن کمیشن چیف سیکرٹری کو ہدایت کرے گا اور آرڈر پاس کریں گے۔ 

چیف سیکرٹری نے بتایا کہ پنجاب اسمبلی نے نیا بل منظور کر لیا۔نئے قانون کے مطابق چلیں ہم ٹائم لائن کو فالو کریں گے۔ چیف الیکشن کمشنر نے استفسار کیا کہ آپ کو لگتا ہے الیکشن ای وی ایم پر ہو سکتے ہیں؟آپ جان بوجھ کر ای وی ایم ڈال رہے ہیں کہ مسئلہ بنے۔آپ نے قانون میں رکاوٹ ڈالی لیکن ہمیں پتا ہے اسے کیسے کھولنا ہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

عمران خان کی معافی سے مطمئن ہیں اور کوئی وجہ نہیں کہ کاروائی کو آگے چلایا جائے

عمران خان کی معافی اور جج کی عدالت میں پیشی سے ان کی نیک نیتی ظاہر ہوتی ہے، شوکاز نوٹس واپس لے کر کیس سے ڈسچارج کیا جاتا ہے۔ اسلام آباد ہائیکورٹ کا 16 صفحات پر مشتمل تفصیلی فیصلہ

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

عمران خان کی معافی سے مطمئن ہیں اور کوئی وجہ نہیں کہ کاروائی کو آگے چلایا جائے

 اسلام آباد ہائیکورٹ نے عمران خان کے خلاف توہین عدالت کیس میں 16صفحات پر مشتمل تفصیلی فیصلہ جاری کردیا ہے، چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ کی سربراہی میں پانچ رکنی بنچ نے متفقہ فیصلہ دیا۔ اے آروائی کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ نے عمران خان کے خلاف توہین عدالت کیس میں 16صفحات پر مشتمل تفصیلی فیصلہ جاری کردیا ہے، چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ کی سربراہی میں پانچ رکنی بنچ نے متفقہ فیصلہ دیا۔ 

جسٹس محسن اخترکیانی اور جسٹس بابرستار نے فیصلے میں اضافی نوٹس تحریر کیئے۔ سابق وزیراعظم اور سیاسی لیڈر سے ایسی زبان کی توقع نہیں کی جا سکتی۔ عمران خان کے الفاظ اور لہجہ مناسب نہیں تھا۔ فیصلے میں کہا گیا کہ عمران خان کے رویے ، معافی اور جج کی عدالت میں پیشی سے ان کی نیک نیتی ظاہر ہوتی ہے۔ عمران خان کی معافی سے مطمئن ہیں کوئی وجہ نہیں کہ کاروائی کو آگے چلایا جائے۔ عمران خان سے شوکاز نوٹس واپس لے کر کیس سے ڈسچارج کیا جاتا ہے۔

یاد رہے 24 نومبر2022ء کو پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان نے توہین عدالت کیس میں حکومتی جواب الجواب عدالت عظمی میں بھی جمع کروا دیا ہے۔ جمع کروائے گئے جواب میں عمران خان کی طرف سے موقف اپنایا گیا ہے کہ بابر اعوان اور فیصل چوہدری پہلے ہی اپنے جواب میں مجھے اطلاع کرنے کے حوالے سے معذوری ظاہر کرچکے ہیں،کیس کے اندر واحد نقطہ یہی ہے کیا مجھے عدالتی احکامات کے بارے میں آگاہ کیا گیا ہے یا نہیں، بابر اعوان اور فیصل چوہدری کی مجھ سے ملاقات کروانے کے عدالتی احکامات کی انتظامیہ نے واضح طور پر خلاف ورزی کی گی،چوبیس مئی سے پنجاب اور اسلام آباد میں ہونے والے تشدد کی وجہ سے شدید دباو میں تھے،

جمیرز کی وجہ سے رابطہ نہ ہونے کا ابھی تک دعوی نہیں کیا،پہلے جواب میں جیمرز کی موجودگی میں رابطہ کے عمل کو غیر حقیقی لکھا ہے،الیکٹرانک میڈیا پر میری سیاسی سرگرمیوں میں پابندی کے باعث سوشل میڈیا کا استعمال لازمی تھا،سوشل میڈیا سرگرمیاں مختلف جہگوں پر مختلف اکاوئنٹس سے کی جارہی تھیں،مجھے بتایا گیا کہ سپریم کورٹ نے میرے اور سپورٹرز کے اجتماع کے آئینی حق کو تسلیم کرلیاہے،

ڈی چوک جانے کا فیصلہ حکومتی تشدد کے نتیجہ میں کیا تھا، ڈی چوک پر جانے کا فیصلہ سپریم کورٹ فیصلے سے پہلے کر چکا تھا، وزیراعلی خیبر پختونخواہ کاروان کے ہمراہ جیمرز چلانے کی دستاویزات عدالت میں جمع کروانیکی اجازت چاہتا ہوں، میرے جواب اور دستاویزات کو ریکارڈ کا حصہ بنایا جائے۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹیکنالوجی

وزیرخزانہ اسحاق ڈارنے ادائیگیاں کرنے اور ٹائم فریم دینے کیلئے مراسلہ جاری کردیا

 حکومت گوگل کو ادائیگی پر رضا مند ہو گئی ۔  صارفین کے لیےموبائل اکاؤنٹ کی مدد سے گوگل پلے سٹور تک رسائی  معطل نہیں ہو گی۔

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

وزیرخزانہ اسحاق ڈارنے  ادائیگیاں کرنے اور ٹائم فریم دینے کیلئے مراسلہ جاری کردیا

 

وزارت خزانہ اسحاق ڈار نے وزیر آئی ٹی امین الحق کی تجویز مان لی۔ حکومت  گوگل کو ادائیگی پر راضی ہو گئی۔ وزیر آئی ٹی امین الحق کا کہنا ہے کہ ادائیگیاں شیڈول کے مطابق کی جاسکیں گی، پیڈ گوگل ایپس بند نہیں ہونگی۔

وزیر آئی ٹی امین الحق سے معاون خصوصی خزانہ طارق باجوہ  نے رابطہ کیا ہے۔ امین الحق کا کہنا ہے کہ اسٹیٹ بینک کو ہدایت کردی گئی کہ ایک ماہ تک پالیسی پر عملدرآمد مؤخر کردیں۔ٹیلی کام آپریٹرز کو ادائیگیوں کے طریقہ کار پر عمل کیلئے ایک ماہ کا وقت دیدیا گیا۔

ایک ماہ میں وزارت آئی ٹی، خزانہ اور اسٹیٹ بینک باہمی مشاورت سے لائحہ عمل مرتب کریں گے۔ٹیلی کام آپریٹرز نے وزارت آئی ٹی سے معاملے پر معاونت کی اپیل کی تھی۔وزیرخزانہ اسحاق ڈار کو ادائیگیاں کرنے اور ٹائم فریم دینے کیلئے مراسلہ لکھا تھا۔

پاکستان کے سٹیٹ بینک کی جانب سے ڈائریکٹ کیریئر بلنگ  یعنی براہ راست  ادائیگیوں کے نظام کو معطل کرنے کا فیصلہ کیاگیا تھاجس کے بعد پاکستانی صارفین اپنے موبائل فون اکاؤنٹ میں موجود رقم کے ذریعے گوگل پلے سٹور سے اپلیکیشنز ڈاون لوڈ نہیں کر پاتے۔

 فیصلے پر عملدر آمد کی صورت میں صارفین کو ڈیبٹ کارڈ اور کریڈٹ کارڈ کے ذریعے گوگل پلے سٹور سے ایپس ڈاون لوڈ کرنا پڑتی۔

 ٹیلی کام کمپنیوں کی جانب سے وفاقی حکومت کو لکھے گئے ایک مشترکہ خط میں اس کی نشاندہی کی گئی تھی کہ ادائیگی کے اس نظام کی معطلی سے پاکستان میں عالمی اداروں گوگل، ایمازون اور میٹا وغیرہ کی جانب سے پیش کی جانے والی خدمات متاثر ہوں گی اور اس سے ملک کے ٹیلی کام اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کے شعبے متاثر ہونے کا خدشہ ہے۔

 جس کے بعد حکومت نے ٹیلی کام کمپنیوں کی درخواست منظور کرتے ہوئے ایک ماہ کے لیے گوگل کو ادائیگی کا فیصلہ کیا ہے۔ ایک ماہ کے اندر  ادائیگیوں کے طریقہ کار پر پالیسی مرتب دی جائے گی۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll