جی این این سوشل

علاقائی

سندھ حکومت کا انوکھا کارنامہ،سوا 2 ارب قرض پر 22ارب سود ادا کر دیا

سندھ حکومت پر تاحال 13 ارب 29 کروڑ 25 لاکھ 50 ہزار روپے واجب الادا ہیں

پر شائع ہوا

کی طرف سے

سندھ حکومت کا انوکھا کارنامہ،سوا 2 ارب قرض پر 22ارب سود ادا کر دیا
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

حکومت سندھ نے مالی سال 1994-95ء میں وفاقی حکومت سے 2 ارب 23 کروڑ 83 لاکھ 67 ہزار روپے کیش ڈیولپمنٹ لون قرض لیا اور اس پر 30 برسوں میں 22 ارب 27 کروڑ 65 لاکھ 90 ہزار روپے سود ادا کیے۔

سندھ حکومت پر تاحال 13 ارب 29 کروڑ 25 لاکھ 50 ہزار روپے واجب الادا ہیں۔محکمہ خزانہ کے دستاویز کے مطابق مالی سال 2014-15ء تک 12 ارب 75 کروڑ 79 لاکھ 95 ہزار روپے ادائیگی کے باوجود 14 ارب 13 کروڑ 23 لاکھ روپے واجب الادا رہ گئے۔

مالی سال 2021-22ء میں 15 ارب 23 کروڑ 53 لاکھ روپے واجب الادا تھے۔رواں مالی سال کے دوران 4 ارب 21 کروڑ 74 لاکھ 30 ہزار روپے سود ادا کرنے کے باوجود ابھی تک 13 ارب 29 کروڑ 25 لاکھ 50 ہزار روپے ابھی تک واجب الادا ہیں۔

پرویز مشرف کے دور حکومت میں 2001ء میں کیش ڈیولپمنٹ لون پر سود ختم کرنے کا حکم دیا گیا تھا۔ مگر پرویزمشرف کے ہی حکم پر ان کی حکومت میں عملدرآمد نہیں ہوسکا۔

جرم

کراچی ایئر پورٹ پر کسٹمز حکام کی کارروائی، اسمگل شدہ موبائل فونز اور دیگر سامان برآمد

ملزمان سے تلاشی کے دوران 28 عدد آئی فون، دو لیپ ٹاپ، دس کاٹن سوٹ اور دیگر قیمتی اشیاء برآمد ہوئیں

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

کراچی ایئر پورٹ پر کسٹمز حکام کی کارروائی، اسمگل شدہ موبائل فونز اور دیگر سامان برآمد

کراچی ایئرپورٹ پر کسٹمز حکام نے ایک کارروائی کے دوران ملزمان سے لاکھوں روپے کے اسمگل شدہ موبائل فونز اور دیگر سامان برآمد کر لیا۔

ملزمان سے تلاشی کے دوران 28 عدد آئی فون، دو لیپ ٹاپ، دس کاٹن سوٹ اور دیگر قیمتی اشیاء برآمد ہوئیں۔

برآمد شدہ سامان کی مالیت لاکھوں روپے میں بتائی جا رہی ہے۔

کسٹمز حکام نے ملزمان کو گرفتار کر لیا ہے اور ان کے خلاف قانونی کارروائی شروع کر دی ہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

ابو ظہبی پورٹس کا کراچی بندرگاہ پر25کروڑ ڈالر کی سرمایہ کاری کا اعلان

ابو ظہبی پورٹس پاکستان کے وفد نے وزیراعظم شہباز شریف سے ملاقات کی ، وفد کی قیادت چیف ایگزیکٹو آفیسر خریم عزیز خان نے کی

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

ابو ظہبی پورٹس کا کراچی بندرگاہ پر25کروڑ ڈالر کی سرمایہ کاری کا اعلان

ابو ظہبی پورٹس پاکستان اگلے 10 سال میں کراچی بندر گاہ پر 25 کروڑ ڈالر کی سرمایہ کاری کرے گا۔

ابو ظہبی پورٹس پاکستان کے وفد نے وزیراعظم شہباز شریف سے ملاقات کی ۔ وفد کی قیادت چیف ایگزیکٹو آفیسر خریم عزیز خان نے کی۔

ملاقات کے دوران انھیں بتایاگیا کہ تمام ضروری سہولیات سے لیس جدید کثیر المقاصد ٹرمینل آئندہ دو سال میں مکمل کرلیاجائے گا اس منصوبے پر تیرہ کروڑ ڈالر کی سرمایہ کاری کی جائے گی۔

ٹرمینل منصوبے میں ایسس کنٹرول کی تعمیر ، خود کار دروازے ، دوسومیٹرز تک برتھ کی توسیع ، کرین ریل ٹریک اور دیگر ڈھانچہ جاتی کام شامل ہے۔

ٹرمینل پر نئے ڈھانچے کی تعمیر سے ایک لاکھ بیس ہزار ٹن تک کے مال برادر بحری جہاز لنگر انداز ہوسکیں گے۔

وزیراعظم نے کہا ابو ظہبیپورٹس کے ساتھ معاہدے کا مقصد شفافیت ، فعالیت اور بندرگاہ کی کارکردگی کوبڑھانا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ بندرگاہ پر اشیا اور کنٹینرز کی نقل وحمل کو ڈیجیٹل ٹیکنالوجی اور جدید مشینری سے بہتر بنایاجائے گا۔

شہبازشریف نے کہا کہ بندرگاہوں پر کنٹینر کے نظام کو بہتر بنا کر کلیئرنس کے لیے درکاروقت کو کم کیاجاسکتا ہے ۔

وزیراعظم نے منصوبے کو فعال کرنے اور ٹرمینل سے اشیا کواٹھانے کے لیے ریلوے حکام کو مال برادر بوگیوں اور ضروری سازوسامان کی فراہمی کی بھی ہدایت کی ہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

علاقائی

سات سالہ پریا کماری کی بازیابی کیلئے ہندو کمیونٹی کا دھرنا

دھرنے میں ہندو کمیونٹی کے ساتھ سول سوسائٹی اور قومی اسمبلی کے رکن کھیل داس کوہستانی نے بھی شرکت کی

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

سات سالہ پریا کماری کی بازیابی کیلئے  ہندو کمیونٹی کا دھرنا

کراچی میں تین تلوار پر تین سال قبل سکھر سے مبینہ طور پر لاپتہ ہونے والی سات سالہ پریا کماری کی بازیابی کیلئے ہندو کمیونٹی نے دھرنا دے دیا۔

دھرنے میں ہندو کمیونٹی کے ساتھ سول سوسائٹی اور قومی اسمبلی کے رکن کھیل داس کوہستانی نے بھی شرکت کی۔

ایم این اے کھیل داس کوہستانی نے کہا کہ تین سال کے عرصے سے پولیس پریا کو بازیاب نہیں کراسکی، پریا کماری کے والدین پر کیا گزر رہی ہے ،اس کا درد کون جانے۔

مظاہرین کی تین تلوار کے اطراف سڑکیں بند کرنے کی کوشش کے بعد پولیس کی اضافی نفری تین تلوار پر طلب کی گئی تھی۔

ڈی آئی جی ساؤتھ کا کہنا تھا کہ کئی افراد کو حراست میں لینے کے بعد سب کو فوری رہا کر دیا گیا تھا۔

وزیر داخلہ سندھ ضیاء الحسن لنجار کا کہنا ہے کہ میڈیا پرسن پر تشدد کی مذمت کرتے ہیں، اختیارات سے تجاوز کرنے کی کسی کو اجازت نہیں ہے، انصاف کے تقاضے پورے کیے جائیں گے ، تشدد میں جو پولیس اہلکار ملوث ہیں ان کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll