جی این این سوشل

دنیا

جمہوریت کے نام نہاد چیمپئن بھارت میں انصاف کا قتل

مقبوضہ کشمیر بھارت کا اٹوٹ انگ ہے، سپریم کورٹ کا متعصباہ فیصلہ

پر شائع ہوا

کی طرف سے

جمہوریت کے نام نہاد چیمپئن بھارت میں انصاف کا قتل
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیرکی خصوصی حیثیت بحال کرنے سے متعلق درخواستیں مسترد کرتے ہوئے آرٹیکل 370 منسوخ کرنے کے ہندو انتہا پسند مودی سرکار کے پانچ اگست 2019 کے فیصلے کو برقرار رکھا ہے۔ فیصلے میں مقبوضہ کشمیر اسمبلی کے انتخابات 30 ستمبر 2024 تک کرانے کے احکامات جاری کیے گئے ہیں۔

درخواست گزاروں نے جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کے منسوخی ایکٹ کو چیلنج کیا تھا، بھارتی میڈیا کے مطابق بھارتی حکومت نے 4 سال تک اس معاملے کو دانستہ طور پر لٹکائے رکھا۔ بھارتی سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر بھارت کا اٹوٹ انگ ہے، آرٹیکل 370 عارضی اقدام ہے، ہر فیصلہ قانونی دائرے میں نہیں آتا، بھارتی صدر کے پاس آرڈر دینے کے اختیارات ہیں۔

خیال رہے کہ بھارتی سپریم کورٹ نے ستمبر میں وزیراعظم نریندر مودی کی بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) حکومت کی جانب سے 2019 میں ختم کی گئی مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کے خلاف دائر درخواستوں پر سماعت مکمل کی تھی۔ بھارتی چیف جسٹس دھننجیا یشونت چندراچد، جسٹس سجنے کشان کول، جسٹس سجنیو کھنہ، جسٹس بی آر گیوائی اور جسٹس سوریا کانت پر مشتمل پانچ رکنی بینچ نے فیصلہ محفوظ کیا تھا۔

رپورٹ کے مطابق نئی دہلی میں سپریم کورٹ نے حکومتی وکلا، بھارت کے حامی مقبوضہ کشمیر کی سیاسی جماعتوں کے آئینی ماہرین اور دیگر فریقین سے 16 سے زائد دنوں تک دلائل سنے تھے۔پانچ اگست 2019 کو بھارت کی حکمران جماعت بی جے پی نے مقبوضہ کشمیر کو خصوصی حیثیت دلانے والے آرٹیکل 370 کا خاتمہ کر دیا تھا، جس کے تحت بھارت کے دیگر شہروں کے لوگوں کو مقبوضہ جموں و کشمیر میں جائیدادیں حاصل کرنے اور مستقبل رہائش کی اجازت حاصل ہو گئی ہے۔

آرٹیکل 370 کے باعث بھارت کی پارلیمنٹ کے پاس دفاع، خارجہ امور اور مواصلات کے علاوہ ریاست میں قوانین نافذ کرنے کے محدود اختیارات تھے۔بی جے پی کے اس فیصلے کو کشمیری عوام، عالمی تنظیموں اور ہندو قوم پرست حکمران جماعت کے ناقدین نے مسلم اکثریتی خطے کو ہندو آباد کاروں کے ذریعے شناخت تبدیل کرنے کی کوشش قرار دیا تھا۔

بعد ازاں بھارتی سپریم کورٹ میں 20 سے زائد درخواستیں دائر کر دی گئی تھیں، جس میں بھارتی حکومت کی جانب سے اگست 2019 میں آرٹیکل 370 کے خاتمے کے لیے کیے گئے فیصلے کی آئینی حیثیت پر سوال اٹھایا تھا۔درخواست گزار نے عدالت میں دائر درخواست میں دعویٰ کیا تھا کہ آئینی شقوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے یہ فیصلہ کیا گیا ہے۔بھارت نے کئی دہائیوں سے مقبوضہ کشمیر میں پانچ لاکھ سے زائد فوجی تعینات کر رکھے ہیں۔

پاکستان اور بھارت کے درمیان مسئلہ کشمیر پر ماضی میں جنگیں بھی ہوئی ہیں اور 1989 سے ہزاروں افراد بھارت سے آزادی کے لیے جان کی بازی لگا چکے ہیں۔مقبوضہ کشمیر کے عوام اور ناقدین کا کہنا ہے کہ بھارتی حکومت نے 2019 کے بعد میڈیا کی آزادی اور احتجاج پر پابندی عائد کرتے ہوئے شہریوں کے بنیادی حقوق پر بدترین پابندیاں نافذ کر دی ہیں۔

دنیا

سعودی عرب کی اقوام متحدہ میں غزہ تباہی پر عالمی برادری کی خاموشی پر کڑی تنقید

ہم یہاں کن حقوق کی بات کر رہے ہیں جب کہ غزہ ر اکھ اور ملبے کا ڈھیر بن چکا ہے، سعودی وزیر خارجہ

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

سعودی عرب کی اقوام متحدہ  میں غزہ  تباہی پر عالمی برادری کی خاموشی پر کڑی تنقید

سعودی عرب نے اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کی کونسل میں غزہ کی تباہی پر عالمی برادری کی خاموشی پر کڑی تنقید کرتے ہوئے فوری جنگ بندی کا مطالبہ کیا ہے۔

عرب میڈیا کے مطابق اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل کے 55ویں اجلاس میں سعودی وزیر خارجہ فیصل بن فرحان نے اسرائیل کی جبری بے گھر ہونے والے لاکھوں فلسطینیوں کی آخری پناہ گاہ رفح پر حملے کی دھمکیوں پر عالمی برادری کے ضمیر کو جھنجھوڑنے کی کوشش کی ہے۔

وزیر خارجہ فیصل بن فرحان نے سوال اُٹھایا کہ ہم یہاں کن حقوق کی بات کر رہے ہیں جب کہ غزہ راکھ اور ملبے کا ڈھیر بن چکا ہے۔ عالمی برادری اس پر کیسے خاموش رہ سکتی ہے جب کہ غزہ کے لوگ بے گھر اور انسانی حقوق کی بدترین خلاف ورزیوں کا شکار ہیں۔ سعودی وزیر خارجہ نے بین الاقوامی قراردادوں کے اطلاق میں دوہرے معیار اور پسند و ناپسند رویے کو مسترد کرتے ہوئے اسرائیل کے رفح پر حملے کے  تباہ کن اثرات سے خبردار کیا۔

سعودی وزیر خارجہ نے غزہ میں جنگ بندی کے لیے سنجیدہ، منصفانہ اور جامع اقدام کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے بین الاقوامی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ اپنی ذمہ داریاں ادا کرے تاکہ معصوم شہریوں کی حفاظت کی جا سکے۔ غزہ سے 30 ہزار ہلاکتوں کی اطلاع ملی ہے اس کے علاوہ 20 لاکھ سے زائد افراد فاقہ کشی، تحفظ، پانی، بجلی اور ادویات جیسی بنیادی ضرورتوں کے فقدان کا شکار ہیں۔

سعودی وزیر خارجہ نے سلامتی کونسل کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ان تمام مظالم کے باوجود سلامتی کونسل اپنے اجلاسوں کو بغیر کسی نتیجے کے ختم کردیتی ہے۔ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل قرارداد نمبر 2720 پر عمل درآمد کروائے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

خواجہ آصف کی صدر مملکت پر آرٹیکل 6 کے تحت مقدمہ چلانے کی درخواست

خواجہ محمد آصف نے کہا کہ صدرعارف علوم پر آرٹیکل 6 کے تحت غداری کا مقدمہ چلنا چاہیے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

خواجہ  آصف  کی  صدر مملکت  پر آرٹیکل 6 کے تحت مقدمہ چلانے کی درخواست

مسلم لیگ ن کے رہنما خواجہ محمد آصف نے صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی پر آرٹیکل 6 کے تحت مقدمہ چلانے کی درخواست کردی۔

مسلم لیگ ن کے رہنما خواجہ آصف نے پارلیمنٹ ہاؤس میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ 9 مئی میں ملوث لوگوں کے ساتھ حساب کتاب ہونا چاہیے ، انہوں  نے کہا کہ نیب و دیگراداروں سے میاں صاحب اور کارکنان کے ساتھ بہت کچھ ہوا، 9 مئی کو تو ریاست پاکستان کوچیلنج کیا گیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا  کہ صدر مملکت نے دو بار آئین کی خلاف ورزی کی ہے، صدرعارف علوم پر آرٹیکل 6 کے تحت غداری کا مقدمہ چلنا چاہیے۔

 

پڑھنا جاری رکھیں

دنیا

امریکا تائیوان کو امریکی ہتھیاروں کی فراہمی بند کرے ،چین

چین نے تائیوان کو امریکی ہتھیاروں کی فروخت پر اپنی شدید مخالفت کا اظہار کیا ہے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

امریکا تائیوان کو امریکی ہتھیاروں کی فراہمی بند کرے ،چین

چین نے تائیوان کو امریکی ہتھیاروں کی فروخت پر اپنی شدید مخالفت کا اظہار کیا ہے۔ خبر رساں شنہوا کے مطابق ریاستی کونسل کے تائیوان امور کے دفتر کے ترجمان ژو فینگلیان نے بدھ کو امریکا کے بارے میں ایک بیان جاری کیا ہے میں انہوں نے کہا ہے  کہ وہ ایک چین کے اصول اور چین۔امریکا کے 3اعلامیوں کی سختی سے پابندی کرے اور فوری طور پر تائیوان کو ہتھیاروں کی فروخت بند کر ے۔

انہوں نے تائیوان میں ڈیموکریٹک پروگریسو پارٹی کے حکام کو بھی خبردار کیا کہ ان کے آزادی کے ایجنڈے کے لیے امریکی حمایت حاصل کرنے اور طاقت کے ذریعے آزادی حاصل کرنے کی ان کی کوششیں تائیوان کو خطرناک طور پر جنگ کے قریب لے جائیں گی اور تائیوان کے دسوتوں کو خطرے میں ڈالے گی۔

 ترجمان ژو فینگلیان نے یہ ریمارکس تائیوان کو تقریباً 75 ملین ڈالر مالیت کے ہتھیار فروخت کرنے کی امریکی حکومت کی حالیہ منظوری پر تبصرہ کرتے ہوئے دیئے۔

 

 
 
پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll