جی این این سوشل

تجارت

پاکستان میں سونے کی قیمتوں میں اضافہ 

مقامی مارکیٹ میں ایک تولہ سونے کی قیمت ایک ہی دن میں 1900 روپے کا ریکارڈ اضافہ ہو گیا

پر شائع ہوا

کی طرف سے

پاکستان میں سونے کی قیمتوں میں اضافہ 
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

مقامی مارکیٹ میں ایک تولہ سونے کی قیمت ایک ہی دن میں 1900 روپے کا ریکارڈ اضافہ ہو گیا۔ 
آل پاکستان جیمز اینڈ جیولرز ایسوسی ایشن کے مطابق ایک تولہ سونے کی قیمت 241300 روپے ہو گئی، جبکہ 10 گرام سونے کی قیمت 1629 روپے کے اضافے کے ساتھ 206876 روپے ہو گئی۔  
پاکستان میں گزشتہ روز سونے کی قیمت بغیر کسی اضافے کے 239400 روپے مستحکم رہی، مگر آج سونے کی قیمت میں ایک بڑا اضافہ ہو گیا۔  
حالیہ روز چاندی کی قیمت میں کوئی اضافہ نہیں ہوا۔ چاندی کی قیمت 2750 روپے پر قائم رہی۔

کھیل

ٹی 20 ورلڈ کپ، بھارت کا امریکا کے خلاف ٹاس جیت کر بولنگ کا فیصلہ

بھارت اور امریکا ایونٹ میں اپنا تیسرا میچ کھیل رہے ہیں، دونوں کو اپنے 2،2 میچز میں کامیابی ملی

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

ٹی 20 ورلڈ کپ، بھارت کا امریکا کے خلاف ٹاس جیت کر بولنگ کا فیصلہ

آئی سی سی مینز ٹی ٹوئنٹی ورلڈکپ کے 25 ویں میچ میں بھارت نے امریکا کے خلاف ٹاس جیت کر بولنگ کا فیصلہ کیا ہے۔

نیویارک میں کھیلے جارہے گروپ اے کے میچ میں بھارت کے کپتان روہت شرما نے ٹاس جیت کر امریکا کو پہلے بیٹنگ کی دعوت دے دی۔

بھارت اور امریکا ایونٹ میں اپنا تیسرا میچ کھیل رہے ہیں، دونوں کو اپنے 2،2 میچز میں کامیابی ملی تھی۔

آج جیتنے والی ٹیم والی سپر 8 مرحلے میں کوالیفائی کرلے گی۔  اگر آج امریکا یہ میچ جیت گیا تو پاکستان کا ورلڈکپ میں سفر ختم ہوجائے گا۔

پڑھنا جاری رکھیں

تجارت

بجٹ 2024-25، تانبے، کوئلے، کاغذ اور پلاسٹک کے اسکریپ پر سیلز ٹیکس نافذ

جائیداد کی خریدوفروخت پر فائلر پر15 فیصد ٹیکس لگے گا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

بجٹ 2024-25، تانبے، کوئلے، کاغذ اور پلاسٹک کے اسکریپ پر سیلز ٹیکس نافذ

وفاقی حکومت آئندہ مالی سال 25-2024 کے لیے 18 ہزار 887 ارب روپے کا وفاقی بجٹ قومی اسمبلی میں پیش کر رہی ہے، وزیر خزانہ محمد اورنگزیب نے بجٹ تقریر میں کہا ہے کہ وفاقی بجٹ میں ملازمین کی کم سے کم تنخواہ 32 ہزار سے بڑھا کر 37 ہزار کرنے کی تجویز ہے۔

وفاقی بجٹ میں سیلز ٹیکس پندرہ سے بڑھا کر اٹھارہ فیصد کر دیا گیا۔ تانبے، کوئلے، کاغذ اور پلاسٹک کے اسکریپ پر سیلز ٹیکس نافذ کردیا گیا،نان کسٹم پیڈ سگریٹ بیچنے پر دکان سیل ہو گی،فاٹا اور پاٹا کیلئے دی گئی ٹیکس چھوٹ ختم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے،رہائشیوں کو مزید ایک سال انکم ٹیکس چھوٹ ملے گی۔گاڑیوں کی خریداری پر ٹیکس انجن کپیسٹی کے بجائے گاڑی کی قیمت کے تناسب پر لگے گا۔

محمد اورنگزیب نے مزید کہا کہ توانائی کا شعبہ گردشی قرضوں کے چیلنج سے دوچار ہے،یہ قرض اب ناقابل برداشت ہوچکا ہے،پاور سیکٹر کی پیچیدگیوں کا حل بلا شبہ مشکل ہے ،پاور سیکٹر میں نقصانات کم کرنے کیلئے ٹرانسمیشن اینڈ ڈسٹریبوشن کو بہتر بنائیں گے۔9بجلی تقسیم کار کمپنیوں کی نجکاری کا منصوبہ ہے،توانائی کے شعبے میں ڈسٹری بیوشن اورپرفارمنس منیجمنٹ سسٹم کےلئے65ارب روپےجامشورو کول پاور پلانٹ کے لئے 21ارب اور این ٹی ڈی سی کی بہتری کےلئے 11ارب روپےمختص کئے گئے ہیں۔آبی وسائل کے لئے206ارب روپے مختص کیے جارہے ہیں،مہمند ڈیم ہائیڈروپاور پراجیکٹ کےلئے 45ارب روپے مختص کئے گئے ہیں،دیامر بھاشا ڈیم کے لئے 40ارب روپے،چشمہ رائٹ بینک کینال کے لئے 18ارب روپے بلوچستان میں پٹ فیڈر کینال کےلئے 10ارب روپے مختص کئے گئے ہیں۔بجلی چوری کےخلاف مہم میں 50ارب روپے کی بچت ہوئی ہے۔توانائی بچت کو ممکن بنانے والے پنکھوں کیلئے 2ارب روپے مختص کئے گئے ہیں۔

وفاقی وزیر خزانہ نے اپنی بجٹ تقریر میں کہا کہ زراعت ہماری معیشت کا اہم ستون ہے،زراعت ملکی جی ڈی پی کا 24فیصد ہے،زراعت کے ذریعے 37.4فیصد لوگوں کو روزگارملتا ہے،ملک کی فوڈ سیکیورٹی اورصنعتی شعبے کی پیداواری صلاحیت اس شعبے پر منحصر ہے،زراعت،لائیواسٹاک اورماہی پروری بھی قیمتی زرمبادلہ کے بڑے ذرائع ہیں،وزیراعظم نے 2022میں کسان پیکج کے تحت اسکیم کااعلان کیا،اگلے سال اس تجویز کے تحت 5ارب روپے مختص کرنے کی تجویز ہے۔

وزیرخزانہ محمد اورنگزیب نے کہا کہ اوورسیز پاکستانی ملکی معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتے ہیں،اوورسیز پاکستانیوں کی جانب سے بھیجے جانے والے ترسیل زر کا معیشت میں اہم کردار ہے،حکومت بیرون ملک مقیم اہل وطن کیلئے متعدد سہولیات متعارف کروا رہی ہے،ترسیل زر کے فروغ کیلئے 86.9ارب روپے کی رقم مختص کرنے کی تجویز ہے،یہ رقم سوہنی دھرتی اسکیم اور دیگر اسکیموں کیلئے استعمال کی جائے گی۔

وفاقی وزیر خزانہ نے اپنی بجٹ تقریرمیں اعلان کیا کہ آئی ٹی سیکٹر کےلئے 79ارب روپے،کراچی میں آئی ٹی پارک کے قیام کےلئے 8ارب روپے،ٹیکنالوجی پارک اسلام آباد منصوبے کے لئے 11ارب روپے ،ڈیجیٹل انفرا اسٹرکچر کے لئے 20ارب روپے مختص ہونگے۔

وفاقی وزیر خزانہ محمد اورنگزیب نے اپنی بجٹ تقریر میں کہا کہ مالی سال 25-2024 کیلئے اقتصادی ترقی کی شرح3.6 فیصد رہنے کا امکان ہے،افراط زر کی اوسط شرح 12 فیصد متوقع ہے،بجٹ خسارہ جی ڈی پی کا 6.9 فیصد جبکہ پرائمری سر پلیس جی ڈی پی کا ایک فیصد ہوگا،ایف بی آر کے محصولات کا تخمینہ 12 ہزار 970 ارب روپے ہے،ایف بی آر کی اصلاحات کےلئے 7ارب روپے مختص کئے گئے ہیں۔وفاقی حکومت کے کل اخراجات کا تخمینہ 18،877 ارب روپے ہے،صوبوں کا حصہ 7ہزار438 ارب روپے ہو گا،وفاقی نان ٹیکس ریونیو کا ہدف 3ہزار587 ارب روپے ہو گا،وفاقی حکومت کی خالص آمدنی9ہزار119 ارب روپے ہو گی۔

پڑھنا جاری رکھیں

تجارت

مالی سال 25-2024 کیلئے 18 ہزار 877 ارب روپے کا بجٹ پیش کرد یا گیا

پنشن اخراجات کیلئے ایک ہزار چودہ ارب روپے اور بجلی، گیس اور دوسرے شعبوں پر اعانت کے طور پر ایک ہزار تین سو تریسٹھ ارب روپے مختص کئے گئے ہیں

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

مالی سال 25-2024 کیلئے 18 ہزار 877 ارب روپے کا بجٹ پیش کرد یا گیا

آئندہ مالی سال کے وفاقی بجٹ کا اعلان کر دیا گیا ہے جس کا مجموعی حجم اٹھارہ ہزار آٹھ سو ستتر ارب روپے ہے۔

بجٹ میں مالیاتی نظم وضبط اور عام آدمی کے لئے سہولت فراہم کرنے پر خصوصی توجہ دی گئی ہے۔

وزیر خزانہ محمد اورنگزیب نے آج تیسرے پہر قومی اسمبلی میں بجٹ تجاویز پیش کرتے ہوئے کہا کہ ایف بی آر کے جانب سے جمع کئے گئے محاصل کا تخمینہ بارہ ہزار نو سو ستر ارب روپے بنتا ہے جو ختم ہونے والے مالی سال کے مقابلے میں اڑتیس فیصد زیادہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ وفاقی محاصل میں صوبوں کا حصہ سات ہزار چار سو اڑتیس روپے اور ٹیکس کے بغیر محاصل کا تخمینہ تین ہزار پانچ سو ستاسی ارب روپے ہے۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ آئندہ مالی سال میں مجموعی ملکی پیداوار کی شرح نمو 3.6 فیصد رہنے کی توقع ہے۔

انہوں نے کہاکہ افراط زر کی شرح بارہ فیصد اور بجٹ خسارہ 5.9 فیصد رہنے کا امکان ہے ، انہوں نے کہاکہ سود کی ادائیگی کا تخمینہ نوہزار سات سوپچھہتر ارب روپے ہے ، محمد اورنگزیب نے کہاکہ سرکاری شعبے کے ترقیاتی پروگرام کیلئے چودہ سو ارب روپے رکھے گئے ہیں ، انہوں نے کہاکہ سرکاری اور نجی شعبے کی شراکت والے منصوبوں کیلئے اضافی ایک سو ارب روپے رکھے گئے ہیں ۔

انہوں نے کہاکہ دفاعی ضروریات کیلئے دوہزار ایک سو بائیس ارب روپے فراہم کئے جائیںگے، وزیر خزانہ نے کہا کہ شہری انتظامیہ کے اخراجات کیلئے آٹھ سو انتالیس ارب روپے رکھے کئے ہیں۔

پنشن اخراجات کیلئے ایک ہزار چودہ ارب روپے اور بجلی، گیس اور دوسرے شعبوں پر اعانت کے طور پر ایک ہزار تین سو تریسٹھ ارب روپے مختص کئے گئے ہیں۔

محمد اورنگزیب نے کہا کہ بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام، آزادجموںوکشمیر، گلگت بلتستان، ضم شدہ اضلاع، اعلیٰ تعلیمی کمیشن، پاکستان ریلوے اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کے شعبے کیلئے ایک ہزار سات سو ستتر ارب روپے کی گرانٹس مختص کی گئی ہیں۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ ترقیاتی بجٹ کا بڑا حجم بنیادی ڈھانچے، نقل و حمل، توانائی اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کے شعبوں کی ترقی اور آبی وسائل کے نظم و نسق میں مسائل کے حل کیلئے حکومت کے عزم کی عکاسی کرتا ہے۔

 محمد اورنگزیب نے کہا کہ سرکاری شعبے کے زیرتکمیل ترقیاتی پروگرام آئندہ مالی سال میں مکمل کرنے کو ترجیح دی جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ بنیادی سہولیات کے نظام کی ترقی حکومت کی بنیادی ذمہ داری ہے اور اس مقصد کیلئے رقم کا انسٹھ فیصد مختص کرنے کی تجویز ہے۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ متوازن علاقائی ترقی کو یقینی بنانا ایک آئینی ذمہ داری ہے۔

اس لئے آزادجموں وکشمیر، گلگت بلتستان اور قبائلی اضلاع کے لئے دس فیصد وسائل مختص کئے گئے ہیں جبکہ آئی ٹی اور ٹیلی کام، سائنس اور ٹیکنالوجی، نظم و نسق اور پیداوار جیسے دوسرے شعبوں کے لئے تقریباً گیارہ اعشاریہ دو فیصد وسائل رکھے گئے ہیں۔

 وزیر خزانہ نے کہا کہ بنیادی ڈھانچے کیلئے سرکاری شعبے کے ترقیاتی پروگرام میں آٹھ سو چوبیس ارب روپے تجویز کئے گئے ہیں۔

توانائی کے شعبے کیلئے دو سو تریپن ارب روپے، ٹرانسپورٹ اورمواصلات کے شعبوں کیلئے دوسو اناسی ارب روپے، پانی کے شعبے کیلئے دو سو چھ ارب روپے اور منصوبہ بندی اور ہاؤسنگ کیلئے چھیاسی ارب روپے رکھے گئے ہیں۔

سماجی شعبے کیلئے دو سو اسی ارب روپے مختص کئے گئے ہیں جبکہ ختم ہونے والے مالی سال کیلئے دو سو چوالیس ارب روپے مختص تھے۔

آزادجموں وکشمیر اور گلگت بلتستان سمیت خصوصی علاقوں کیلئے 75 ارب روپے، قبائلی اضلاع کیلئے چونسٹھ ارب روپے اور سائنس اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کیلئے اناسی ارب روپے مختص کئے گئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ زراعت سمیت پیداوار کے شعبے کیلئے بھی پچاس ارب روپے رکھے جا رہے ہیں۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ قومی اقتصادی کونسل کے قواعد و ضوابط کے مطابق منظور کئے گئے منصوبوں کو ترجیح دی جائے گی۔

 وزیرخزانہ نے کہا کہ آبی وسائل ، نقل وحمل مواصلات اور توانائی کے شعبوںسمیت تزویراتی اور اہم منصوبوں کو خصوصی اہمیت دی جائے گی۔

انہوں نے کہاکہ غیرملکی اعانت سے شروع کیے گئے منصوبوں کے علاوہ ایسے منصوبوں کی بروقت تکمیل بھی یقینی بنائی جائے گی جن پر پہلے ہی اسی فیصد وسائل خرچ کیے جارہے ہیں ۔

محمد اورنگزیب نے کہاکہ برآمدات میں اضافے کیلئے مصنوعات کا معیار بہتر بنانے اور ڈیجیٹل بنیادی ڈھانچے کی بہتری ، صنعتی ترقی ، زرعی صنعت ، بحری ، معیشت ، سائنس وٹیکنالوجی اورتحقیق وترقی پرمبنی نئے منصوبوں کی حوصلہ افزائی کی جائے گی۔

انہوں نے کہاکہ سالانہ ترقیاتی منصوبے میں پائیدار اور متوازن ترقی کے فروغ کیلئے اقدامات بھی شامل ہیں ۔

وزیرخزانہ نے کہاکہ حکومت شاہراہوں کے نیٹ ورک کی بہتری اور بڑے شہروں اور علاقوں کو ایک دوسرے سے منسلک کرنے سمیت بنیادی ڈھانچے کی ترقی پر خصوصی توجہ دے گی ۔

اس کے علاوہ توانائی کے بنیادی ڈھانجے کو جدید خطوط پروسعت دینے کیلئے بھی اقدامات کیے جارہے ہیں جن میں پن بجلی کے حامل ڈیموں کی تعمیر اور شمسی توانائی کے پلانٹس اور ترسیلی لائنوں تنصیب شامل ہے تاکہ بجلی کی تقسیم کے موثر نظام کویقینی بناتے ہوئے بجلی کی بڑھتی ہوئی ضرورت پوری کی جاسکے۔

محمد اورنگزیب نے کہاکہ پانی کے بہتر انتظام کیلئے بھی اقدامات کیے جائینگے تاکہ سیلاب سے نمٹنے کے علاوہ مقامی اور زرعی ضروریات کیلئے پانی کی دستیابی یقینی بنائی جاسکے۔

 برآمدات میں اضافے کیلئے حکومت کے پختہ عزم کا اظہار کرتے ہوئے وزیرخزانہ نے کہاکہ برآمدات کی نئی شرائط پر قرضہ دینے کی سکیم تین ارب اسی کروڑ روپے سے برھا کر تیرہ ارب اسی کروڑ روپے کرنے کی تجویز ہے ۔

انہوں نے کہاکہ سٹیٹ بنک کے ذریعے پانچ سو انتالیس ارب روپے کی برآمدی مالیاتی سہولت فراہم کی جائے گی ۔

انہوں نے کہاکہ وزیراعظم نے ہدایت کی ہے کہ یہ سہولت چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباری اداروں کے شعبے کے کم ازکم چالیس فیصد اداروں کو دستیاب ہوگی۔

 وزیر خزانہ نے کہا کہ حکومت ٹیکس قوانین میں مساوات اور انصاف کے اصولوں کو لاگو کر رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ٹیکسز میں استثنیٰ اور چھوٹ سے حکومتی آمدن کم ہوتی ہے اورسماجی اور معاشی ترقی بھی متاثر ہوتی ہے۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ سیلز ٹیکس میں چھوٹ اور استثنیٰ کا جائزہ لینے کے بعد حکومت نے بعض رعایتوں اور استثنیٰ کو ختم کرنے کی تجویز دی ہے۔

انہوں نے کہا کہ بعض اشیاء پر کم شرح سے ٹیکس لگایا جائے گا جبکہ بعض اشیاء پر سٹینڈرڈشرح سے ٹیکس لگایا جائے گا۔

حکومت نے ٹیکسٹائل اور چمڑے کی مصنوعات کے ٹائرون پرچون فروشوں پر جی ایس ٹی کی شرح پندرہ سے بڑھا کر اٹھارہ فیصد تک کرنے کی تجویز بھی دی ہے۔

موبائل فونز پر سٹینڈرڈشرح کا اٹھارہ فیصد ٹیکس لاگو کرنے کی تجویز بھی دی گئی ہے۔

بجٹ میں تانبا، کوئلہ، کاغذ اور پلاسٹک کے سکریپ پر ودہولڈنگ ٹیکس لاگو کرنے کی تجویز دی گئی ہے جبکہ لوہے اور سٹیل سکریپ پر سیلز ٹیکس کے استثنیٰ کی تجویز بھی دی گئی ہے تاکہ جعلی یا مصنوعی انوائسز کے رجحان کی حوصلہ شکنی ہو سکے۔

 وزیر خزانہ نے کہا کہ اتحادی حکومت معاشرے کے نادار طبقوں کو زیادہ سے زیادہ مدد فراہم کرنے کیلئے پرعزم ہے۔

انہوں نے کہا کہ اگلے مالی سال کے دوران بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کے تحت مستحق خاندانوں کی مدد کا سلسلہ جاری رہے گا۔

انہوں نے کہا کہ بی آئی ایس پی کا بجٹ ستائیس فیصد اضافے کے ساتھ پانچ سو ترانوے ارب روپے کیا جا رہا ہے۔

محمد اورنگزیب نے کہا کہ کفالت پروگرام سے مستفید ہونے والوں کے لئے بجٹ ترانوے لاکھ سے بڑھا کر ایک کروڑ روپے کر دیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ ان خاندانوں کو نقد رقوم کی منتقلی میں اضافہ کیا جائے گا تاکہ وہ مہنگائی کے اثرات سے محفوظ رہیں۔

انہوں نے کہا کہ تعلیمی وظیفے کے پروگرام میں مزید دس لاکھ بچوں کا اندراج کیا جائے گا۔ اس سے مجموعی اسکالرشپس کی تعداد ایک کروڑ چالیس لاکھ ہو جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ آئندہ مالی سال میں نشوونما پروگرام میں مزید پانچ لاکھ خاندان شامل ہونگے۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll