جی این این سوشل

تفریح

ادیتی راؤ حیدری نے سدھارتھ کے ساتھ تعلقات کی افواہوں پر خاموشی توڑ دی

ادیتی کے دلکش ردعمل نے صرف قیاس آرائیوں کو ہوا دی ہے

پر شائع ہوا

کی طرف سے

ادیتی راؤ حیدری نے سدھارتھ کے ساتھ تعلقات کی افواہوں پر خاموشی توڑ دی
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

ممبئی: ایک حالیہ تقریب میں، اداکارہ ادیتی راؤ حیدری نے آخرکار اداکار سدھارتھ کے ساتھ اپنے مبینہ تعلقات سے متعلق افواہوں کا جواب دیا۔

حال ہی میں ایک تقریب میں پدماوت اداکارہ سے سدھارتھ کے ساتھ ان کے مبینہ تعلقات کے بارے میں پوچھا گیا۔ اس سوال کے جواب میں اداکارہ شرما گئی اور اشارہ کیا کہ وہ کچھ بھی ظاہر نہیں کرے گی۔ سوال پر ادیتی کے دلکش ردعمل نے صرف قیاس آرائیوں کو ہوا دی ہے، جس کی تصدیق کی ایک شکل ہے۔

دونوں نوجوان اداکاروں کے تعلقات کی افواہیں گزشتہ سال سے گردش کر رہی ہیں۔ دونوں کے بارے میں بتایا جاتا ہے کہ جب سے انہوں نے فلم مہا سمندرم میں ایک ساتھ کام کیا ہے تب سے وہ ایک ساتھ ہیں۔

یہ افواہ جوڑے نے ایک دوسرے کی سوشل میڈیا پوسٹس پر بھی بہت سرگرمی سے محبت کا اظہار کیا ہے، خاص طور پر سالگرہ جیسے خاص مواقع پر۔

اسٹار جوڑے نے چنئی میں اے آر رحمان کی بیٹی اور منی رتنم کے پی ایس 1 ایونٹ کے استقبالیہ میں بھی ایک ساتھ شرکت کی۔

جرم

سیکیو رٹی فورسز نے طالبان کے مراکز قائم کرنے کی کوشش ناکام بنادی

ابتدائی تفتیش کے مطابق نیٹ ورک کے تانے بانے اندرونی اور بیرونی دہشت گردوں سے ملتے ہیں۔ گرفتار کمانڈر مختلف علاقوں میں دہشت گردی کی کارروائیوں میں ملوث تھا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

سیکیو رٹی  فورسز نے طالبان کے مراکز قائم کرنے کی کوشش ناکام بنادی

کوئٹہ: صوبہ بلوچستان میں قانون نافذ کرنے والے اداروں نے کامیاب انٹیلی جنس بیسڈ آپریشن (IBO) کر کے کئی خطرناک دہشت گردوں کو گرفتار کر لیا۔

تفصیلات کے مطابق خفیہ ایجنسی اور قانون نافذ کرنے والے اداروں نے بلوچستان میں کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کے مراکز قائم کرنے کی کوشش ناکام بنا دی۔


واضح رہے کہ گرفتار ہونے والوں میں کالعدم ٹی ٹی پی کا انتہائی خطرناک اور مطلوب کمانڈر بھی شامل ہے۔

ابتدائی تفتیش کے مطابق نیٹ ورک کے تانے بانے اندرونی اور بیرونی دہشت گردوں سے ملتے ہیں۔ گرفتار کمانڈر مختلف علاقوں میں دہشت گردی کی کارروائیوں میں ملوث تھا۔ مزید تفتیش جاری ہے، ملک میں موجود مختلف دہشت گردوں کے گٹھ جوڑ کے بارے میں بھی اہم راز سامنے آنے کی توقع ہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

سب کو ٹیکس نیٹ میں لانے کے سوا کوئی چارہ نہیں، وفاقی وزیر خزانہ

معیشت کی ڈیجیٹائزیشن حکومت کی اولین ترجیح ہے، محمد اورنگزیب

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

سب کو ٹیکس نیٹ میں لانے کے سوا کوئی چارہ نہیں، وفاقی وزیر خزانہ

وفاقی وزیر خزانہ محمد اورنگزیب نے کہا ہے کہ سب کو ٹیکس نیٹ میں لانے کے سوا کوئی چارہ نہیں۔

وفاقی وزیر خزانہ محمد اورنگزیب نے معاشی ٹیم کے ہمراہ پوسٹ بجٹ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ٹیکس ٹو جی ڈی پی کو 13 فیصد تک لے کر جائیں گے، معیشت کی ڈیجیٹائزیشن حکومت کی اولین ترجیح ہے۔

وزیر خزانہ محمد اورنگزیب پوسٹ بجٹ پریس کانفرنس کے لیے پہنچے تو میڈیا نمائندگان نے تنخواہوں پر ٹیکس کیخلاف احتجاج کیا۔ میڈیا نمائندگان نے نشستوں سے کھڑے ہو کر احتجاج کیا اور کہا کہ تنخواہ دار طبقے پر سب سے زیادہ ٹیکسوں کا بوجھ ڈالا گیا، حکومت متوسط طبقے کیلئے ریلیف کے اقدامات کرے۔

محمد اورنگزیب نے تنخواہ دار طبقے پر ٹیکسوں میں اعتراض کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ زیادہ آمدن والوں پر زیادہ ٹیکس کا نفاذ ہوگا کسی کو اعتراض نہیں ہونا چاہیے۔ پٹرولیم لیوی پر ٹیکس لگانے کا فیصلہ عالمی تیل کی کمپنیوں کو دیکھ کر کریں گے، عالمی تیل کی کمپنیوں کے معاملات کو مانیٹر کر رہے ہیں، نان فائلرز کی اختراع سمجھ نہیں آتی، نان فائلرز کی اختراع شاید ہی کسی اور ملک میں ہو گی، نان فائلرز کے کاروبار اور لین دین پر ٹیکس کی شرح بڑھا رہے ہیں نان فائلرز کے لیے بزنس ٹیکس ٹرانزیکشن میں اضافہ کیا جا رہا ہے جس کا مقصد انہیں بھی ٹیکس نیٹ میں لانا ہے۔

وفاقی وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ ہمیں ٹیکس کے دائرہ کار کو بڑھانا ہے، 10 فیصد ٹیکس ٹو جی ڈی پی ریشو نا قابل برداشت ہے، ٹیکس ٹو جی ڈی پی کو 13 فیصد پر لے کر جانا ہے جس کے لیے مختلف اداروں کو بہتر کرنا ہے، تنخواہ دار طبقے کیلئے کم ازکم چھوٹ برقرار ہے، تنخواہ دار طبقے پر زیادہ سے زیادہ ٹیکس 35 فیصد ہے۔31 ہزار ریٹیلرز رجسٹرڈ ہو چکے ہیں، ٹیکس کا اطلاق جولائی سے ہو گا، یہ ٹیکس 2022 میں لگ جانا چاہیے تھا، ریٹیلرز اور ہول سیلرز کو ٹیکس نیٹ میں لانے کا مقصد بوجھ بانٹنا ہے، ٹیکس سلیب میں ردوبدل ممکن ہے، سب کو ٹیکس نیٹ میں لانے کے سوا کوئی چارہ نہیں ہے۔

ان  کا کہنا تھا کہ ایف بی آر کی ورک فورس موبلائز ہوئی ہے، مفتاح اسماعیل نے 2022 میں فکسڈ ٹیکس کی بات کی تھی، آئی ٹی سیکٹر میں نوجوانوں کو سہولیات فراہم کریں گے، نوجوانوں کو نوکریاں دینی ہیں اور روزگار ان کی ضرورت ہے۔ پی آئی ایس پی کے افراد کو کس بجٹ میں سہولت ملی، ماضی میں بھی کتنے وزرائے خزانہ نے تاجروں کو یقین دہانی کرائی کہ آپ کو سہولیات دیں گے۔ آئی ٹی سیکٹر کے لیے بہت بڑی رقم مختص کی ہے، مختص رقم سے آئی ٹی سیکٹر میں انفرااسٹرکچر بہتر کیا جا سکے گا، ٹریک اینڈ ٹریس کا نظام تمباکو، سیمنٹ، کھاد اور دیگر سیکٹرز میں جانا تھا، ٹریک اینڈ ٹریس سسٹم کے نفاذ میں شاید مسئلہ تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ تنخواہ پر 6 لاکھ روپے انکم ٹیکس کی چھوٹ برقرار رکھی ہے، نان سیلریڈ کلاس میں پروفیشنل کمیونٹی ہے، اس کےلئے ٹیکس 45 فیصد کیا ہے، ریٹیلرز اور ہول سیلرز کو ٹیکس نیٹ میں لانا ضروری ہے۔ اپریل میں درخواست کی کہ تاجر خود کو رجسٹرڈ کروائیں، یہ رضاکارانہ طور پر رجسٹریشن کا طریقہ تھا، 31ہزار ریٹیلرز رجسٹرڈ ہوچکے ہیں۔ کوئی چارہ نہیں کہ ان سیکٹرز کو ٹیکس نیٹ میں لایا جائے، جولائی سے ریٹیلرز اور ہول سیلرز پر ٹیکس لگے گا، اس وقت 90 کھرب روپے نقد زیر گردش ہیں، نقد کی ٹرانزیکشن کو ختم کرنا چاہتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ گورنر سٹیٹ بینک کے ساتھ بینک نئی سکیمز لائیں گے، زرعی شعبے کی فنانسنگ بڑھائی جائے گی، فری لانسر اور ایس ایم ایز کے لئے فنانسنگ پر کام کررہے ہیں، ایکسپورٹ ری فنانس کی سہولت ایگزم بینک منتقل کر رہے ہیں، پی ایس ڈی پی میں جاری منصوبوں کو مکمل کیا جائے گا۔

ان کا کہنا ہے کہ سیلز ٹیکس میں بہت بڑی لیکیج ہے جس کو پلگ کرنا ہے، سیلز ٹیکس سے متعلق ترجیح ہے کہ اینڈ ٹو اینڈ ڈیجیٹائز کریں، ہمارے پاس ڈیٹا موجود ہے کہ کس کے پاس کتنی گاڑیاں اور وہ کتنا بل دیتے ہیں لائف سٹائل کا سارا ڈیٹا ہمارے پاس موجود ہے، اس ڈیٹا کے جائزے کے لیے ٹیم بنائیں گے جو چیک کرے، اس کے بعد فیلڈ ٹیم کو اس پر عمل درآمد کا کہیں گے۔

انہوں نے کہا ہے کہ حکومت جس جس سیکٹر سے نکل جائے اتنا ہی بہتر ہے، حکومت کو پرائیوٹ سیکٹر کو آگے لانے کے لیے ماحول دینا ہو گا، ٹیکسز لیکیج کو کم کرنے کے لیے ٹریک اینڈ ٹریس سسٹم لایا گیا جس کا مقصد تمباکو اور سیمنٹ سمیت ہر شعبے میں ٹیکس چوری روکنا تھا۔

 

پڑھنا جاری رکھیں

تجارت

ڈالر کے مقابلے میں پاکستانی روپیہ مستحکم

اوپن مارکیٹ میں روپیہ ڈالر کے مقابلے میں 0.13 روپے کی کمی سے 280.25 روپے پر طے ہوا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

ڈالر کے مقابلے میں پاکستانی روپیہ  مستحکم

کراچی: انٹربینک مارکیٹ میں جمعرات کو  ڈالر کے مقابلے پاکستانی روپے کی قدر میں دو پیسے کا اضافہ ہوا۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے مطابق مقامی یونٹ گرین بیک کے مقابلے میں دو پیسے اضافے کے بعد 278.61 پر بند ہوا۔ 

اوپن مارکیٹ میں روپیہ ڈالر کے مقابلے میں 0.13 روپے کی کمی سے 280.25 روپے پر طے ہوا۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll