جی این این سوشل

علاقائی

کار سرکارمداخلت پر جمشید دستی کے خلاف مقدمہ درج

جمشید دستی نے پرائس کنٹرول مجسٹریٹ کو ہراساں کرنے اور کار سرکارمیں مداخلت کی ہے، ایف آئی آر کا متن

پر شائع ہوا

کی طرف سے

کار سرکارمداخلت پر جمشید دستی کے خلاف مقدمہ درج
کار سرکارمداخلت پر جمشید دستی کے خلاف مقدمہ درج

پرائس کنٹرول مجسٹریٹ کو ہراساں کرنے اور کار سرکار میں مداخلت پر جمشید دستی کے خلاف مقدمہ درج کر لیا گیا۔

پولیس ذرائع کے مطابق جمشید دستی نے ساتھیوں کے ہمراہ گراں فروشوں پر عائد جرمانوں کی رسیدیں پھاڑ دیں،جس پر پولیس نے مقدمہ درج کر لیا۔

درج کی گئی ایف آر کے متن کے مطابق جمشید دستی نے پرائس کنٹرول مجسٹریٹ کو ہراساں کرنے اور کار سرکارمیں مداخلت کی ہے۔انہوں نے لوگوں کو افسران کے خلاف احتجاج پر اُکسایا ہے۔

ذرائع کے مطابق جمشید دستی کی تاحال گرفتاری عمل میں نہیں لائی گئی۔

پاکستان

پی ڈی ایم اے نے پنجاب میں مون سون ہواؤں کی پیش گوئی کردی

پی ڈی ایم اے کے نوٹیفکیشن کے مطابق جولائی کے پہلے ہفتے میں 15 سے 50 ملی میٹر اور دوسرے ہفتے میں 25 سے 35 ملی میٹر بارش کا امکان ہے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

پی ڈی ایم اے نے پنجاب میں مون سون ہواؤں کی پیش گوئی کردی

لاہور: پراونشل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (پی ڈی ایم اے) نے اتوار کو صوبے بھر کی انتظامیہ کو مون سون کی بارشوں کے حوالے سے نوٹیفکیشن جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس سال 35 فیصد زیادہ بارشوں کا امکان ہے۔

پی ڈی ایم اے نے یکم جولائی سے پنجاب میں مون سون بارشوں کے آغاز کی پیش گوئی کی ہے۔

پی ڈی ایم اے کے نوٹیفکیشن کے مطابق جولائی کے پہلے ہفتے میں 15 سے 50 ملی میٹر اور دوسرے ہفتے میں 25 سے 35 ملی میٹر بارش کا امکان ہے۔

نوٹیفکیشن میں بتایا گیا ہے کہ جولائی کے تیسرے ہفتے بالائی اور جنوبی پنجاب میں 15 سے 25 ملی میٹر جبکہ چوتھے ہفتے میں 50 سے 70 ملی میٹر بارش ہو سکتی ہے۔ بالائی، وسطی اور جنوبی پنجاب میں گرج چمک کے ساتھ موسلادھار بارش کا امکان ہے۔

پی ڈی ایم اے کے نوٹیفکیشن میں جولائی میں مون سون کی بارشوں کی وجہ سے جنوبی پنجاب میں شہری سیلاب اور پہاڑی طوفان کے خطرے سے خبردار کیا گیا ہے۔

وزیر اعلیٰ مریم نواز کی ہدایات کے مطابق متعلقہ محکموں کو الرٹ کر دیا گیا ہے۔

ڈی جی پی ڈی ایم اے عرفان علی کاٹھیا نے اس بات پر زور دیا کہ ضلعی انتظامیہ مون سون کی بارشوں سے قبل تمام احتیاطی تدابیر کو یقینی بنائے اور ندی نالوں اور نکاسی آب کے نظام کی صفائی کا کام جلد از جلد مکمل کیا جائے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

اسرائیلی فوج کی غزہ میں اقوام متحدہ کے ادارے پر بمباری، 4 فلسطینی شہید

غزہ جنگ میں فلسطینیوں کے شہادت سے ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 37 ہزار سے تجاوز کر گئی ہے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

اسرائیلی فوج کی غزہ میں اقوام متحدہ کے  ادارے پر بمباری، 4 فلسطینی شہید

غزہ میں اسرائیلی فوج کی جارحیت کا سلسلہ بلا تعطل 7 ماہ سے جاری ہے اور تازہ حملے میں مزید 4 فلسطینیوں کے شہادت سے ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 37 ہزار 598 ہوگئی۔

عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق اسرائیلی فوج نے غزہ میں اقوام متحدہ کے امدادی ادارے اونرا کے ایک اور مرکز کو نشانہ بنایا۔ اسرائیلی فوج کے حملے کے وقت وہاں درجنوں افراد موجود تھے۔

اقوام متحدہ کے ادارے اونرا کے ترجمان نے بتایا کہ اسرائیلی حملے میں متعدد افراد زخمی ہوگئے جنہیں اسپتال منتقل کردیا گیا۔ اسپتال میں دوران علاج 4 افراد نے دم توڑ دیا جب کہ 6 زخمیوں کی حالت نازک ہے۔

خیال رہے کہ اقوام متحدہ کی امدادی تنظیم اونرا کے مرکز پر یہ پہلا حملہ نہیں بلکہ اس سے قبل بھی اسرائیلی فوج نے امدادی سامان کے لیے جمع ہونے والے فلسطینی پناہ گزینوں کو نشانہ بنایا گیا تھا۔

ایسے دردناک واقعات میں شہید اور زخمی ہونے والوں کی تعداد 2 ہزار سے تجاوز کرگئی ہے اور عالمی رہنماؤں سمیت انسانی حقوق کی تنظیموں نے ان واقعات کی شدید مذمت کی تھی لیکن اسرائیل ہٹ دھرمی پر قائم ہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

جرم

عدالتیں مذہبی اقلیتوں اور معاشرے کے دیگر کمزور طبقات کے تحفظ کو یقینی بنائیں، وزیر قانون

وزیر قانون اعظم نذیر تارڑ کی طرف سے پیش کی گئی قرارداد میں کہا گیا کہ یہ ایوان اس بات پر یقین رکھتا ہے کہ زندگی کا حق سب سے زیادہ عزیز حق ہے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

عدالتیں مذہبی اقلیتوں اور معاشرے کے دیگر کمزور طبقات کے تحفظ کو یقینی بنائیں، وزیر قانون

اسلام آباد: قومی اسمبلی نے اتوار کو ملک کے مختلف حصوں میں موب لنچنگ کے ہولناک اور المناک واقعات کی شدید مذمت کرتے ہوئے قرارداد منظور کرلی۔

وزیر قانون اعظم نذیر تارڑ کی طرف سے پیش کی گئی قرارداد میں کہا گیا کہ یہ ایوان اس بات پر یقین رکھتا ہے کہ زندگی کا حق سب سے زیادہ عزیز حق ہے جیسا کہ پاکستان کے آئین میں درج ہے۔  انہوں  نے کہا کہ ہر شخص کے ساتھ قانون کے مطابق نمٹا جائے۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ ایوان سوات اور سرگودھا میں جرائم کے الزام میں ہمارے شہریوں کی حالیہ ہجومی تشدد کا نوٹس لیتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہ بات انتہائی تشویش ناک  ہے کہ حال ہی میں ملک کے مختلف حصوں میں ایسے واقعات میں اضافہ ہوا ہے جسے کسی بھی مہذب معاشرے میں برداشت نہیں کیا جا سکتا۔

 ایوان نے وفاقی اور صوبائی حکومتوں پر زور دیا کہ وہ تمام شہریوں بشمول مذہبی اقلیتوں اور معاشرے کے دیگر کمزور طبقات کے تحفظ کو یقینی بنائیں۔

ایوان نے یہ بھی مطالبہ کیا کہ خیبرپختونخوا اور پنجاب کی صوبائی حکومتیں ان واقعات میں ملوث افراد کی شناخت، تفتیش اور متعلقہ قوانین کے تحت ان کے خلاف کارروائی کو یقینی بنانے کے لیے فوری طور پر تمام ضروری اقدامات کریں۔

قرارداد میں اس توقع کا اظہار کیا گیا کہ عدالتیں ان مقدمات میں فوری اور جلد انصاف کو یقینی بنائیں گی۔

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll