جی این این سوشل

علاقائی

بٹگرام میں خاتون کےہاں 7بچوں کی پیدائش

بٹگرام : 34سالہ خاتون نے سات بچوں کوجنم دے دیا۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

بٹگرام میں خاتون کےہاں 7بچوں کی پیدائش
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

تفصیلات کے مطابق ہسپتال کے ایڈمنسٹریٹرکرنل (ر)ڈاکٹرحامدسعیدالحق کے مطابق پٹھان قبیلے سے تعلق رکھنے والی 34سالہ خاتون نے ایک ساتھ سات بچوں کوجنم دیاہے۔

اسپتال انتظامیہ کا کہنا ہے کہ  تمام بچےنارمل ،قبل ازوقت پیدائش کےباعث آئی سی یومیں ہیں، بچوں میں4لڑکےاور3لڑکیاں شامل ہیں۔

ڈاکٹرز کا کہنا ہے کہ   نارمل بچے کی پیدائش 36ہفتوں میں ہوتی ہے لیکن ان کی پیدائش 32ہفتے بعدہوئی ہے،  رخسانہ نامی خاتون نے چارلڑکوں  اورتین لڑکیوں  کوجنم دیاہے،  ماں سمیت تمام بچے نارمل ہیں۔

خیال رہے کہ 

واضح رہے کہ رواں سال جون میں راولپنڈی کے بینظیر بھٹو اسپتال میں خاتون کے ہاں بیک وقت چار بچوں کی پیدائش ہوئی تھی جس میں تین بیٹیاں اور ایک بیٹا شامل تھا۔

علی رضا گزشتہ ڈیڑھ سال سے ویب جرنلسٹ کے طور پر کام کر رہے ہیں۔ انہوں نے پنجاب یونیورسٹی سے گریجویشن کیا ہے۔ علی رضا اس سے قبل معروف نیوز آرگنائزیشنز کے لیے کام کر چکے ہیں اور اب جی این این کے ساتھ بطور سینئر کنٹینٹ رائٹر وابستہ ہیں۔

علاقائی

کاشتکارگندم کی پچھیتی کاشت ہر صورت 10 دسمبر تک مکمل کر لیں ، ترجمان محکمہ زراعت پنجاب

لاہور: ترجمان محکمہ زراعت پنجاب کا کہنا ہے کہ گندم کے کاشتکار غیر معمولی تاخیر سے بچنے کے لئے جہاں ضروری ہوخشک بوائی کریں۔

پر شائع ہوا

Ali Raza

کی طرف سے

کاشتکارگندم کی پچھیتی کاشت ہر صورت 10 دسمبر تک مکمل کر لیں ، ترجمان محکمہ زراعت پنجاب

تفصیلات کے مطابق ترجمان محکمہ زراعت پنجاب کا کہنا ہے کہ  کاشتکارگندم کی پچھیتی کاشت ہر صورت 10 دسمبر تک مکمل کر لیں ،  گندم کے کاشتکار غیر معمولی تاخیر سے بچنے کے لئے جہاں ضروری ہوخشک بوائی کریں، گندم کو مختلف بیماریوں سے بچاؤ کے لئے محکمہ زراعت کے مشورہ سے زہر بوائی سے قبل استعمال کریں ۔

ترجمان محکمہ زراعت پنجاب کے مطابق کھاد کی پوری مقدار بوقت بوائی استعمال کریں ، گندم کے کاشتکاریکم تا 10دسمبر 50سے55کلوگرام بیج فی ایکڑاستعمال کریں ، بیج کے اُگاؤ کی شرح85 فیصد سے ہرگز کم نہیں ہونی چاہیے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

پاکستان میں کورونا سے اموات اور کیسز کی شرح میں کمی کارجحان  برقرار 

اسلام آباد:  پاکستان میں کورونا وائرس سے اموات اور کیسز کی شرح میں بتدریج کمی آرہی ہے،   گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کورونا کے مثبت کیسز کی شرح 1.1فیصد رہی۔

پر شائع ہوا

Asma Rafi

کی طرف سے

پاکستان میں کورونا سے اموات اور کیسز کی شرح میں کمی کارجحان  برقرار 

نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کی جانب سے جاری کیے گئے تازہ اعداد و شمارکے مطابق  ملک میں کورونا وائرس کی  چوتھی  لہر کے دوران ملک میں  مزید10 افراد  انتقال  کرگئے جبکہ 475نئے کیسز رپورٹ ہوئے ۔ 

ملک میں کورونا سے  اموات کی تعداد 28ہزار 728 ہوگئی ہے اور مجموعی کیسز 12 لاکھ 42ہزار 236تک جاپہنچے ہیں۔  

این سی اوسی  کے مطابق پاکستان میں کوروناکے905مریضوں کی حالت تشویشناک ہے ۔جبکہ چوبیس گھنٹے کے دوران  42 ہزار 577افراد کے ٹیسٹ کئےگئے گئے ۔

ملک میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران مزید 327افراد کورونا وائرس سے صحتیاب ہوئے ہیں ۔ اب تک  95.9 فیصد مریض کوویڈ سے صحت یاب ہوئے ، اب تک   مجموعی طور پر 12 لاکھ 42ہزار 236 مریض کورونا سےصحت یاب ہوچکےہیں۔

واضح رہے کہ پاکستان میں کورونا وائرس کا پہلا کیس 26 فروری 2020 کو ملک کے سب سے بڑے شہر کراچی میں سامنے آیا تھا۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

پاکستان کی او آئی سی کو افغان صورتحال پر اسلام آباد میں اجلاس کرنے کی پیشکش 

اسلام آباد: وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے  کہ ہم نے او آئی سی کو 17 دسمبر 2021 کو اسلام آباد میں اجلاس کی میزبانی کی پیشکش بھی کی ہے، ہم پراعتماد ہیں کہ او آئی سی رکن ممالک اس پیشکش کی تائید کریں گے۔

پر شائع ہوا

Umar Nawaz

کی طرف سے

پاکستان کی او آئی سی کو افغان صورتحال پر اسلام آباد میں اجلاس کرنے کی پیشکش 

تفصیلات کے مطابق وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ افغانستان او آئی سی کا بانی رُکن ہے، اسلامی امہ کا حصہ ہونے کی حیثیت سے ہم افغانستان کے عوام کے ساتھ اخوت وبھائی چارے کے دائمی برادرانہ رشتوں میں بندھے ہیں۔

شاہ محمود قریشی  نےکہا کہ آج ہمارے افغان بھائیوں اور بہنوں کو ہمیشہ سے بڑھ کر ہماری ضرورت ہے، آپ آگاہ ہیں کہ افغانستان اس وقت سنگین انسانی صورتحال سے دوچار ہے۔

 وزیر خارجہ نے کہا کہ لاکھوں افغان جن میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں جن کو خوراک، ادویات اور دیگر ضروری اشیاءکی فراہمی کی قلت کی بناءپر ایک غیریقینی مستقبل کا سامنا ہے۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ سردیوں کی آمد نے اس انسانی المیہ کو مزید گھمبیر بنادیا ہے، او آئی سی کو افغان بھائیوں کی مدد کے لئے آگے بڑھنا ہوگا۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ افغان عوام کی انسانی ضروریات کو پورا کرنے کی ہماری اجتماعی کوششوں کو تیز کرنا ہوگا، انہیں فوری اور مسلسل مدد فراہم کرنا ہوگی۔

شاہ محمود قریشی کا مزید کہنا تھا کہ افغانستان کی صورتحال پر او آئی سی کی وزرا خارجہ کونسل کا پہلا غیرمعمولی اجلاس جنوری 1980 میں اسلام آباد میں منعقد ہوا تھا، افغان عوام کے ساتھ دائمی بھائی چارے اور ان کی حمایت میں اگلے ماہ ایک بار پھر ہم اسلام آباد میں جمع ہوں گے۔

 

 

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll