جی این این سوشل

علاقائی

این اے 133 ضمنی انتخاب میں پبلک آفس ہولڈرز کے حلقے میں داخلے پر پابندی

لاہور: الیکشن کمیشن آف پاکستان نے رکن اسمبلی، حکومتی عہددران اور پبلک آفس ہولڈرز  کے حلقہ این اے 133 کے ضمنی انتخابات کے دوران داخلے پر پابندی عائد کردی۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

این اے 133 ضمنی انتخاب میں پبلک آفس ہولڈرز کے حلقے میں داخلے پر پابندی
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

تفصیلات کے مطابق ریٹرنگ آفیسر نے اس حوالے سے سی سی پی او لاہور اور ڈی سی کو مراسلہ جاری کردیا۔

مراسلے میں کہا گیا کہ الیکشن قوانین کے مطابق کوئی پبلک آفس ہولڈر حلقے میں کسی سطح پر بھی انتخابی مہم میں حصہ نہیں لے سکتے۔

مراسلے میں ہدایت کی گئی کہ اگر کوئی رکن اسمبلی یا پبلک آفس ہولڈرز حلقے میں انتخابی مہم چلائیں تو پولیس فوری کارروائی کرکے متعلقہ شخصیت کو حلقے سے باہر نکالے۔

الیکشن کمیشن کا کہنا ہے کہ این اے 133 میں ضمنی انتخابات 5 دسمبر کو ہونے ہیں ، قوانین کے مطابق تمام امیدواروں کو یکساں مواقع فراہم کرنے ہیں۔

 

 

عمر نواز گزشتہ چھ ماہ سے جی این این کے ساتھ بطور ویب جرنلسٹ کام کر رہے ہیں۔ وہ پنجاب یونیورسٹی سے ڈویلپمنٹ جرنلزم میں گریجویٹ ہیں۔ جناب عمر اس سے قبل چینل 24 نیوز ایچ ڈی کے ساتھ بطور پینل پروڈیوسر، وقت نیوز چینل اور 7 نیوز میں بطور نیوز رپورٹر اور روزنامہ اوصاف سب ایڈیٹر کے طور پر کام کر چکے ہیں۔

جرم

کورونا وباء: دنیا کے 10 امیرترین افراد کی دولت دُگنی ہوگئی

ایلون مسک، جیف بیزوس سمیت دنیا کے دس امیر ترین آدمیوں کی دولت کورونا سے پہلے 700 ارب ڈالرز تھی اب 1500 ارب ڈالرز ہوگئی ہے۔

پر شائع ہوا

Muhammad Akram

کی طرف سے

کورونا وباء: دنیا کے 10 امیرترین افراد کی دولت دُگنی ہوگئی

کورونا سے دنیا بھر میں جہاں غربت بڑھی وہاں کئی افراد کا بینک بیلنس آوٹ آف کنٹرول ہو گیا۔ کورونا کے گزشتہ دو سال کے دوران دنیا کے 10 امیرترین افراد کی دولت دُگنی ہوگئی۔

دنیا میں غربت کے خاتمے کے لیے کام کرنے والی کنفیڈریشن اوکسفیم Oxfam کی رپورٹ کے مطابق دسمبر 2021 تک امیر ترین افراد کی دولت 7 کھرب ڈالر سے بڑھ کر 15 کھرب ہوگئی۔

ایلون مسک، جیف بیزوس سمیت دنیا کے دس امیر ترین آدمیوں کی دولت کورونا سے پہلے 700 ارب ڈالرز تھی اب 1500 ارب ڈالرز ہوگئی ہے۔

فوربز میگزین کے ارب پتیوں کی فہرست سے لیے گئے اعداد و شمار کے مطابق، وبائی امراض کے پہلے 20 مہینوں میں ایلون مسک کی دولت میں 10 گنا اضافہ ہوا اور وہ 294 بلین ڈالر تک پہنچ گئی۔

اس عرصے کے دوران جب وال سٹریٹ پر ٹیکنالوجی کے ذخائر بڑھ رہے تھے، ایمازون کے مالک جیف بیزوس کی دولت 67 فیصد بڑھ کر 203 بلین ڈالر ہو گئی، فیس بک کے مارک زکربرگ کی دولت دگنی ہو کر 118 بلین ڈالر ہو گئی، جب کہ مائیکرو سافٹ کے بانی بل گیٹس کی دولت 31 فیصد بڑھ کر 137 بلین ڈالر ہو گئی۔

اوکسفیم رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ اس دوران دوسری طرف دنیا بھر میں عدم مساوات کے باعث نا صرف غربت بڑھی بلکہ ہر چار سیکنڈ میں ایک موت بھی واقع ہوئی۔ اوکسفیم کے مطابق 2030 تک 3.3 ارب لوگ روزانہ 5 اعشاریہ 50 ڈالر سے بھی کم پر زندگی گزار رہے ہوں گے۔

ادارے کا کہنا ہے جہاں دنیا میں 99 فیصد لوگوں کی تنخواہوں میں کٹوتی ہوئی وہاں ان 10 افراد کی آمدنی میں ایک دن میں 1 ارب ڈالر کا اضافہ ہوا۔

پڑھنا جاری رکھیں

کھیل

قومی کبڈی چیمپئن شپ کا فائنل میچ، پاکستان کبڈی فیڈریشن نے  اپنا فیصلہ تبدیل کرلیا

لاہور: پاکستان کبڈی فیڈریشن نے  پاکستان ائیر فورس اور واپڈاکی ٹیموں  کو مشترکہ فاتح  قرار دے دیا۔

پر شائع ہوا

Ali Raza

کی طرف سے

قومی کبڈی چیمپئن شپ کا فائنل میچ، پاکستان کبڈی فیڈریشن نے  اپنا فیصلہ تبدیل کرلیا

تفصیلات کے مطابق 42ویں قومی کبڈی چیمپئن شپ کا فائنل میچ آج لاہور میں ہوا ۔ پاکستان کبڈی فیڈریشن نے  اپنا فیصلہ تبدیل کرلیا۔پاکستان ائیر فورس اور واپڈاکی ٹیموں  کو مشترکہ فاتح  قرار دے دیا۔ ٹرافی چھے ماہ  پاکستان واپڈا کے پاس رہے گی اور چھے ماہ پاکستان ائیر فورس کے پاس رہےگی،اس سے پہلے  واپڈ ا کی ٹیم کو  فاتح قرار دیاگیاتھا۔

قبل ازیں  42 ویں قومی کبڈی چیمپئن شپ پاکستان واپڈا کے نام کی گئی تھی،  پاکستان ائیر فورس  نے  دوبارہ گراونڈ میں آنے سے انکار کیا تھا،  فائنل میچ تنازعے کا شکار ہونے کے باعث  منتظمین نے واپڈا کو  چیمپئن قرار دے دیا تھا،  واپڈا نے 47اور پاکستان ائیر فورس نے 46 پوائنٹس حاصل  کئے تھے اور  وزیر مملکت  برائے اطلاعات فرخ حبیب انعامات تقسیم کیے بغیر روانہ ہوگئے تھے۔

پڑھنا جاری رکھیں

تفریح

پاکستان کے قومی مصورعبدالرحمٰن چغتائی  کا 47 واں یوم وفات

ویب ڈیسک : معروف مصور عبدالرحمٰن  چغتائی  کو اس دنیا سے رخصت ہوئے 47 برس بیت گئے۔ 

پر شائع ہوا

Asma Rafi

کی طرف سے

پاکستان کے قومی مصورعبدالرحمٰن چغتائی  کا 47 واں یوم وفات

عبدالرحمن چغتائی 21 ستمبر 1897 میں لاہور کے ایک محلہ چابک ساواراں میں پیدا ہوئے ۔ ان کے آباؤ اجداد کا تعلق  تعمیرات، مصوری اور نقاشی سے تھا۔ ان کا خاندان چودہ پشتوں سے  عمارت سازی سے وابستہ رہا ۔ ان کے پردادا صلاح معمارکا شمار ان لوگوں میں ہوتا ہے  ، جو تاج محل، لال قلعہ اور بادشاہی مسجد جیسی عظیم عمارتوں کے خالق تھےاور جن  کی تخلیقات دنیا کےمختلف عجائب گھروں کی زینت بنتی تھی۔ 

مصورِ مشرق کا خطاب پانے والے عبد الرحمن چغتائی   نے جو تصویر بنائی شاہکار ٹھہری۔جس خیال کو بھی کینوس پر اتارا  اپنی مثال  آپ بن گیا ۔اپنے فن میں  منفرد مصور کو رنگوں کے استعمال کا ہنر خوب  آتا تھا ، انہوں نے ہمیشہ ہلکے رنگوں کو استعمال کیا اور  ہلکے رنگوں  کے امتزاج سے انہوں نے ایسے فن پارے تخلیق کیے  جن کی چمک آج بھی بر قرار ہے۔

ان کی پینٹنگز میں نفاست چمک اور دیرپا رہنے کی تکنیک کو"واش" کہا جاتا ہے  کیونکہ ان کی بنائی  ہوئی پینٹنگز کو اگر عرصہ دراز  تک پانی میں رکھا جائے تو وہ ویسے ہی چمکدار رہتی ہیں  ۔ عبد الرحمن چغتائی زیادہ تر   اپنی پینٹنگز  میں ہینڈ میڈ پیپر کا استعمال کرتے تھے ۔  غالب کی شاعری ہو یا علامہ اقبال کا کلام عبدالرحمن چغتائی نے معروف شاعروں کے کلام کو رنگوں کی زبان میں   اس خوبصورتی سے ڈھالا کے گویا اشعار  کو مجسم ہی کر دیا۔

عبد الرحمن چغتائی نے 1928 میں "مر قع چغتائی" شائع کی جس میں غالب کے کلام کی مصورانہ تشریح کی گئی  اور یہ اردوکی  اپنے طرز کی پہلی کتاب تھی جسے بے حد سراہا گیا ۔ 1935میں غالب کے کلام پر مبنی ان کی دوسری کتاب "نقش چغتائی"شائع ہوئی اور اس  کتاب نے  بھی بے حد مقبولیت حاصل کی  ۔

عبد الرحمن چغتائی کو  جنوبی ایشیا کا پہلا نمایاں جدید مسلم مصور  اور پاکستان کاقومی مصورسمجھا جاتا ہے۔آپ مغل  آرٹ ،مینی ایچر  اور اسلامی فن  ِ روایات سے متاثر تھےاور  اپنے  منفرد  اور مخصوص    پینٹنگ اسٹا ئل  کی وجہ سے پہچانے جاتے تھے۔انہوں نے  پاکستان کے پہلے ڈاک ٹکٹ ڈیزائن کرنے کے ساتھ ساتھ پی ٹی وی اور ریڈیو پاکستان کا   لوگو بھی ڈیزائن کیا۔

عبدالرحمن چغتائی کی پینٹنگز کی پہلی نمائش لاہور میں "فائن آرٹ سوسائٹی لاہور" اور آخری نمائش  2001 میں" لاہور الحمرا آرٹ گیلری" میں منعقد ہوئی۔ اس سے قبل 1964ء میں " کلام اقبال" کو"عمل چغتائی" مصوری کی نمائش الحمرا میں منعقد ہوئی  جس میں صدرِ پاکستان ایوب خان نے انہیں ایک لاکھ روپے انعام سے نوازا ۔

 عبد الرحمن چغتائی کو1934 میں "خان بہادر" کا لقب دیا گیا ۔عبد الرحمٰن  چغتائی کو ان کی خدمات کے صلے میں  1960 میں  ہلالِ امتیازجبکہ 1964ء میں مغربی جرمنی میں طلائی تمغے سے نوازا گیا۔

عبد الرحمن چغتائی 17 جنوری  1975 کو  اس دنیائے  فانی کو ہمیشہ کے لیے خیر باد کہہ گئے ۔  ان کے گھر کو "چغتائی میوزیم ٹرسٹ آرٹ گیلری"  کے نام سے منسوب کیا گیا ہےاور ان کے صاحبزادے  عارف چغتائی ہر سال 17 جنوری کوچغتائی آرٹ کی نمائش کا اہتمام کرتے ہیں ۔ 

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll