جی این این سوشل

تجارت

نگران وزیر خزانہ شمشاد اختر سے پی سی بی کے وفد کی ملاقات

حکومت مضبوط معیشت کےلئے ٹیکس نیٹ کو بڑھانے اور توانائی کے شعبہ کو درپیش مسائل کے حل کےلئے پرعزم ہے، ڈاکٹر شمشاد اختر

پر شائع ہوا

کی طرف سے

نگران وزیر خزانہ شمشاد اختر سے پی سی بی کے وفد کی ملاقات
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

نگراں وزیر خزانہ ڈاکٹر شمشاد اختر نے کہا ہے کہ حکومت مضبوط معیشت کےلئے ٹیکس نیٹ کو بڑھانے، توانائی کے شعبہ کو درپیش مسائل کے حل کےلئے پرعزم ہے،

نگراں وزیر خزانہ سے کراچی میں پی بی سی کے وفد نے ملاقات کے دوران کہا کہ معیشت کی خوشحالی کو یقینی بنانے کےلئے حکومتی ملکیتی اداروں کی شفافیت اور گورننس میں بہتری ضروری ہے۔

ملاقات کے دوران وفد کی جانب سے نگراں حکومت کی طرف سے سمگلنگ کی روک تھام، ایکسچینج کو درست سمت لانے اور عالمی مالیاتی فنڈ کی معاونت کے حوالے سے کی جانے والی کاوشوں کوسراہا۔

ڈاکٹر شمشاد اختر نے کہا کہ مضبوط معیشت کے لئے حکومت ٹیکس بیس کو بڑھانے اور توانائی کے شعبہ سےمتعلق مسائل کے حل کےلئے پرعزم ہے۔انہوں نے ریاستی ملکیتی اداروں میں شفافیت اور گورننس کو بڑھانے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ اس سے معاشی خوشحالی ممکن ہے 

پاکستان

عدت نکاح کیس : بانی پی ٹی آئی کی سزا کیخلاف اپیلوں پر فیصلہ محفوظ، آج سنایا جائیگا

عدت نکاح کیس میں سزا کیخلاف اپیلوں پر سماعت ایڈیشنل اینڈ سیشن جج افضل مجوکا نے کی

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

عدت نکاح کیس : بانی پی ٹی آئی کی سزا کیخلاف اپیلوں پر فیصلہ محفوظ، آج سنایا جائیگا

 

اسلام آباد کی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن عدالت نے سابق وزیر اعظم عمران خان اور ان کی اہلیہ بشریٰ بی بی کے خلاف عدت نکاح کیس میں سزا کے خلاف اپیلوں پر فیصلہ محفوظ کرلیا جسے دوپہر 3 بجے سنایا جائے گا۔

عدت نکاح کیس میں خاور مانیکا کے وکیل زاہد آصف ایڈووکیٹ اور عمران خان کے وکیل عمران صابر، مرتضیٰ طوری، زاہد ڈار عدالت میں پیش ہوئے۔

وکیل زاہد آصف نے مؤقف اپنایا کہ اگر ملزمان کوئی مزید شواہد پیش کرنا چاہتے ہیں ، تو پیش کر سکتے ہیں، ہمیں کوئی اعتراض نہیں، مزید کہنا تھا کہ کسی بھی پارٹی سے ان کے فقہ کے بارے میں نہیں پوچھا گیا۔

وکیل زاہد آصف نے دلائل دیے کہ مفتی سعید نے بھی نہیں کہا کہ ملزمان حنفی فقہ سے ہیں، سلمان اکرم راجہ کہتے ہیں کہ ان کے کلائنٹ بانی پی ٹی آئی عمران خان نے شادی کی ہے انہیں عدت کے بارے میں علم نہیں۔

وکیل زاہد آصف کا کہنا تھا کہ تمام تر ذمہ داری بشری بی بی کے کندھوں پر منتقل کی جارہی ہے، شوہر عورت کی قربانیوں کو سائیڈ پر رکھ کر کہہ رہا ہے میں نے کچھ نہیں کیا، خاتون مشکل وقت میں خاوند کے ساتھ کھڑی رہی۔

وکیل زاہد آصف نے دلائل جاری رکھتے ہوئے کہا کہ ایک لیڈر سے ایسی توقع نہیں کی جاسکتی، بیوی بنی گالہ کی آسائش چھوڑ کر اڈیالہ جیل تک چلی گئی، ایسے ہو ہی نہیں سکتا اگر شادی ہوئی تو دونوں ذمہ دار ہیں۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بشری بی بی کی جانب سے کہا گیا کہ اپریل 2017 میں زبانی طلاق دی گئی، اگر خاتون کہتی ہے کہ اسے زبانی طلاق دی گئی تو کیا اس کی زبانی بات پر اعتبار کیا جائے گا، زبانی طلاق کی کوئی حیثیت نہیں ہے اس حوالے سے عدالتی فیصلے موجود ہیں، قانون کہتا ہے دستاویزی ثبوت زبانی بات پر حاوی ہو گا۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بشری بی بی نے کس بیان میں کہا شادی عدت کے دوران نہیں ہوئی، مفتی سعید نے بشری بی بی کی بہن کے کہنے پر کہ شادی کے لوازمات پورے ہیں نکاح پڑھوایا، کسی جگہ بشری بی بی نے مفتی سعید کو نہیں کہا کہ انکی عدت پوری ہے ، جس بہن نے عدت پوری ہونے کا کہا اسے پھر بطور گواہ لایا جاتا۔

جج افضل مجوکا نے کہا کہ پراسیکوشن کی ڈیوٹی ہے کہ وہ ثابت کرے کہ عدت پوری نہیں، 16وکیل زاہد آصف نے کہا کہ جنوری 2024 کو بشری بی بی پر فرد جرم عائد ہوئی اور صحت جرم سے انکار کیا، بشری بی بی نے نہیں کہا کہ انھوں نے عدت مکمل ہونے پر شادی کی، بانی پی ٹی آئی کا بیان پر فرد جرم عائد ہوئی، جس کے جواب میں بانی پی ٹی آئی نے کہا کہ یہ جھوٹا کیس ہے اور لندن پلان کا حصہ ہے اور اس کا مقصد پارٹی کا ختم کرنا اور سافٹ ویئر اپ ڈیٹ کرنا ہے۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بانی پی ٹی آئی نے بھی کہیں نہیں کہا کہ انھوں نے عدت مکمل ہونے پر شادی کی، اگر ٹرائل کورٹ میں کوئی غیر قانونی کام ہوا تو کیا کیس ریمانڈ بیک کروانا چاہتے ہیں۔

وکیل عثمان گل نے کہا کہ ہم کیس ریمانڈ بیک نہیں بلکہ ہائی کورٹ کی ٹائم لائن کے مطابق اپیلوں پر فیصلہ چاہتے ہیں۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بشری بی بی کا کوئی بیان دکھا دیں جس میں کہا گیا ہو کہ عدت مکمل کرنے پر شادی کی، پوری کیس فائل میں ایسا بیان موجود نہیں، بطور گواہ عدالت میں پیش ہونے سے بھی دونوں ملزمان نے انکار کیا، بانی پی ٹی آئی اور بشری بی بی اس کیس میں بہترین گواہ تھے۔

وکیل زاہد آصف نے کہا کہ بانی پی ٹی آئی اور بشری بی بی حلف پر اپنے حق میں گواہی دیتے، طلاق ڈیڈ پر ٹمپرنگ کا کہا گیا مگر شواہد پیش نہیں کیے گئے، ہم مطمئن ہیں کہ طلاق ڈیڈ پر کوئی ٹمپرنگ نہیں، اپریل میں کوئی طلاق نہیں دی نومبر 2017 خاور مانیکا نے تحریری طلاق دی۔

انہوں نے مؤقف اپنایا کہ قرآن پاک میں ہے دوران عدت رجوع کرنے کا حق اور عدت مکمل ہونے پر دوسری شادی کی اجازت دی گئی، عدت کے دوران دوسری شادی کا فیصلہ بھی نہیں کیا جا سکتا، اسلام کہتا ہے کہ اکٹھی تین طلاقوں کو ایک تصور کیا جائے گا، خاور مانیکا نے کہیں نہیں کہا کہ وہ فقہ حنفی سے ہیں وہ بطور مسلمان عدالت میں پیش ہوئے ہیں۔

وکیل زاہد آصف کا کہنا تھا کہ جب تک عدت مکمل نہیں ہوتی خاتون طلاق دینے والے کی بیوی ہی تصور گی۔

پڑھنا جاری رکھیں

جرم

کوئٹہ میں گاڑی کے قریب دھماکہ، 1 شخص جاں بحق

پولیس، بم ڈسپوزل سکواڈ اور ایف سی کی بھاری نفری نے موقع پر پہنچ کر شواہد اکٹھے کئے اور تفتیش کا آغاز کر دیا

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

کوئٹہ میں گاڑی کے قریب دھماکہ، 1 شخص جاں بحق

کوئٹہ میں گاڑی کے قریب دھماکے میں ایک شخص جاں بحق جبکہ ایک زخمی ہوگیا۔

ریسکیو ذرائع کے مطابق دھماکا بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ کے علاقے اختر آباد میں مغربی بائی پاس کے قریب پیش آیا۔

دھماکے کی اطلاع ملتے ہی پولیس اور دیگر قانون نافذ کرنیوالے اداروں کے اہلکار اور ریسکیو حکام جائے وقوعہ پہنچ گئے، پولیس، بم ڈسپوزل سکواڈ اور ایف سی کی بھاری نفری نے موقع پر پہنچ کر شواہد اکٹھے کئے اور تفتیش کا آغاز کر دیا۔

ریسکیو حکام کا کہنا ہے کہ جاں بحق ہونے والے شخص اور زخمی کو ہسپتال منتقل کر دیا گیا ہے۔

پڑھنا جاری رکھیں

دنیا

جنگلی ہاتھی کا جنگل میں رحم دلی کا مظاہرہ ، ہاتھی  شیرنی کے بچوں پر حملہ کرنے سے گریزاں 

ہاتھی کو دیکھ کر شیرنی نے بدحواسی میں اپنے چھوٹےبچوں سمیت  بھاگنا شروع کیا، مگر بدقسمتی سے شیرنی کے بچے پیچھے رہ گئے

پر شائع ہوا

ویب ڈیسک

کی طرف سے

جنگلی ہاتھی کا جنگل میں رحم دلی کا مظاہرہ ، ہاتھی  شیرنی کے بچوں پر حملہ کرنے سے گریزاں 

ایک جنگلی ہاتھی نے جنگل کے قانون میں انسانیت کی شق متعارف کروا دی۔  شیرنی کے بچوں کو تنہا دیکھتے ہوئے ایک جنگلی ہاتھی  حملہ کرنے سے پیچھے ہٹ گیا۔   
تفصیلات کےمطابق ایک سوشل میڈیا صارف نے ایک ویڈیو شیئر کی، جس میں ایک شیرنی اپنے بچوں کے ساتھ جنگل میں چہل قدمی کر رہی تھی۔ اچانک ایک بڑے ہاتھی نے شیرنی کو اس کے بچوں سمیت  دیکھ لیا۔ ہاتھی، شیرنی کو دیکھ کر شیرنی کی جانب لپکا۔ ہاتھی کے اچانک حملے سے شیرنی بدحواس ہو گئی۔ 
ہاتھی کو دیکھ کر شیرنی نے بدحواسی میں اپنے چھوٹےبچوں سمیت  بھاگنا شروع کیا، مگر بدقسمتی سے شیرنی کے بچے پیچھے رہ گئے۔ 
ہاتھی نے شیرنی کا تعاقب کیا، مگر شیرنی تب تک دور جا چکی تھی۔ 
شیرنی تو ہاتھی کی پہنچ سے دور نکل گئی، مگر شیرنی کے بچے ہاتھی کی دسترس میں آگئے۔ 
عین اسی لمحے ایک حیرت انگیز بات یہ ہوئی کہ ہاتھی نے شیرنی کے تنہا بچوں پر حملہ نہیں کیا اور واپس پلٹ گیا۔ 
جنگل کے ایک جنگلی جانور نے چھوٹے بچوں پر حملہ نہ کر کے  انسانیت کا اعلیٰ درس دے دیا۔ انسانی معاشرے کے لیے اس واقعے میں ایک بڑا درس ہے۔ انسانی معاشرے میں بچوں کے ساتھ انسانیت سوز واقعات اکثر رپورٹ ہوتے رہتے ہیں۔   

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll