جی این این سوشل

تجارت

حکومت نے پٹرول کی قیمت میں 10روپے49 پیسے فی لٹر اضافہ  کردیا

مہنگائی کے ستائے عوام کیلئے ایک اور بری خبرآگئی ، پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں ملکی تاریخ کی بلند ترین سطح پر آگئیں ۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

حکومت نے پٹرول کی قیمت میں 10روپے49 پیسے فی لٹر اضافہ  کردیا
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

تفصیلات کے مطابق حکومت کی جانب سے گزشتہ چار ماہ میں آٹھویں مرتبہ  پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں مییں اضافہ کیا  گیا ہے ۔ وزارت خزانہ نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کا اعلامیہ جاری کر دیا، اعلامیے کے مطابق پٹرول کی قیمت میں 10روپے49 پیسے فی لٹر تک کا بڑا اضافہ کیا گیا ہے  جس کے بعد پٹرول کی فی لٹر قیمت 137روپے  79 پیسے مقرر کی گئی ہے جبکہ  ہائی سپیڈ ڈیزل کی قیمت میں 12روپے44 پیسے اضافہ کردیا گیا  ہے ۔

قیمتوں میں اضافے کے بعد اب عوام کو پیٹرول 137 روپے 79 پیسے فی لیٹر جبکہ ہائی اسپیڈ ڈیزل 134 روپے 48 پیسے فی لیٹر میں دستیاب ہوگا۔

پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کے اعلامیہ کے مطابق مٹی کا تیل 10 روپے 95 پیسے مہنگا کیا گیا جس کے بعد مٹی کےتیل  کی قیمت 110روپے26 پیسے ہوگئی جبکہ لائٹ ڈیزل آئل 8 روپے 84 پیسے اضافہ کیا گیا ہے۔

خیال رہے کہ اوگرا نے پیٹرول کی قیمت میں 5روپے 90 پیسے فی لیٹر اور ڈیزل کی قیمت میں 10روپے فی لٹر اضافے کی سمری وزارت پیٹرولیم کو ارسال کی تھی۔

وزارت خزانہ کی جانب سے جاری نوٹی فکیشن میں عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمت 85 ڈالر فی بیرل تک پہنچنے کو پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کی وجہ بتایا گیا ہے۔

پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کا امکان

یاد رہے کہ 30 ستمبر  کو وزارت خزانہ نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کیا تھا ، پٹرول کی فی لٹرقیمت میں 4 روپے کااضافہ  جبکہ ہائی اسپیڈ ڈیزل کی قیمت میں 2 روپے فی لٹرکا اضافہ کیا  گیا تھا ۔

حکومت کی جانب سے 15 ستمبر کو پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کیا گیا تھا پیٹرول کی قیمت میں 5 روپے فی لیٹر جبکہ ڈیزل کی قیمت میں 5 روپے ایک پیسہ فی لیٹر اضافہ کیا گیا تھا۔ مٹی کے تیل کی قیمت میں 5 روپے42 پیسے فی لیٹر اضافہ کیا گیا جبکہ لائٹ ڈیزل آئل کی قیمت میں 5روپے 92 پیسے فی لیٹر اضافہ کیا گیا تھا۔

اسماء رفیع گزشتہ 8سالوں سے شعبہ صحافت سے منسلک ہیں، اس عرصے کے دوران وہ پاکستان کے نامور میڈیا ہاؤسز کے مختلف شعبوں سے وابستہ رہی ہیں۔ اسما ء رفیع 2018 سے جی این این میں بطوراُردو نیوز ایڈیٹر، ریسرچر کام کررہی ہیں ۔ اس شعبے میں وہ تحقیق سے لے کر خبر کی نوک پلک سنوارنا ، سماجی اور سیاسی مسائل کو اپنے الفاظ کی طاقت کے ذریعے اُجاگر کرتی ہیں۔

پاکستان

ملک میں کورونا وائرس سے مزید10 افراد جاں بحق

اسلام آباد:  پاکستان میں کورونا وبا سے اموات اور کیسز کی شرح میں   بتدریج کمی آرہی ہے،   گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کورونا کے مثبت کیسز کی  شرح 0.78 فیصدر رہی ۔ 

پر شائع ہوا

Asma Rafi

کی طرف سے

ملک میں کورونا وائرس سے مزید10 افراد جاں بحق

نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کی جانب سے جاری کیے گئے تازہ اعداد و شمارکے مطابق ملک میں کورونا وائرس کی  چوتھی  لہر کے دوران  مزید10 افراد  انتقال  کرگئے جبکہ 336 نئے کیسز رپورٹ ہوئے ۔ پاکستان  میں کورونا سے  اموات کی تعداد 28ہزار 777 ہوگئی ہے اور مجموعی کیسز 12 لاکھ 87ہزار 161تک جاپہنچے ہیں۔  

این سی اوسی  کے مطابق ملک بھر میں  چوبیس گھنٹے کے دوران  42 ہزار 944فراد کے ٹیسٹ کئےگئے ہیں ۔ 

ملک میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران مزید 858فراد کورونا وائرس سے صحتیاب ہوئے ہیں ۔اب تک  95.9 فیصد مریض کوویڈ سے صحت یاب ہوئے  ، اب تک  مجموعی طور پر 12 لاکھ 46 ہزار 464مریض اب تک اس بیماری سے شفایاب ہو چکے ہیں۔

واضح رہے کہ  پاکستان  کورونا مریضوں کے حوالے سے مرتب کی گئی فہرست میں 33 ویں نمبر پر ہے ۔ پاکستان میں کورونا وائرس کا پہلا کیس 26 فروری 2020 کو ملک کے سب سے بڑے شہر کراچی میں سامنے آیا تھا۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

این اے 133:ضمنی الیکشن، پیپلزپارٹی نے لاہور میں نیا جنم لیا ہے، آصف زرداری

راجہ پرویز اشرف نے کہا کہ پیپلزپارٹی کوئی بھی میدان خالی نہیں چھوڑتی ہے۔

پر شائع ہوا

Muhammad Akram

کی طرف سے

این اے 133:ضمنی الیکشن، پیپلزپارٹی نے لاہور میں نیا جنم لیا ہے، آصف زرداری

لاہور: سابق صدر پاکستان آصف علی زرداری نے این اے 133 پر ہونے والے ضمنی انتخاب کو پارٹی کے لیے ٹرننگ پوائنٹ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ پیپلزپارٹی نے لاہور میں نیا جنم لیا ہے جو پنجاب میں تبدیلی کا باعث بنے گا۔

انہوں نے این اے 133 پر ہونے والے ضمنی انتخاب میں شاندار نتائج پر پیپلز پارٹی کے کارکنوں کو مبارکباد دیتے ہوئے کہا ہے کہ پیپلز پارٹی وسطی پنجاب کی قیادت ،ان کی ٹیم اور کارکنوں کی محنت رنگ لائی ہے۔

سابق صدر آصف زرداری نے اس سلسلے میں سابق وزیراعظم راجہ پرویز اشرف کو ٹیلی فون کرکے مبارکباد بھی دی ہے۔ سابق وزیراعظم راجہ پرویز اشرف نے الیکشن نتائج پر کہا کہ ہماری کارکردگی میں بہتری آئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پیپلزپارٹی کے ووٹوں میں اضافہ ہوا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پیپلزپارٹی پورے پنجاب میں دوبارہ بحال ہو گی۔

راجہ پرویز اشرف نے کہا کہ پیپلزپارٹی کوئی بھی میدان خالی نہیں چھوڑتی ہے۔ ان کا دعویٰ تھا کہ لوگ دیگر جماعتیں چھوڑ کر پیپلزپارٹی میں شامل ہو رہے ہیں۔

واضح رہے کہ پیپلزپارٹی کے امیدوار اسلم گل ضمنی الیکشن میں 32 ہزار 313 ووٹوں کے ساتھ  دوسرے نمبر پر رہے ہیں۔ انہوں نے اس طرح 2018 کے انتخابات کے مقابلے میں 26 ہزار 728 ووٹ زیادہ حاصل کیے ہیں۔ اسلم گل کو 2018 کے الیکشن میں 5585 ووٹ ملے تھے۔

2018 کے عام انتخابات میں این اے 133 میں 51.89  فیصد ووٹ کاسٹ ہوئے تھے جب کہ موجودہ ضمنی الیکشن میں اعداد و شمار کے تحت 18.59 فیصد ووٹ کاسٹ ہوئے ہیں۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

اسمبلیوں کا گھیراؤ کرنا پڑا تو کریں گے: ایم کیو ایم

کراچی: ایم کیو ایم راہنماؤں کا کہنا ہے کہ بلدیاتی نظام بحال کرنے کے لیےہم احتجاج کو بڑھائیں گے، اگر اسمبلیوں کا گھیراو کرنا پڑا تو کریں گے۔

پر شائع ہوا

Umar Nawaz

کی طرف سے

اسمبلیوں کا گھیراؤ کرنا پڑا تو کریں گے: ایم کیو ایم

تفصیلات کے مطابق ایم کیو ایم پاکستان کے وفد نے کراچی میں واقع مسلم لیگ ہاوس کارساز کا دورہ کیا، جہاں دونوں جماعتوں کی جانب سے کراچی کے حقوق کے حوالے سے بات کی گئی ہے۔

ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ایم کیوم رہنما عامر خان کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی کہتی ہے کہ وفاق میں اپوزیشن سے کسی بل پر مشاورت نہیں کی جاتی، صوبے میں پیپلزپارٹی اس کے برعکس کرتی ہے،کسی سے مشاورت نہیں کی اور جعلی اور کھوٹی اکثریت سے بل پاس کرادیا۔ 

ان کا کہنا تھا کہ مئیر کے پاس جو بچے کچے سروسز ٹیکس، تعلیمی اداروں یا اسپتال کے اختیارات تھے، وہ بھی چھین لیے، اب کے ایم سی نام کا کے ایم سی رہ گیا ہے، یہ جھوٹ بولتے ہیں کہ مشرف دور کا بلدیاتی نظام بحال کررہے ہیں، ہم احتجاج کررہے ہیں، ہم اس احتجاج کو بڑھائیں گے، اگر اسمبلیوں کا گھیراو کرنا پڑا تو کریں گے۔

ایم کیو ایم رہنما وسیم اختر نے کہا کہ ایڈمنسٹریٹر کو چاہیے وہ آئیں بائیں شائیں نہ کریں، یہ باتیں پرانی ہوگئیں، مرتضی وہاب کو چاہیے کہ کے ایم سی کو اختیارات واپس دلوائیں، وہ جہاں بیٹھے ہیں ان کے پاس طاقت ہے، مراد علی شاہ کے خاص ہیں وہ یہ ڈرامے نہ کریں، اس شہر کے لیے کچھ کریں۔

سابق گورنر سندھ محمد زبیر کا کہنا تھا کہ فنڈز کی تقسیم این ایف سی کی بنیاد پر ہونا چاہیے، لیکن نیت صاف ہونی چاہیے، ن لیگ کے دور حکومت میں فیڈرل ٹیکس ریونیو ڈبل ہوا تو صوبے کو زیادہ پیسہ ملا، اندرون سندھ میں پیسہ کہاں لگ رہا ہے؟ اگر کراچی کے ساتھ زیادتی ہورہی ہے تو کہیں تو پیسہ لگے۔

ن لیگی رہنما مفتاح اسماعیل کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی کا وفاق اور صوبے میں الگ الگ چہرہ ہے، وفاق میں یہ فیڈریشن کی بات کرتے ہیں صوبے میں یہ حقوق سلب کرتے ہیں۔

 

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll