جی این این سوشل

تفریح

کورونا کو مذاق سمجھنے والی گلوکارہ کورونا سےچل بسی

چیک ری پبلک کی معروف لوک  گلوکارہ کورونا وائرس کے باعث جان سے ہاتھ دھو بیٹھیں ۔

پر شائع ہوا

کی طرف سے

کورونا کو مذاق سمجھنے والی گلوکارہ کورونا سےچل بسی
جی این این میڈیا: نمائندہ تصویر

مہلک وبا نے پوری دنیا میں پنجے گاڑ لیے ہیں اور اب تک یہ وائرس کروڑوں لوگوں کو متاثر اور لاکھوں کو موت کی وادی میں اتارچکا ہے ، اس کے باوجودبہت سے لوگ اب بھی کورونا کو سنگینی کو سنجیدہ نہیں لے رہے اور اپنے ساتھ ساتھ دوسروں کی زندگیاں بھی خطرے میں ڈال رہے ہیں ۔

 چیک ری پبلک کی  57سالہ معروف   گلوکارہ  ہانا ہورکا  نے سوشل میڈیا پر شئیر کرتے ہوئے لکھا تھا کہ وہ بغیر کسی ویکسین کے اس انفیکشن سے مکمل صحتیاب ہوگئی ہیں اور بہت جلد تھیٹر ، ہوٹلز اور کلبز میں جانے کے لیے ہیلتھ پاس بنوائیں گی۔

گلوکارہ کے بیٹے  جان ریک نے کہا کہ وہ جان بوجھ کر متاثر ہوئی تھیں اور انہوں نے مہلک وبا کو مذاق سمجھا ۔کرسمس کے دوران گلوکارہ کے شوہر اور بیٹے میں کورونا کی تصدیق ہوئی تھی جبکہ وہ دونوں ویکسی نیٹڈ تھے تاہم ان کی والدہ (گلوکارہ ) نے خاندان سے  دوری اختیار نہیں کی تھی ۔

  گلوکارہ کے بیٹے نے  کورونا ویکسین کے خلاف احتجاج کرنے والوں کو اپنی ماں کی موت کا ذمہ دار قرار دیتے ہوئے کہا کہ مجھے افسوس ہے کہ میری ماں نے اپنی فیملی کے بجائے غیروں کی باتوں پر یقین کیا۔

خیال رہے کہ جمہوریہ چیک میں ایک روز میں یومیہ کیسز میں ریکارڈ اضافہ دیکھنے میں آیا ہے ۔

پاکستان

حکومت کا کم آمدن والوں کیلئے بڑا ریلیف پیکیج دینے کا فیصلہ

حکومت نے کم آمدن والوں کیلئے بڑا ریلیف پیکیج دینے کا فیصلہ کیا ہے۔

پر شائع ہوا

Raja Sheroz Azhar

کی طرف سے

حکومت کا کم آمدن والوں کیلئے بڑا ریلیف پیکیج دینے کا فیصلہ

وزیراعظم شہباز شریف کی زیر صدارت اتحادیوں کا اہم اجلاس ہوا جس میں بڑے حکومتی فیصلے سامنے آگئے ہیں۔

 اجلاس میں حکومت نے اگست 2023تک مدت مکمل کرنے کا، پیٹرولیم مصنوعات میں اضافہ اور موٹر سائیکل اور رکشہ والوں کے لئے بڑا ریلیف پیکیج دینے کا فیصلہ کیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ پیکیج بی ایس پی اسکیم کے ذریعے دیا جائے گا، پیکیج سے سوا کروڑ افراد مستفید ہوں گے جبکہ اس کا اعلان وزیراعظم قوم سے خطاب میں کریں گے۔

اجلاس میں اتحادیوں نے وزیراعظم کو مشورہ دیا کہ  غیر یقینی صورتحال سے ملک کو نکالا جائے۔

شہباز شریف نے کہا کہ سب کو بتا دیں کوئی غیریقینی نہیں مدت مکمل کریں گے، دباؤ میں آکر کوئی انتخابات نہیں ہوں گے، ڈی چوک کسی کو دھرنا نہیں کرنے دیں گے، عمران چھ دن بعد آئیں مختص جگہ احتجاج کا شوق پورا کر لیں۔

وزیراعظم شہباز شریف نے کہا کہ دسمبر جنوری تک حکومتی پالیسیوں کے ثمرات سامنے آئیں گے، ملکی معیشت کو ترقی کی راہ پر گامزن کریں گے۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

پیٹرولیم مصنوعات سے متعلق فیصلہ  دل پر پتھر رکھ کرکیا : وزیراعظم 

لاہور: وزیراعظم شہباز  شریف کا کہنا ہے  کہ کہ عوام مہنگائی میں پسے ہوئے ہیں، بیروزگاری ہے ، ہم نے پیٹرول سے متعلق  فیصلہ دل پر پتھر رکھ کرکیا۔

پر شائع ہوا

Asma Rafi

کی طرف سے

پیٹرولیم مصنوعات سے متعلق فیصلہ  دل پر پتھر رکھ کرکیا : وزیراعظم 

تفصیلات کے مطابق لاہور کی اسپیشل کورٹ سینٹرل میں پیشی کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیراعظم شہباز شریف نے کہا کہ مہنگائی آسمان سے باتیں کررہی ہے اور  کاروبار ، نوکریاں نہیں ہیں ،  غریب خاندان  رُ ل گئے  ہیں ، ایک وقت کی  روٹی کو ترستے ہیں اور ان کے پاس دوائی اور علاج کرانے کے پیسے نہیں ہیں۔

وزیراعظم شہبازشریف نے کہا کہ قومی خزانے سے ماہانہ اٹھائیس ارب خرچ کر کے کروڑوں خاندانوں کو سبسڈی دی ہے، سوا کروڑ مستحق خاندانوں کو 2 ہزار روپے ماہانہ کے حساب سے پٹرول پر سبسڈی دی جائے گی ۔ 

یوم تکبیر کے حوالے سے شہباز شریف نے کہا  کہ ایٹمی دھماکوں کے وقت نواز شریف نے کسی کو دھمکیاں نہیں دی تھیں اور نہ ہی بڑے ممالک کے سربراہوں سے تلخ لہجے میں بات کی تھی ، امریکی صدر  سے نواز شریف نے بڑے اچھے انداز میں بات کی تھی، انہوں نے کہا تھا آپ کے 5 ارب ڈالر کی پیشکش کا بہت شکریہ۔

انہوں  نے کہا کہ نواز شریف نے کہا تھا ان شا اللّٰہ ہم زندہ رہیں گے، انہوں نے یہ بھی کہا تھا مجھے پاکستان کے مفادات کا تحفظ کرنا ہے۔

دوسری جانب  منی لانڈرنگ کی کیس کی سماعت کے دوران وزیراعظم شہباز شریف نے روسٹرم پر آکر بیان دیا کہ میں صوبے کا خادم رہا ہوں ، سرکاری خزانے سےتنخواہ لی نہ کبھی ٹی اے ڈی اے لیا،  پیٹرول بھی خود ڈلواتا تھا جب کہ تنخواہ اور  ٹی اے ڈی اے کی رقم 7، 8 کروڑ بنتی تھی جو میرا قانونی حق تھا۔

وزیراعظم  شہباز شریف نے کہا کہ میں نےتو شوگرملزکو سبسڈی نہیں دی، جس سے میرے خاندان کو 2 ارب کا نقصان ہوا، اس کیس میں مجھ پر 25 ،25 لاکھ روپے کی منی لانڈرنگ کے الزام لگائے گئے، ایک طرف تو میں اربوں روپے کا اپنے خاندان کی ملوں کو نقصان پہنچاؤں؟  کیا دوسری جانب میں 25 ،25 لاکھ روپے حرام کھاؤں گا؟

بعد ازاں وزیراعظم شہباز شریف نے عدالت سے واپسی کی اجازت طلب کی جس پر عدالت  نے انہیں اور حمزہ شہباز کو جانے کی اجازت دے دی ۔ عدالت کی جانب سے وزیر اعظم شہباز شریف اور وزیر اعلی حمزہ شہباز کی عبوری ضمانت میں 4 جون تک توسیع کردی ،  عدالت نے حمزہ شہباز کے وکیل کو آئندہ سماعت پر دلائل دینے کی ہدایت کر دی۔ 

منی لانڈرنگ کیس


یاد رہے کہ ایف آئی اے نے نومبر 2020 میں ان کے خلاف پاکستان پینل کوڈ، کرپشن کی روک تھام ایکٹ اور انسداد منی لانڈرنگ ایکٹ کی دفعات کے تحت مقدمہ درج کیا تھا، شہباز شریف اور حمزہ شہباز کو شوگر اسکینڈل میں منی لانڈرنگ کے کیس کا سامنا ہے۔

شہباز شریف پر الزام ہے کہ انہوں نے اپنے بیٹوں حمزہ شہباز اور سلیمان شہباز کو ان کی آمدنی کے نامعلوم ذرائع سے مال جمع کرنے میں مدد دی۔

ایف آئی اے نے 13 دسمبر 2021 کو شہباز شریف اور حمزہ شہباز اور دیگر ملزمان کے خلاف 16ارب روپے کی منی لانڈرنگ کا چالان بینکنگ عدالت میں جمع کروایا تھا اور دنوں کو مرکزی ملزم نامزد کر دیا تھا۔

پڑھنا جاری رکھیں

پاکستان

منی لانڈرنگ ریفرنس : وزیراعظم  ، وزیراعلی ٰ پنجاب عدالت میں پیش

لاہور : وزیر اعظم شہباز شریف اور وزیر اعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز منی لانڈرنگ کیس میں اسپیشل کورٹ سینٹرل پیش ہوگئے۔

پر شائع ہوا

Asma Rafi

کی طرف سے

منی لانڈرنگ ریفرنس : وزیراعظم  ،  وزیراعلی ٰ پنجاب  عدالت میں پیش

تفصیلات کے مطابق ایف آئی اے منی لانڈرنگ کیس میں  اسپیشل کورٹ سینٹرل میں شہباز شریف اورحمزہ شہباز کے خلاف منی لانڈرنگ کیس کی سماعت ہورہی ہے۔

 وزیراعظم شہبازشریف اور حمزہ شہباز عدالت کے روبرو پیش ہوگئے  ۔ 

شریک ملزمان سلمان شہباز، طاہر نقوی، ملک مقصود اور غلام شبیر کی گرفتاری سے متعلق رپورٹ عدالت میں پیش کردی گئی ۔

عدالت نے شہباز شریف اور حمزہ شہباز کو آج طلب کر رکھا تھا، شہباز شریف کے وکیل امجد پرویز عبوری ضمانت کی توثیق کے لیے دلائل دیں گے۔

عدالت نے وزیراعظم کے وکلا کو عبوری ضمانتوں پر دلائل مکمل کرنے کی ہدایت کررکھی ہے۔ 

گزشتہ سماعت میں وزیراعظم شہبازشریف اور وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز کی عبوری ضمانت میں 28 مئی تک توسیع کی گئی تھی ۔ عدالت نے سلمان شہباز، طاہر نقوی اور ملک مقصود کے وارنٹ گرفتار جاری کیے تھے ۔ 

پڑھنا جاری رکھیں

ٹرینڈنگ

Take a poll